کشمیر: جھڑپ میں ایک فوجی ہلاک

آخری وقت اشاعت:  بدھ 5 ستمبر 2012 ,‭ 05:56 GMT 10:56 PST

بھارتی کشمیر میں علیحدگی پسند رہنما گھروں میں نظر بند ہیں

بھارت کے زیرانتظام کشمیر میں تعینات فوج کی پندرہویں کور نے دعویٰ کیا ہے کہ لائن آف کنٹرول کے قریب مسلح جھڑپ کے دوران ایک عسکریت پسند مارا گیا ہے۔

ایل او سی کے قریب یہ تصادم پاکستان اور بھارت کے درمیان اہم مذاکرات سے دو روز قبل ہوا ہے۔

فوجی ترجمان لیفٹنٹ کرنل ایچ ایس برار کے مطابق مسلح دراندازوں کے ایک گروپ نے منگل کی شب بھارتی علاقے میں داخل ہونے کی کوشش کی تو شمالی کشمیر کے کرناہ سیکٹر میں ’عبداللہ ہٹ‘ کے قریب انہیں چیلنج کیا گیا۔

اس تصادم میں نائیک راجیش نامی ایک بھارتی فوجی بھی مارا گیا تاہم فوج کا دعویٰ ہے کہ جوابی فائرنگ میں ایک مسلح عسکریت پسند بھی ہلاک ہوگیا جس کی لاش ابھی بھی ’عبداللہ ہٹ‘ کے پاس پڑی ہے۔

فوجی حکام کا کہنا ہے کہ درانداز کمانڈو وردی میں ملبوس اور جدید خودکار ہتھیاروں سے لیس تھے۔

فوجی ترجمان کا کہنا ہے کہ جوابی فائرنگ کے بعد درانداز اپنے زخمی ساتھی سمیت واپس پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کی طرف فرار ہوگئے۔

فوجی حکام کو شک ہے کہ تصادم کی آڑ میں بعض مسلح درانداز بھارتی علاقے میں گھسنے میں کامیاب ہوگئے ہیں، اسی لیے کیرن سیکٹر کے کئی دیہات اور جنگلی علاقوں میں بڑے پیمانے پر تلاشی مہم شروع کی گئی ہے۔

قابل ذکر ہے کہ دو ہزار چار میں حکومت ہند نے سات سو چالیس کلومیٹر طویل کنٹرول لائن پر خار دار تار لگانے کا منصوبہ بنایا تھا۔ لیکن اسرائیل سے درآمد کی گئی یہ تار خراب موسم اور بھاری برفباری کی وجہ سے ناکارہ ہو جاتی تھی۔

حکام کا کہنا ہے کہ خار دار تار کی وجہ سے دراندازی کو محدود کیا گیا لیکن اس پر قابو نہیں پایا گیا۔

حالیہ دنوں بھارتی وزارت داخلہ کے عہدیداروں نے پولیس حکام کے ہمراہ کنٹرول لائن پر اگلی چوکیوں کا معائنہ کیا اور اس پر پختہ رکاوٹیں تعمیر کرنے کی تجویز پر بھی غور کیا۔

علیحدگی پسند رہنما میرواعظ عمرفاروق نے اس تجویز کو کشمیریوں کے خلاف ایک فوجی سازش قرار دیا ہے اور کہا ہے کہ اسرائیلی طرز پر کشمیر کی آبادیوں کو بانٹنے کا منصوبہ بنایا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔