اسمبلی انتخابات، حکومت سازی کی تیاریاں

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ملائم سنگھ یادو کی سماجوادی پارٹی نے دو سو چوبیس سیٹیں حاصل کر کے واضح اکثریت حاصل کی

بھارت میں پانچ ریاستوں کی اسمبلیوں کے مکمل انتخابی نتائج آنے کے بعد نئی حکومتوں کی تشکیل کی تیاریاں بھی شروع ہوگئی ہیں۔

سیاسی اعتبار سے سب اہم ریاست اترپردیش میں ملائم سنگھ یادو کی سماجوادی پارٹی نے دو سو چوبیس سیٹیں حاصل کر کے واضح اکثریت حاصل کی ہے۔

پارٹی کا کہنا ہے کہ جمعرات کو ہولی کے تہوار کے بعد وزیراعلی کا انتخاب کیا جائے گا۔ پارٹی کے رہنما اکھیلیش یادو نے ایک بیان میں کہا ہے کہ یو پی میں لوگوں نے کانگریس اور بہوجن سماج پارٹی کے خلاف ووٹ دیا ہے۔

یوپی میں سماجوادی پارٹی نے اس سے پہلے بھی جیت حاصل کی تھی لیکن اتنی بڑی جیت اسے پہلی بار ملی ہے اور سنہ انیس سو پچاسی کے بعد کسی بھی جماعت کو سوا دو سو سیٹیں حاصل ہوئی ہیں۔

یہ تیسرا موقع ہے کہ پارٹی نے تیسری بار ریاست میں کامیابی حاصل کی ہے اور ملائم سنگھ یادو ایک بار پھر ریاست کے وزیراعلی ہوں گے۔

ریاست پنجاب میں حکمراں اکالی دل نے اپنی اتحادی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے ساتھ ملکر اکثریت حاصل کر لی ہے۔ اس اتحاد کو ایک سو سترہ رکنی اسمبلی میں اڑسٹھ سیٹیں ملی ہیں۔

Image caption پنجاب میں اکالیوں نے نئي تاریخ رقم کی ہے

پنجاب میں گزشتہ چار عشروں میں یہ پہلا موقع ہے کہ حکمراں جماعت ہی اقتدار میں آئی ہو۔ اطلاعات ہیں کہ وزیر اعلی پرکاش سنگھ بادل پانچویں بار ریاست کے وزیر اعلی کا حلف لیں گے۔

گوا میں بی جے پی نے کانگریس کو شکست فاش دی ہے اور چالیس رکنی اسبملی میں اس نے تن تنہا اکیس سیٹیں جیت کر اکثریت حاصل کی ہے۔

کانگریس کو گوا میں صرف نو سیٹیں ملی ہیں اور بی جے پی کے رہنما منیکر پاریکھ نے اپنی قیادت میں نئی حکومت تشکیل دینے کی تیاری کر رہے ہیں۔

اترا کھنڈ ایک ایسی ریاست ہے جہاں کانگریس نے بتیس اور بی جے پی نے اکتیس سیٹیں جیتی ہیں۔ ستّر رکنی اسمبلی میں سادہ اکثریت کے لیے پینتیس نشستیں درکار ہیں۔

چونکہ کانگریس کی ایک سیٹ زیادہ ہے اس لیے اس نے ریاست میں نئي حکومت بنانے کا دعوی پیش کرنے کو کہا ہے۔ جو بھی حکومت تشکیل دے گا اسے آزاد امید واروں کی حمایت درکار ہوگی۔

شمال مشرقی ریاست منی پور میں کانگریس نے واضح اکثریت حاصل کی ہے اور وزیر اعلی ایبوبی سنگھ تیسری بار وزارت اعلی کا حلف لیں گے۔

اسی بارے میں