سکما: بی جے پی کے رہنما کا اغواء

Image caption سكما ضلع میں ماؤ نواز باغیوں نے اغوا کی کئی وارداتیں سرانجام دی ہیں

بھارتی ریاست چھتیس گڑھ کے سب سے حساس ضلع سكما میں ماؤنواز باغیوں نے بی جے پی کے ایک لیڈر اور ایک تاجر کو اغوا کر لیا ہے۔

كچیچے جوگا سكما ضلع میں بی جے پی کے جنرل سیکرٹری ہیں اور کہا جا رہا ہے کہ انہیں دورناپال کے پاس گولگندا گاؤں سے اغوا کیا گیا ہے۔

دورناپال سے ہی ایک تاجر کو بھی اغوا کیا گیا ہے۔

ماؤ نواز باغیوں نے یہ کارروائی دنتے واڑہ کے سکیورٹی فورسز پر حملے کے چوبیس گھنٹے کے اندر انجام دی ہے۔

اتوار کی رات ماؤ نوازوں نےگھات لگاركر سکیورٹی فورس سی اے سی ایف کے چھ جوانوں سمیت سات افراد کو گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ صرف سكما ضلع میں ہی ماؤ نواز باغیوں نے اغوا کی کئی وارداتیں سرانجام دی ہیں۔ ان میں سكما کے كلكٹر ایلكس پال مینن کا اغوا بھی شامل ہے جنہیں بعد ازاں رہا کر دیا گیا تھا۔

مینن کے اغوا سے پہلے ماؤ نواز باغیوں نے اسی ضلع میں چھ دیہاتیوں کو بھی اغوا کیا تھا۔

چھتیس گڑھ کے وزیراعلی رمن سنگھ کا کہنا ہے کہ ایسے وقت میں جب حکومت باغیوں کے مطالبات پر کمیٹی بنانے پر غور کر رہی ہے، اس طرح کے واقعات مذاکرات کی کوششوں کو نقصان پہنچا رہے ہیں۔

ایسی اطلاعات بھی ہیں کہ ماؤ نواز باغیوں نے پیر کو صبح سے لے کر دوپہر تک دورناپال سے چتلنار تک جانے والی سڑک پر گاڑیوں کو روک کر ان کی تلاشی لی۔

پولیس ماؤ نواز باغیوں کی طرف سے کی جانے والی اس کارروائی سے باخبر ہے مگر حکام کا کہنا ہے کہ پولیس فورس کا وہاں جانا خطرناک ثابت ہو سکتا تھا کیونکہ پورے علاقے میں بارودی سرنگوں کا جال بچھا ہوا ہے۔

اسی بارے میں