سود کی شرح برقرار، حصص بازار میں گرواٹ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ریزرو بینک کو امید ہے کہ اقتصادی ترقی کی رفتار پھر سے بحال ہوجائیگي

بھارت کے مرکزی بینک ریزو بینک آف انڈيا (آر بی آئی) کی جانب سے شرح سود میں توقع کے برعکس کمی نہ کرنے کی وجہ سے بازار حصص میں گراوٹ کا روجحان ہے۔

بینک کا کہنا ہے کہ اس وقت عالمی سطح پر غیر مستحکم معاشی صورتحال اور ملک میں بڑھتے ہوئے افراط زر کے پیش نظر کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔

توقع تھی کہ بینک سست روی کا شکار اقتصادی ترقی میں بہتری کے لیے سود کی شرح میں کمی کا اعلان کرے گا۔

بینک کے اعلان کے بعد ممبئی شیئر بازار میں گراوٹ دیکھنے میں آئی ہے۔

یونان میں انتخابات کے نتائج کی خبر کے بعد تمام ایشیائی حصص بازاروں کی طرح بھارتی شیئر مارکیٹ میں بھی اتوار کی صبح تیزی کا روجحان دیکھا گیا لیکن ریزرو بینک آف انڈیا کی طرف سے خبر آنے کے بعد اس میں تیزی سی مندی دیکھنے میں آئی۔

بھارتی مرکزی بینک نے’ کیش ریزرو ریشیو‘ سی آر آر میں بھی کوئی تبدیلی نہیں کی ہے اور اسے بھی چار اعشاریہ پچھتر فیصد پر برقرار رکھا ہے۔

آر بی آئی نے رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی کی اپنی مالیاتی تجزیاتی رپورٹ میں کہا ہے کہ بینک بیرونی اثرات اور افراط زر کی شرح کو متاثر کرنی والی مقامی پیش رفت کو مدنظر رکھتے ہوئے آئندہ کے لائحہ عمل کا اعلان کرے گا۔

اس کا کہنا ہے’مزید اقدامات اس بنیاد پر اٹھائے جائیں گے کہ بیرونی اور مقامی پیش رفت عام اشیاء کی قیمتوں پر کیسے اثر انداز ہوتی ہے۔‘

اقتصادی ماہرین کا کہنا ہے کہ بازارِ حصص کی موجودہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے سبھی کو یہ امید تھی کہ مرکزی بینک شرح سود میں کمی کرے گا لیکن بینک کے فیصلے سے مایوسی ہوئی۔

اس سے قبل رواں برس اپریل کے تیسرے ہفتے میں ریزرو بینک آف انڈیا نے تین سال میں پہلی مرتبہ سود کی شرح میں کٹوتی کا اعلان کیا تھا۔اس کا مقصد سست روی کا شکار بھارتی معیشت کو بحال کرنا تھا۔

اسی بارے میں