بھارت: مرکزی وزیر کے خلاف مقدمہ

مرکزی وزیر ویر بھدر سنگھ تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption مرکزی وزیر ویر بھدر سنگھ ریاست ہماچل پردیش کے پانچ بار وزیر اعلی رہ چکے ہیں۔

بھارت کی شمالی ریاست ہماچل پردیش کے سابق وزیر اعلی اور مرکزی وزیر ویر بھدر سنگھ اور ان کی اہلیہ پرتیبھا سنگھ کے خلاف بدعنوانی کے الزامات میں مقدمہ دائر کیا گیا ہے۔

بدعنوانی کا یہ معاملہ تیئس سال پرانا ہے اور یہ ایک آڈیو سیڈی کی بنیاد پر داخل کیا گیا ہے جس میں مبینہ طور پر مسٹر سنگھ کی ایک اعلی افسر اور بعض صنعت کاروں سے پیسے کے لین دین کی باتیں ریکارڈ کی گئی تھیں۔

شملہ کی ایک خصوصی عدالت کے جج نے کہا کہ مرکزی وزیر اور ان کی اہلیہ کے خلاف بدعنوانی کا مقدمہ چلانے کے لیے وافر ثبوت موجود ہیں۔

سن دو ہزار سات میں مسٹر ویر بھدر سنگھ کے سابق ساتھی اور کانگریس کے وزیر وجے سنگھ منکوٹیا نے ایک خفیہ سی ڈی جاری کی تھی اور اس سی ڈی کی بنیاد پر مسٹر سنگھ اور ان کی اہلیہ کے خلاف دو ہزار نو میں ایک کیس درج کیا گیا تھا لیکن مسٹر سنگھ کی جانب سے ہائی کورٹ میں ایک پٹیشن دائر کیے جانے کے سبب ان پر مقدمہ نہیں چلایا گیا۔

گذشتہ سماعتوں میں ہائی کورٹ نے مسٹر سنگھ اور ان کی اہلیہ کا مقدمہ خارج کرنے سے انکار کر دیا۔

مقدمہ دائرکیے جانے پر اپنا رد عمل ظاہر کرتے ہوئے مسٹر ویر بھدر سنگھ نے کہا کہ جو ثبوت پیش کیے گئے ہیں وہ جعلی ہیں۔ انھوں نے کہا کہ سی ڈی کی سچائی کا تجزیہ نہیں کیا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق سابق وزیر اعلی کے خلاف سن انیس سو نواسی میں اپنے عہدے کا ناجائز فائدہ اٹھانے اور مجرمانہ حرکت کے ارتکاب کے الزامات ہیں۔

ویر بھدر سنگھ نے حال ہی میں سیاست میں اپنے پچاس سال پورے کیے ہیں اور اس دوران وہ ریاست ہماچل پردیش کے پانچ بار وزیر اعلی رہ چکے ہیں۔ ان کا شمار کانگریس کے سینیئر رہنماؤں میں ہوتا ہے۔

اسی بارے میں