صدارتی انتخاب: پرنب کے مقابلے میں سنگما

سنگما تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پی اے سنگما لوک سبھا کے سپیکر رہ چگے ہیں

بھارت میں حزبِ اختلاف کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے اس اعلان کے ساتھ، کہ صدارتی انتخاب میں وہ پرنب مکھرجی کے مقابلے میں پی اے سنگما کی حمایت کریگي، یہ بات واضح ہوگئی ہے کہ اب مقابلہ انہیں دونوں امیدواروں کے درمیان ہوگا۔

لیکن اس مسئلے پر حزب اختلاف کے اتحاد قومی جمہوری محاذ این ڈی اے میں پھوٹ بھی پڑگئی ہے۔

بی جے پی نے پارلیمان کے سابق سپیکر پی اے سنگما کی حمایت کا اعلان کیا لیکن محاذ کی اتحادی جماعت جنتادل یونائٹیڈ اور شیوسینا نے پرنب مکھرجی کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔

این ڈی اے میں شامل تمل ناڈو کی وزیر اعلٰی جے للتا اور اڑیسہ کے وزیراعلٰی بیجو پٹنائیک نے پی اے سنگما کو اپنا امیدوار بنایا تھا۔

کئی روز سے یہ قیاس آرئیاں جاری تھیں کہ آیا پرنب مکھرجی متفقہ طور پر صدر منتخب ہوں گے یا پھر ان کے مقابلے میں اپوزیشن کی طرف سے کوئی امید کھڑا کیا جائیگا۔

جمعرات کو دلی میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے پارٹی کی رہنما سمشا سواراج نے کہا کہ ’بی جے پی نے پی اے سنگما کی حمایت کا فیصلہ کیا ہے جنہیں بیجو جنتا دل اور اے آئی ڈی ایم کے نے اپنا امیدوار بنایا تھا‘۔

ایک سوال کے جواب میں محترمہ سواراج نے کہا کہ وہ پرنب مکھرجی کی حمایت کر کے اس موجودہ حکومت کو بچانے کی پوزیشن میں نہیں تھی اس لیے اس نے یہ فیصلہ کیا ہے۔

بی جے پی کا یہ بھی کہنا ہے کہ وہ ممتا بینرجی کو اس بات پر آمادہ کرنے کی کوشش کریگي کہ وہ بھی سنگما کی حمایت کریں۔

واضح رہے کہ ممتا بینرجی حکمراں ایو پی اے محاذ کی اتحادی ہیں لیکن صدر کے انتخاب پر وہ پرنب مکھرجی کی حامی نہیں ہے اور ابھی انہوں نے یہ اعلان نہیں کیا کہ آیا وہ کسی حمایت کریں گی یا پھر ان کی جماعت ووٹنگ میں حصہ نہیں لےگی۔

لیکن این ڈی اے کی اہم اتحادی جماعت جنتادل یونائیٹیڈ نے بی جے پی کے اس موقف کی حمایت نہیں کی اور اس کا کہنا ہے کہ وہ صدر کے لیے سنگما کے بجائے پرنب مکھرجی کو ترجیح دیگي۔

پارٹی کے ترجمان شرد یادو نے کہا کہ کوشش اس بات کی تھی کہ صدر کا انتخاب اتفاق رائے سے ہو لیکن ایسا نہیں ہوسکا اس لیے جنتادل یو نے مسٹر مکھرجی کی حمایت کا فیصلہ کیا ہے۔

ابھی تک بایاں محاذ نے اس مسئلے پر اپنا موقف واضح نہیں کیا ہے لیکن اطلاعات کے مطابق وہ پرنب مکھرجی کی حمایت کرنے کو تیار ہے۔

اسی بارے میں