بھارت، افراط زر کی شرح میں مستقل اضافہ

آخری وقت اشاعت:  پير 15 اکتوبر 2012 ,‭ 13:10 GMT 18:10 PST

بھارت میں عام اشیاء کی قیمتوں پر قابو نہیں پایا جا سکا ہے

بھارت میں افراظ زر کی شرح بڑھ کر سات اعشاریہ اکیاسی ہوگئی ہے اور اس مالی سال میں اب تک افراط زر کی یہ سب سے زیادہ شرح ریکارڈ کی گئی ہے۔

رپورٹ کے مطابق ضروری اشیاء کی قیمتوں میں یہ اضافہ ڈیزل اور گیہوں کی مہنگائي کے سبب ہوا ہے۔

بھارتی حکومت نے حال ہی میں ڈیزل کی فی لیٹر پانچ روپے قیمت بڑھائی تھی اور ماہرین نے اس وقت کہا تھا کہ اس سے عام اشیاء کی قیمتیں مزید بڑھ جائیں گی۔

گزشتہ اگست میں افراط زر کی شرح سات اعشاریہ پچپن تھی جو اس سال سات اعشاریہ اکیاسی ہوگئی ہے۔

لیکن گزشتہ برس کے مقابلے میں اس میں کمی آئی ہے، ستمبر دو ہزار گيارہ میں افراظ زر کی شرح دس فیصد تک پہنچ گئی تھی۔

ستمبر کے مہینے سب سے زیادہ اضافہ گیہوں کی قیمت میں ہوا ہے جس کی شرح اٹھارہ اعشاریہ ترسٹھ تک پہنچ گئی جبکہ اگست میں یہ تقریبا بارہ اعشاریہ پچاسی فیصد تھی۔

دوسرا بڑا اضافہ ڈیزل میں ہوا جس میں تقریباً نو فیصد کا اضافہ درج کیا گیا ہے جبکہ اگست میں یہ صفر اعشاریہ چھتیس تھا۔

اس کے علاوہ دیگر غذائی اشیاء جیسے دودھ، گوشت اور سبزیوں کی قیمت میں بھی اضافہ دیکھا گيا ہے۔

افراظ زر کی بڑھتی شرحوں کا سب سے زیادہ اثر ریزرو بینک آف انڈیا پر پڑیگا جو ایک بار پھر سود کی شرحوں میں کمی کا اعلان کرنے سے باز رہے گي۔

آر بی آئی گزشتہ تین برسوں سے عام اشیاء کی بڑھتی قیتوں کو کم کرنے کے لیے سخت اقدامات کے تحت سود کی شرحوں میں اضافہ کرتی رہی لیکن اس کا کوئی خاص اثر نہیں پڑا ہے۔

سود کی شرح میں اضافے سے کئی صنعتی شعبوں میں مندی دیکھنے کو ملی ہے اور مجموعی طور پر ملک کی اقتصادی ترقی سست روی کا شکار ہوگئی ہے۔

ملک کے صنعت کار اور بڑی کمپنیاں اس میں کمی کا مطالبہ کرتے رہے ہیں اور آ ربی آئی اس سلسلے میں اکتیس اکتوبر کو اپنی نئی پالیس اعلان کرنے والی ہے۔

لیکن اقتصادی ماہرین کا کہنا ہے کہ افراط زر کی شرحوں میں اضافے کے سبب کسی اہم تبدیلی کی توقع نہیں کرنی چاہیے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔