’افضل گورو کو سزا ملنی چاہیے‘

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 25 فروری 2012 ,‭ 09:26 GMT 14:26 PST
افضل گرو

افضل گرو دلی کی تہاڑ جیل میں قید ہیں

بھارت کے زیرانتظام کشمیر کی حکمران جماعت کے سربراہ فاروق عبداللہ نے سنیچر کے روز افضل گورو کے لیے سزائے موت کی حمایت کی ہے تاہم انہوں نے کہا کہ اس بارے میں حتمی فیصلہ بھارتی صدر پرتبھا پاٹل کریں گی، کیونکہ افضل گورو کی رحم کی درخواست پر وہی حتمی فیصلہ کر سکتی ہیں۔

افضل گورو کو تیرہ دسمبر دو ہزار ایک میں بھارتی پارلیمان پر ہوئے مسلح حملے کے سلسلے میں سزائے موت کا سامنا ہے۔

قانون ساز اسمبلی کے باہر ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے فاروق عبداللہ نے کہا ’میں تو ہندوستانی ہوں، میں چاہتا ہوں جس نے بھی ملک کے خلاف کام کیا اسے اس کی قیمت ادا کرنی چاہیے لیکن افضل گورو کی درخواست صدر کے پاس زیِر غور ہے اور صدر ہی فیصلہ کریں گی‘۔

حکمران جماعت کے صدر کا یہ بیان ان کے بیٹے اور کشمیر کے وزیراعلیٰ عمرعبداللہ کے مؤقف سے مختلف ہے۔

عمرعبداللہ نے پچھلے سال ٹوِٹر پر افضل کی معافی کی بالواسطہ حمایت کر کے سیاسی بحث چھیڑ دی تھی۔

تامِل ناڈو کی قانون ساز اسمبلی میں جب سابق بھارتی ویزاعظم راجیو گاندھی کے قتل میں موت کی سزا پانے والے افراد کی معافی کے حق میں قرارداد پاس کی گئی تو وزیراعلیٰ عمرعبداللہ نے سوالیہ انداز میں لکھا تھا کہ اگر جموں کشمیر کی اسمبلی بھی اسی طرح کی قرارداد افضل گورو کے حق میں پیش کرے تو کیا بھارت میں اسی طرح کی خاموشی رہے گی؟

فاروق عبداللہ

"میں تو ہندوستانی ہوں، میں چاہتا ہوں جس نے بھی ملک کے خلاف کام کیا اسے اس کی قیمت ادا کرنی چاہیے لیکن افضل گورو کی درخواست صدر کے پاس زیِر غور ہے اور صدر ہی فیصلہ کریں گی"

اس کے بعد ایک آزاد ممبر اسمبلی عبدالرشید نے ایوان میں افضل گورو کی حمایت میں قرارداد پیش کی جسے مسترد کیا گیا۔

عبد الرشید کا کہنا ہے ’آج بھی میں نے قرارداد لانے کا فیصلہ کیا ہے، جو لوگ افضل کی معافی کی حمایت کرتے ہیں، یہ ان کے ضمیر کا امتحان ہوگا‘۔

واضح رہے افضل گورو کے حق میں کشمیر میں علیحدگی پسندوں نے احتجاجی مظاہرے کئے جبکہ بھارتی سول سوسائیٹی نے بھی دلّی میں ’افضل بچاؤ‘ مہم چھیڑ رکھی ہے۔

لبریشن فرنٹ کے رہنما محمد یٰسین ملک نے تو یہاں تک کہا ہے کہ افضل گورو کو پھانسی پر لٹکایا گیا تو کشمیر پھر سے مسلح تشدد کا شکار ہوسکتا ہے۔

یٰسین ملک نے بی بی سی کو بتایا ’بھارت کو یاد رکھنا چاہیئے کہ اٹھائیس سال قبل جب مقبول بٹ (کشمیر کی مسلح تحریک کے بانی) کو تہاڑ جیل میں پھانسی پر لٹکایا گیا تو کشمیری نوجوانوں میں انتقامی جذبات پیدا ہوگئے اور یہاں مسلح تشدد کی لہر پھیل گئی‘۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔