اظہرالدین کے ناقابلِ ضمانت وارنٹ جاری

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 1 مارچ 2012 ,‭ 12:10 GMT 17:10 PST

اظہر آج کل یو پی انتخابات کے لیے مہم چلا رہے ہیں

دلی کی ایک عدالت نے چیک باؤنس ہونے کے ایک مقدمے میں بھارتی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور رکن پارلیمان اظہرالدین کے خلاف غیر ضمانتی وانٹ جاری کیا ہے۔

میٹروپولیٹین مجسٹریٹ وکرانت وید نے یہ نوٹس اظہر کے عدالت میں حاضر نہ ہونے کے سبب جاری کیا ہے۔

اس معاملے میں اٹھارہ فروری کو بھی ان کے خلاف وارنٹ جاری کیا گيا تھا لیکن چونکہ وہ عدالت میں پیش نہیں ہوئے اس لیے دوبارہ غیر ضمانتی وارنٹ جاری کیا گیا ہے۔

اظہرالدین کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ چونکہ وہ انتخابات میں مصرف ہیں اس لیے انہیں عدالت میں حاضری سے استثنیٰ دیا جائے لیکن عدالت نے یہ درخواست مسترد کر دی۔

اظہرالدین کی عدالت میں آئندہ پیشی کے لیے سات مارچ کی تاریخ مقرر کی گئی ہے۔

دلی کے ایک تاجر سنجے سولنکی نے عدالت میں درخواست دائر کی ہے کہ اظہر الدین انہیں جو ڈیڑھ کروڑ کا چیک دیا تھا وہ باؤنس ہوگیا تھا اور ان کے پیسے واپس نہیں ملے ہیں۔

معاملہ یہ ہے کہ اظہرالدین نے ممبئی میں اپنی اور بیوی سنگیتا بجلانی کے نام تقریباً ساڑھے چار کروڑ کی مشترکہ جائیداد کو بیچنے کا فیصلہ کیا تھا۔

دلی کے تاجر سنجے سولنگی خریدار تھے اور بات چیت کے بعد انہوں نے بطور بیعانہ ڈیڑھ کروڑ روپے پیشگی ادا کیے۔

بعد میں بعض ازدواجی تنازعات کے سبب اظہر نے اس جائیداد کو نہ بیچنے کا فیصلہ کیا اور سنجے کو ایک چیک کے ذریعے ڈیڑھ کروڑ روپے واپس کیے۔

بینک نے پیسے نہ ہونے کے سبب وہ چیک کلیئر نہیں کیا۔ سولنکی نے پھر اظہر سے رابطہ کیا تو دو ہزار نو میں انہوں نے دوبارہ چيک جاری کیا جو پھر باؤنس ہو گيا۔

اس پر اظہر نے سولنکی سے معذرت کی اور دو ہزار دس میں پھر ایک چیک دیا لیکن وہ بھی کیش نہیں ہوا۔ اس کے بعد مسٹر سولنکی نے عدالت میں مقدمہ دائر کیا تھا اور اسی کی سماعت جاری ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔