افواہوں میں پاکستان کا ہاتھ ایک ’مبالغہ‘ ہے

آخری وقت اشاعت:  بدھ 22 اگست 2012 ,‭ 11:30 GMT 16:30 PST
آسام کی فوٹو

بھارت کی شمالی مشرقی ریاست آسام میں کئی ہفتوں سے بوڈو قبائلیوں اور مسلمانوں کی درمیان تشدد جاری ہے

بھارت میں انگریزی کے ایک موقر روزنامے نے دعوی کیا ہے کہ آسام کے فسادات کے پس منظر میں اشتعال انگیز مواد شائع کرنے کے لیے بھارتی حکومت نے جن ویب سائٹس کو بلاک کیا ہے ان کی بڑی اکثریت میں آسام کے فسادات کا ذکر نہیں ہے۔

اخبار انڈین ایکسپریس کے مطابق ان ویب سائٹس کے جائزے سے لگتا ہے کہ افواہوں کے سلسلے بھارت نے پاکستان کے انٹرنیٹ صارفین پر جو الزامات عائد کیے ہیں انہیں بڑھا چڑھا کر پیش کیا گیا ہے۔

جمعہ کو بھارت کے داخلہ سیکریٹری آر کے سنگھ نے یہ الزام لگایا تھا کہ جن افواہوں اور دھمکی آمیز ایس ایم ایس پیغامات کی وجہ سے شمال مشرقی ریاستوں سے تعلق رکھنے والے لوگ بڑی تعداد میں اپنے گھروں کو لوٹ رہے تھے، ان میں سے زیادہ تر کا سلسلہ پاکستان سے شروع ہوا تھا۔

لیکن پاکستان نے ان الزمات کو مسترد کرتے ہوئے بھارت سے ثبوت مانگا تھا۔

بھارت کی شمال مشرقی ریاست آسام میں کئی ہفتوں سے بوڈو قبائلیوں اور مسلمانوں کے درمیان تشدد جاری ہے جس میں اب تک پچہتر سے زیادہ لوگ ہلاک ہو چکے ہیں۔ گزشتہ ہفتے ملک کے کئی شہروں میں یہ افواہ پھیلائی گئی تھی کہ عید کے بعد شمال مشرق سے تعلق رکھنے والے لوگو ں کے خلاف انتقامی کارروائی کی جا سکتی ہے جس کے بعد ان لوگوں نے بڑی تعداد میں اپنے گھروں کو لوٹنا شروع کردیا تھا۔

صرف بنگلور سے ہی تیس ہزار سے زیادہ لوگ افرا تفری میں اپنی نوکریاں اور تعلیم بیچ میں ہی چھوڑ کر واپس چلے گئے تھے۔

انڈین ایکسپریس نے ’سرکاری ذرائع‘ کے حوالے سے کہا ہے کہ بھارت نے پیر تک دو سو پینتالیس ویب سائٹس بلاک کی تھیں اور ان میں سے صرف بیس فیصد میں شمالی مشرقی ریاستوں سے تعلق رکھنے والے لوگوں یا آسام کے فسادات کا ذکر تھا۔

اخبار کے مطابق ’اب تک صرف ایک دو ویب سائٹس پر ہی آسام کے فسادات کی اصلی یا فرضی تصاویر یا ویڈیو ملی ہیں اور پچاس سے کم پیجز پر آسام کے فسادات کا ذکر ہے یا نفرت پھیلانے والے پیغام شائع کیے گئے ہیں اور یہ سبھی بھارت میں موجود انٹرنیٹ صارفین کی جانب سے شائع کیے گئے ہیں۔‘

حکومت کی جانب سے اب تک تین سو دس ویب سائٹس بلاک کی جا چکی ہیں۔

اخبار کے ذرائع کے مطابق ’بلاک کیے جانے والے ویب پیجز پر جو اشتعال انگیز مواد شائع کیا گیا ہے اس میں سے زیادہ تر پاکستانی صارفین نے اپ لوڈ کیا ہے لیکن اس مواد کا تعلق آسام کے فسادات سے نہیں ہے بلکہ برما میں مسلمانوں کے خلاف مبینہ ذیادتیوں کے واقعات سے ہے۔'

مہاراشٹر اور کرناٹک میں ان پیغامات کے سلسلے میں کئی گرفتاریاں عمل میں آئی ہیں۔

پاکستان کی جانب سے بھارتی الزام کی تردید کے بعد مسٹر آر کے سنگھ نے کہا تھا کہ بھارت ہمسایہ ملک کو ثبوت فراہم کرنے کے لیے تیار ہے۔

بھارتی حکومت نے سوشل نیٹ ورکنگ کی ویب سائٹس ٹوئٹر اور فیس بک سےبھی قابل اعتراض مواد ہٹانے کے لیے کارروائی کی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔