نائب صدر کا انتخاب، جسونت سنگھ نامزد

جسونت سنگھ
Image caption جناح پر لکھی گئی جسونت سنگھ کی کتاب پر کافی تنازعہ ہوا تھا

بھارت میں حزبِ مخالف کے قومی جمہوری اتحاد این ڈي اے نے نائب صدر کے لیے جسونت سنگھ کو اپنا امیدوار بنایا ہے۔

نائب صدر کے لیے انتخاب آئندہ سات اگست کو ہونا ہے۔

ادھر حکمراں اتحاد یو پی اے نے پہلے ہی موجودہ نائب صدر حامد انصاری کو اس عہدے کے لیے دوبارہ بطور امیدوار نامزد کر رکھا ہے۔

این ڈی اے کا کہنا ہے کہ وہ حامد انصاری سے خوش نہیں جس کی وجہ راجیہ سبھا میں لوک پال بل اور خواتین کے ریزر ویشن کے بل کے دوران ان کی کارکردگی ہے۔

دارالحکومت دلی میں پیر کی صبح ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں بی جے پی کے سرکردہ رہنما لال کرشن اڈوانی نے کہا ’ہم نے فیصلہ کیا ہے انہیں (حکمراں اتحاد) آسانی سے نہیں جانے دیں گے۔ ہم نے اتفاق رائے سے فیصلہ کیا ہے کہ جسونت سنگھ این ڈی اے کے امیدوار ہوں گے۔‘

این ڈی اے، صدر کے انتخاب پر متحد نہیں اور اس کی حلیف جماعتیں جنتا دل یو اور شیو سینا نے یو پی اے کے امیدوار پرنب مکھرجی کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔ لیکن نائب صدر کے لیے جسونت سنگھ اس کے متفقہ امیدوار ہیں اور اس پر اتحاد کی سبھی جماعتیں متفق ہیں۔

پریس کانفرنس کے دوران کرشن اڈوانی نے کہا کہ وزیراعظم منموہن سنگھ نے حامد انصاری کے متعلق بی جے پی کی قیادت کو مطلع کیا تھا اور حمایت کے لیے کہا تھا لیکن ’ہم نے انہیں اپنے موقف سے آگاہ کیا کہ این ڈی اے حامد انصاری کے نام سے خوش نہیں ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ این ڈي اے نے پہلے جننتا دل یو کے سنیئر رہنما شرد یادو سے رابطہ کیا تھا کہ وہ نائب صدر کے امیدوار بنیں لیکن انہوں نے فعال سیاسی کردار ادا کرتے رہنے کی بات کہی اور یہ پیشکش ٹھکرا دی۔

واجپئی کے دور حکومت میں وزیر خارجہ اور وزیر خزانہ رہنے والے چوہتر سالہ جسونت سنگھ بی جے پی کے سنیئر سیاسی رہنما ہیں۔ انہوں نے اپنی نامزدگي پر خوشی ظاہر کی ہے۔

جسونت سنگھ نے کئی کتابیں لکھی ہیں اور چند برس پہلے بانیِ پاکستان محمد علی جناح پر ان کی کتاب پر کافی تنازعہ ہوا تھا۔

اسی بارے میں