آٹھ برس کی خود ساختہ تنہائی

روہنی میں رہنے والی لڑکی تصویر کے کاپی رائٹ pti
Image caption ڈاکٹروں کے مطابق دونوں بہنوں کی حالت نازک ہے

بھارت کے دارالحکومت نئی دلی میں حکام نے دو ایسی بہنوں کو ہسپتال منتقل کر دیا ہے جو تقریباً گزشتہ آٹھ برس سے مایوسی کا شکار ہونے کے سبب اپنےگھر میں قید تھیں اور فاقوں سے قریب المرگ تھیں۔

دلی کے علاقے روہنی میں ان دونوں بہنوں نے گزشتہ کئی سالوں سے خود کو گھر میں قید کر رکھا تھا اور اپنے پڑوسیوں اور رشتہ داروں سے ملنا چھوڑ دیا تھا۔

ان دونوں بہنوں میں سے ایک کی عمر چالیس جبکہ دوسری کی تقریباً تیس برس بتائی گئی ہے۔

ان خواتین کو ان کے روہنی میں واقع مکان سے اس وقت نکالا گیا جب ان کے ایک رشتہ دار نے ہنگامی امداد کے ادارے’ سی اے ٹی‘ کو فون کر کے ان بہنوں کی حالت کے بارے میں بتایا۔

اطلاع ملنے پر سی اے ٹی کا عملہ ان بہنوں کے گھر پہنچا اور پھر ان دونوں بہنوں کو باہر نکالا گیا۔ بعد میں انہیں دلی کے امبیڈکر ہسپتال میں داخل کرا دیا گیا۔

ڈاکٹروں کے مطابق دونوں بہنوں میں سے بڑی بہن ممتا کی حالت نازک ہے جبکہ چھوٹی بہن نیرجا کی حالت ان سے قدر بہتر ہے لیکن انہیں بھی فوری طبی امداد کی ضرورت ہے۔

ذرائع ابلاغ میں شائع ہوئی خبروں کے مطابق جب سی اے ٹی کی ٹیم ان دو بہنوں کے گھر پہنچی تو ممتا بےہوش پڑی تھیں جبکہ نیرجا ہوش میں تھیں۔

اطلاعات کے مطابق ممتا اور نیرجا کی حالت کے بارے میں ان کے پڑوسیوں کو علم تھا لیکن انہوں نے کبھی یہ ضروری نہیں سمجھا کہ وہ اس بارے میں پولیس کو اطلاع دیں۔

واضح رہے کہ ممتا اور نیرجا کے ساتھ ان کی ستر سالہ ماں اور بھائی بھی رہتے تھے جو ٹھیک حالت میں ہیں۔

ممتا اور نیرجا کے ایک پڑوسی نے ذرائع ابلاغ کو بتایا ہے کہ دونوں بہنیں انتی کمزور ہوگئی ہیں کہ جب طبی اہلکار انہیں اٹھا رہے تھے تو وہ ڈر رہے تھے کہ کہیں ان بہنوں کی ہڈیاں چٹخ نہ جائیں۔

پڑوسیوں کے مطابق ان دو بہنوں کی حالت کی سب سے بڑی وجہ ان کے والد کی وفات کے بعد معاشی تنگی ہے۔

واضح رہے کہ گزشتہ برس دلی کے نواحی علاقے نوئیڈا میں بھی اسی طرح دو بہنوں کو خود ساختہ تنہائی سے باہر نکالا گیا تھا۔

وہ دو بہنیں بھی کئی برس سے تنہا رہتی تھیں اور دونوں نے کافی وقت سے کھانا پینا چھوڑ دیا تھا۔

ان دو بہنوں میں سے ایک کی ہسپتال میں ہلاکت ہوگئی تھی جبکہ دوسری بہن کو ان کا بھائی اپنے ساتھ لے گیا تھا جو شہر کے دوسرے علاقے میں رہتا تھا لیکن جائیداد کے تنازع کی وجہ سے کئی برس سے اس نے بہنوں سے ملنا چھوڑ دیا تھا۔

اسی بارے میں