لڑکیوں کے جینز پہننے پر حملے کی دھمکی

Image caption شہر کے اسکولوں کے کچھ پروفیسر نے لڑکیوں کو احتياط برتنے کا مشورہ دیا ہے۔

بھارتی ریاست جھارکھنڈ کے دارالحکومت رانچی میں بعض مقامات پر دھمکی آمیز پوسٹر نظر آنے کے بعد کشیدگی کی صورتحال پیدا ہو گئی ہے۔

ان پوسٹروں میں لڑکیوں کے جینز پہننے پر پابندی کے ساتھ دوپٹہ لے کر چلنے کا ’فرمان‘ جاری کیا گیا ہے۔

حالانکہ پوسٹروں کو پولیس نے ضبط کر لیا ہے، مگر ابھی تک یہ پتہ نہیں چل پایا ہے کہ اسے لگانے والے لوگ کون ہیں، کیونکہ بظاہر پوسٹر لگانے والی ’جھارکھنڈ مکتی یونین‘ نام کی تنظیم کے بارے میں پہلے کسی نے نہیں سنا۔

تنظیم نے اس پوسٹر کے ذریعے کہا ہے کہ ’جو لڑکیاں فرمان کو نظر انداز کریں گی ان پر اور ان کے گھر والوں پر حملے کیے جائیں گے۔‘

پولیس کا کہنا ہے کہ پوسٹر یہاں کے ایک اہم کالج کے ساتھ ساتھ شہر کے کئی حصوں میں لگائے گئے ہیں۔

لڑکیوں پر پابندی کے ساتھ ساتھ پوسٹر میں زمین کی خریداری اور فروخت پر پابندی اور ملازمتوں میں باہری لوگوں کی بحالی پر پابندی کی بات بھی کہی گئی ہے۔

پوسٹر میں سب سے اوپر لکھا ہے ’جھاركھنڈيو کی زمین، کام، ثقافت کی حفاظت کے لئے جھارکھنڈ مکتی سنگھ کا قیام‘

اس کے ساتھ ساتھ اس میں لکھا گیا ہے کہ رانچی کے البرٹ ایكا چوک سے چار کلو میٹر کی بعد ’باہری لوگوں کو زمین دینے یا لینے والوں پر حملہ ہوگا‘

اتنا ہی نہیں، سرکاری ملازمتوں میں بھرتی ہونے والے بیرونی لوگوں کو مار بھگانے کی بات کہی گئی ہے۔

اس میں کہا گیا ہے ’جھاركھنڈيو کو زمین سے بے گھر کرنے والی کمپنیوں اور اداروں پر حملہ کیا جائے گا۔‘

حالانکہ پولیس دیگر دھمکیوں کوسنجیدگی سے نہیں لے رہی ہے مگر لڑکیوں کے جینز پہننے اور چادر لے کر نہ چلنے کی بات نے سب کو تشویش میں مبتلا کر دیا ہے۔

شہر کے اسکولوں کے کچھ پروفیسر کہتے ہیں کہ پوسٹر کے بعد وہ پریشان ہیں اور اس لیے انہوں نے لڑکیوں کو احتياط برتنے کا مشورہ دیا ہے۔

وہیں رانچی کی پولیس نے شہر کے اہم علاقوں میں سیکورٹی فورسز کو تعینات کیا ہے تاکہ کسی ناخوشگوار واقعے کو روکا جا سکے۔

اسی بارے میں