صدارتی امیدوار مکھرجی کو سنگما کا چیلنج

پی اے سنگما اور پرنب مکھرجی تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption پی اے سنگما اور پرنب مکھرجی بھارت کے صدارتی انتخابات میں آمنے سامنے

بھارت کے صدارتی انتخابات میں حزب اختلاف کے امیدوار پی اے سنگما نے حکمراں کانگریس اتحاد کے امیدوار پرنب مکھرجی کو ملک کی معیشت اور بدعنوانی کے سوال پر بحث کے لیے چیلنج کیا ہے۔

پی اے سنگما کا کہنا ہے کہ جمہوریت میں بحث انتخابی عمل کا بنیادی پہلو ہے۔

مسٹر سنگما نے ایک ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ جمہوری نظام میں اپنا رہنما منتخب کرنا عوام کا بنیادی حق ہوتا ہے اور اس کے لیے بحث ومباحثے کا عمل لازمی ہے۔

مسٹر سنگما نے کہا کہ ’ملک کی معیشت ڈوبتی جا رہی ہے، بدعنوانی اپنے عروج پر ہے، اس کے لیے ذمہ دار کون ہے؟ اس پر بحث ہونی چاہیے‘۔

بھارت میں صدارتی انتخابات انیس جولائی کو ہوگا۔ حکمراں اتحاد کانگریس کی جانب سے وزیر خزانہ پرنب مکھرجی صدارتی امیدوار ہیں اور دوسری بہت سی جماعتوں کی ظاہرہ حمایت کی بنیاد پر انھیں فی الحال مسٹر سنگما پر برتری حاصل ہے

لیکن مسٹر سنگما کو پورا یقین ہے کہ وہ صدارتی انتخابات میں کامیاب ہونگے۔

لوک سبھا کے سابق اسپیکر سنگما نے کہا کہ انہوں نو بار لوک سبھا اور پانچ بار ریاستی انتخابات لڑا ہے اور انہیں کبھی بھی شکست نہیں ہوئي ہے۔

انھوں نے کہا کہ ’صدارتی انتخابات خفیہ بیلٹ کے ذریعے ہوگا اور خفیہ بیلٹ کا مطلب ضمیر کی آواز پر ووٹ اور مجھے امید ہے کہ ارکان اپنے ضمیر کی آواز پر مجھے ووٹ کریں گے۔‘

اسی بارے میں