جھارکھنڈ، ہینڈگرینڈ پھٹنےسے تین بچے ہلاک

آخری وقت اشاعت:  پير 22 اکتوبر 2012 ,‭ 12:31 GMT 17:31 PST

بی ایس ایف کا کہنا ہے کہ فائرنگ سے متعلق وہ لوگوں کو خبردار کرتے رہتے ہیں

بھارتی ریاست جھارکھنڈ کے ضلع ہزاری باغ میں بارڈر سکیورٹی فورسز (بی ایس ایف) کے ایک تربیتی مرکز کے باہر ہینڈ گرینیڈ یا دستی بم پھٹنے سے تین بچوں کی ہلاکت کی اطلاع ہے۔

ہلاک ہونے والے بچوں کا تعلق اسی علاقے کے ایک گاؤں سے ہے جو آس پاس ہی کھیل رہے تھے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ سکھیہ گاؤں کے پاس واقع اس تربیتی مرکز میں بی ایس کے جوانوں کو تربیت دی جاتی ہے جس میں انہیں فائرنگ کے ساتھ ساتھ دستی بم پھینکنے کی بھی تربیت دی جاتی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ ابتدائی تفتیش سے پتہ چلا ہے کہ ہلاک ہونے والے بچے فائرنگ رینج کے اندر کھیل رہے تھے کہ ایک دستی بم یا ہینڈ گرینیڈ ان کے ہاتھ لگ گيا۔

یہ گرینیڈ ابھی ناکارہ نہیں ہوا تھا اور کھیلنے کے دوران ہی پھٹ گیا جس سے تین بچے موقع پر ہی ہلاک ہوگئے۔

ہزاری باغ کی ضلعی انتظامیہ اور بارڈر سکیورٹی فورسز کے اہل کاروں نے اپنی اپنی سطح پر اس واقعے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں۔

ہزاری باغ میں واقع بارڈر سکیورٹی فورسز کے اس تربیتی مرکز کے حوالے سے کافی تنازع رہا ہے۔ ایسے کئی معاملے سامنے آتے رہے ہیں جب مویشی چرانے والے تربیت لینے والے نوجوانوں کی گولیوں کا نشانہ بنے ہیں۔

علاقے کے لوگوں نے کئی بار اس مرکز کو وہاں سے ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے اور اسے آبادی سے دور منتقل کرنے کا مطالبہ کیا ہے لیکن بارڈ رسکیورٹی فورسز کا کہنا ہے کہ وہ تربیت کے دوران ہمیشہ احتیاط سے کام لیتے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ جب بھی ٹارگٹ شوٹنگ کی تربیت ہوتی ہے تو اس سے پہلے ہی علاقے کے لوگوں خبردار کر دیا جاتا ہے تا کہ لوگ اس علاقے میں داخل نا ہوں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔