سرحد پر تعینات فوجیوں کے مابین جھگڑا

کشمیر میں بھارتی فوج تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption یہ واقع لداخ میں چینی سرحد کے نیوما قصبے میں پیش آیا ہے۔

بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے لداخ خطے میں بھارت اور چین کی سرحد کے قریب تعینات بھارتی فوج کی 226 فیلڈ ریجمنٹ یونٹ میں افسروں اور فوجی اہلکاروں کے درمیان شدید جھگڑا ہوا جس میں کئی افسران اور فوجی زخمی ہوگئے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ واقعہ جمعرات کو اُس وقت پیش آیا جب کیمپ کے سربراہ کرنل پی کادم نے میجر رینک کے افسروں کو بدنظمی پر ڈانٹا۔ ڈانٹ کے جواب میں پانچ میجروں نے کرنل کادم کو فوجی اہلکاروں کے سامنے تھپڑ مارا جس پر فوجی مشتعل ہوگئے اور یہ لڑائی بڑھ گئی۔

ایک اعلیٰ پولیس اہلکار نے بتایا کہ یہ واقعہ لداخ میں چینی سرحد کے قریب نیوما قصبے میں واقع فوجی ریجمنٹ میں جمعرات کی شب پیش آیا۔ فوجی ٹھکانے میں کشیدگی ختم کرنے کے لئے فوج اور پولیس نے مشترکہ کاروائی کی ہے۔

عینی شاہدین کا حوالہ دے کر پولیس افسر نے بی بی سی کو بتایا ’اس سے پہلے فوجی اہلکار اور افسر خاص تربیت میں مشغول تھے کہ ایک جوان نے ایک میجر کی بیوی کے ساتھ بدتمیزی کی جس پر میجرنے جوان کو خوب مارا۔‘

پولیس کا کہنا ہے کہ زخمی فوجی کو ہسپتال منتقل نہ کرنے پر کیمپ کے کمانڈنگ افسرکرنل پی کادم نے میجر کو ڈانٹا تو میجر نے دیگر پانچ ساتھیوں کے ہمراہ کمانڈنگ افسر کو پوری یونٹ کے سامنے مار مار کر لہولہان کردیا۔

میجر کی اس حرکت سے دیگر فوجی اہلکار مشتعل ہوگئے اور انہوں نے ان پانچ میجروں کا تعاقب کر کے ان کی پٹائی کردی۔

فوجی ذرائع کا کہنا ہے کہ فوجی اہلکار اس قدر مشتعل تھے کہ وہ میجروں کی تلاش میں جس عمارت میں داخل ہوتے تھے اس میں انہوں نے خوب توڑ پھوڑ کی۔ پولیس نے مداخلت کر کے دو میجروں کواُس وقت بچا لیا جب فوجی اہلکار انہیں لاٹھیوں اور بندوق کی بھٹوں سے مار رہے تھے۔

فوج کا کہنا ہے کہ فوجیوں کی تحویل میں ہتھیار تھے، لیکن اس تصادم میں ہتھیاروں کا استعمال نہیں ہوا۔ بعض ذرائع کا کہنا ہے کہ فوجی اہلکار اپنے سروس رائفلز لے کر میجروں کا تعاقب کر رہے تھے۔

لیہہ کے سپرانٹنڈنٹ آف پولیس وِویک گپتا کا کہنا ہے کیمپ کے اندر کشیدگی ختم کرنے کے لئے جمعہ کی صبح فیلڈ ریجمنٹ کے کیمپ کا محاصرہ کر لیا گیا۔

واضح رہے کشمیر میں تعینات فوج کے اندر ماضی میں بھی برادرکشی یا خود کشی کے واقعات ہوتے رہے ہیں۔ تاہم اس پیمانہ کا آپسی تصادم پہلی مرتبہ ہوا ہے جس میں ایک پوری یونٹ کے اندر افسروں کیخلاف اہلکاروں نے تقریباً بغاوت کردی ہو۔

فوج اور پولیس کا کہنا ہے چین کے ساتھ لگنے والی بھارتی سرحد کے قریب پیش آنے کی وجہ سے یہ بہت ہی حساس واقعہ ہے۔ دریں اثنا فوج نے اس واقعہ کی تحقیقات کا بھی اعلان کیا ہے۔

اسی بارے میں