’بہاریوں کو درانداز قرار دے کر بھگا دیں گے‘

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 1 ستمبر 2012 ,‭ 07:50 GMT 12:50 PST
راج ٹھاکرے

راج ٹھاکرے اپنے متنازعہ فیہ بیان کے لیے جانے جاتے ہیں۔

بھارت کی ریاست مہاراشٹر کی علاقائی جماعت مہاراشٹر نو نرمان سینا (ایم این ایس) کے سربراہ راج ٹھاکرے نے بہار کے باشندوں کو درانداز قرار دینے کی دھمکی دی ہے۔

انھوں نے یہ بیان ممبئی پولیس کے چند اہلکاروں کے خلاف حکومت بہار کی جانب سے متوقع قانونی کارروائی کے سلسلے میں دیا ہے۔

خبروں میں کہا جا رہا ہے کہ ممبئی پولیس کے چند اہلکاروں نے بہار پولیس کو بغیر مطلع کیے بہار سے ایک نوجوان کو اٹھا لیا تھا۔

بہار کے چیف سیکریٹری نے ممبئی پولیس کمیشنر کو خط لکھ کر ریاست بہار کے اس نوجوان کی گرفتاری پر ناراضگی کا اظہار کیا۔

اس نوجوان پر گیارہ اگست کو ممبئی کے آزاد میدان میں ہونے والے مظاہرے کے دوران یادگار شہدا کو نقصان پہنچانے کا الزام ہے۔

راج ٹھاکرے نے اس خط کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ’خط میں کہا گیا ہے کہ بہار سے کسی شخص کو اٹھانے سے پہلے ممبئی پولیس کو حکومت بہار سے رابطہ کرنا چاہیے تھا۔ اگر ممبئی کی کرائم برانچ بہار پولیس کی اطلاع کے بغیر ان کی ریاست سے کسی فرد کو اٹھاتی ہے تو ان کے خلاف قانونی کارروائی ہوگی۔‘

راج ٹھاکرے نے مزید کہا کہ ’اگر بہار کی حکومت پولیس کی تفتیش میں رخنہ ڈالنے کی کوشش کریگی تو پھر میری پارٹی مہاراشٹر میں بہاریوں کو درانداز تسلیم کرے گی اور انہیں اس ریاست کو چھوڑنے پر مجبور کرے گی۔‘

انھوں نے کہا’ بہار سے اس شخص کو گرفتار کیا گیا ہے جس نے امر جوان یادگار کی بے حرمتی کی ہے۔ میں بہار کے چیف سکریٹری سے کہنا چاہتا ہوں کے آپ کی ریاست کی وجہ سے (مہاراشٹر میں) جرائم بڑھ رہے ہیں۔‘

واضح رہے کہ راج ٹھاکرے اس طرح کے متنازعہ بیانات کے لیے مشہور ہیں۔ اس سے قبل انھوں نے جنوری میں کہا تھا’میں بہت پہلے سے کہہ رہا ہوں کہ شمالی ہند سے ممبئی میں آکر بسنے والوں کی بڑھتی تعداد کی وجہ سے دہشتگردی کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔