سرکاری بینکوں کے لاکھوں ملازمین ہڑتال پر

آخری وقت اشاعت:  بدھ 22 اگست 2012 ,‭ 08:00 GMT 13:00 PST
بھارتی کرنسی

بینکوں میں ہڑتال کے سبب تجارتی سرگرمیاں متاثر ہوئی ہیں

بھارت میں سرکاری بینکوں کے تقریباً دس لاکھ ملازمین نے بدھ کے روز سے دو روزہ ہڑتال شروع کی ہے جس سے بینکوں میں کام کاج اور تجارتی سرگرمیاں بری طرح متاثر ہوئی ہیں۔

سرکاری ملازم بینکوں میں اصلاحات کے لیے حکومت کے ایک بل کی مخالفت کر رہے ہیں اور اسی پر احتجاج کے لیے انہوں نے ہڑتال کی کال دی ہے۔

لیکن اس ہڑتال میں بینک کے سب ملازم حصہ نہیں لے رہے۔ ہڑتال کے دوران اے ٹی ایم مشینز کام کرتی رہیں گي اور نجی بینک بھی کھلے رہیں گے۔

اطلاعات کے مطابق ملک گیر ہڑتال سے تقریباً ستّر فیصد بینک متاثر ہورہے ہیں لیکن اے ٹی ایم مشینوں کے کام کرنے سے عوام کو پہلے روز زیادہ مشکلات کا سامنا نہیں ہے۔

سرکاری بینکوں کے ملازم بینکوں میں اصلاحات کے لیے حکومت کے جس بل کی مخالفت کر رہے ہیں اسے بائیس اگست کو ہی پارلیمان میں پیش کیا جانا تھا۔

لیکن بعض ديگر امور پر اپوزیشن کے ہنگامہ خیز احتجاج کے بعد اسے پیش نہیں کیا جا سکا۔

مجوزہ بل کی منظوری سے سرکاری بینکوں میں بیرونی اور نجی سرمایہ کاری کا راستہ کھل جا‎ئے گا جس سے بینکوں کا موجودہ مینیجمنٹ سسٹم بھی بدل جائے گا۔

اس بل میں اس بات کی گنجائش ہے کہ سرکاری بینکوں کے شیئر ہولڈر کی تعداد بڑھائی جاسکتی ہے اور بینک کے بورڈ کا موجودہ ڈھانچہ بھی تبدیل کیا جا سکتا ہے۔

چند برس قبل بینکنگ سیکٹر میں اصلاحات کے لیے جو کھنڈیلوال کمیٹی بنائي گئی تھی اس کی سفارشات میں آؤٹ سورسنگ بھی شامل ہے اور ملازمین اس کی بھی مخالفت کر رہے ہیں۔

بینک ملازمین کی مختلف یونینز پر مشتمل 'نیشنل ارگنائزیشن آف بینک وکرز' کے جنرل سیکریٹری اشون رانا کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں حکومت کے نمائندوں سے بات کی ناکامی کے بعد ہڑتال کا فیصلہ کیا گيا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ انڈین بینک ایسو سی ایشن ( آئی بے اے) نے ان کے کسی بھی مطالبے کو تسلیم نہیں کیا بائیس اور تیئس اگست کو ہڑتال کرنے کا فیصلہ کیا گيا۔

ہڑتال کرنے والی بینک یونینز کا کہنا ہے کہ حکومت اس بل کے ذریعے سرکاری بینکوں کے سٹیٹس کو زائل کرنا چاہتی ہے اور اس سے ملازم بھی متاثر ہونگے۔

اس ہڑتال میں بھارت کی تقریبا دس مختلف بینک یونینز حصہ لے رہی ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ جب تک حکومت ان کے مطالبات تسلیم نہیں کرتی ان کا احتجاج جاری رہیگا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔