راجستھان: خشک سالی کے بعد شدید بارشیں

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 23 اگست 2012 ,‭ 12:17 GMT 17:17 PST
راجستھان میں بارش کی فوٹو

راجستھان میں گزشتہ کئی دنوں سے مسلسل بارش ہورہی ہے جس کی وجہ سے سکولوں اور گھروں میں پانی بھر گیا ہے

بھارت کی ریاست راجستھان میں حکام کے مطابق گزشتہ کئی روز سے جاری موسلا دھار بارشوں کے نتیجے میں چودہ افراد ہلاک ہوگئے ہیں۔

بارش کے سبب مکانات، دفاتر اور سکولوں میں پانی بھر گیا ہے جس کے بعد مقامی انتظامیہ نے سکول بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔

شدید بارشوں کی وجہ سے معمولات زندگی شدید متاثر ہوئے ہیں۔

راجستھان کے دارالحکومت جے پور اور اس کے قریبی علاقے ڈھول پور اور دوسا میں اب تک تقریباً بیس ہزار افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔

مقامی صحافی نارائن باریٹھ کے مطابق حکومت نے چودہ افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق کی ہے۔

بدھ کو جے پور کی کئی مساجد میں بارش کے رکنے کی دعا کی گئی۔

اس سے قبل مون سون میں کم بارشوں اور خشک سالی کے وقت بارش کے لیے دعائیں کی گئی تھیں۔

دارالحکومت جے پور میں بدھ کی رات بارہ بجے سے ڈھائی بجے کے درمیان سترہ سینٹی میٹر سے زیادہ بارش ریکارڈ کی گئی ۔

محکمۂ موسمیات کے مطابق گزشتہ تین دہائیوں میں یہ سب سے زیادہ بارش ہے۔

اس سے قبل سنہ انیس سو اکیاسی میں تئیس جولائی کو ایک ہی دن میں بتیس اعشاریہ چھ سینٹی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی تھی۔

محکمۂ موسمیات کا کہنا ہے کہ آئندہ کچھ دنوں میں مزید بارشیں ہو سکتی ہیں۔

بارش کے سبب ہونے والے نقصانات کے پیش نظر مقامی انتظامیہ نے امدادی کارروائیاں تیز کر دی ہیں۔

بعض علاقوں میں لوگوں نے اپنے گھر چھوڑ کر محفوظ مقامات پر پناہ لے لی ہے۔

بارشوں کی وجہ سے ذرائع مواصلات کا نظام بھی بری طرح متاثر ہوا ہے۔

جے پور کا ہوائی اڈے بھی بارشوں سے متاثر ہوا ہے اور وہاں کئی گھنٹے تک بجلی بند رہی۔

دریں اثناء وزیر اعظم منموہن سنگھ نے حالات کا جائزہ لینے کے لیے ریاست کے وزیر اعلیٰ اشوک گہلوت سے فون پر بات کی ہے۔

ریاستی حکومت نے ہلاک والوں کے لواحقین کو ڈیڑھ ڈیڑھ لاکھ روپے کی امداد دینے کا اعلان کیا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔