ایف ڈی آئی پر ووٹنگ، حکومت کی جیت

آخری وقت اشاعت:  بدھ 5 دسمبر 2012 ,‭ 14:30 GMT 19:30 PST
ملائم سنگھ یادو

حکومت کو بعض سیاسی پارٹیوں کی جانب سے مخالفت کا سامنا تھا

ریٹیل سیکٹر یعنی خوردہ بازار میں بیرونی سرمایہ کاری پر کئی روز کی ہنگامہ آرائي اور بحث کے بعد اپوزيشن کی تحریک پر ووٹنگ ہوئی جس میں حکومت کی جیت ہوئی ہے۔

ایوان زیریں یعنی لوک سبھا میں حزب اختلاف کی رہنما شسما سوراج نے منگل کو یہ پیش کش رکھی تھی کہ حکومت کو ریٹیل سیکٹر میں بیرونی سرمایہ کاری کے فیصلے کو واپس لینا چاہیے اور پارلیمان پر اس مسئلے پر ووٹنگ ہونی چاہیے۔

اس معاملے پر ووٹنگ میں دو سو اٹھارہ ممبر پارلیمان نے حزب اختلاف کے موقف کی حمایت کی جبکہ دو سو تریپن ممبران نے حزب اختلاف کی مخالفت کی۔

اس سے قبل حکومت کی اتحادی جماعتیں سماجوادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی نے ووٹنگ سے پہلے پارلیمان کا واک آؤٹ کیا۔

واک آؤٹ کے بعد سماج وادی پارٹی کے سربراہ ملائم سنگھ یادو نے کہا کہ بیرونی سرمایہ کاری (ایف ڈی آئی) کی حکومت کی پالیسی سے کسان پریشان ہیں اور خوردہ بازار برباد ہوجائے گا اس لیے پارٹی نے واک آؤٹ کا فیصلہ کیا ہے۔

اس سے قبل بدھ کی صبح سے شام پانچ بجے تک لوک سبھا میں ایف ڈی آئی کے مسئلے پر بحث ہوئی جس میں حکومت اور حزب اختلاف دونوں نے اپنا اپنا موقف پیش کیا۔

اس میں بائیں بازوں کی جماعتوں کے علاوہ جنتا دل یونائٹیڈ، شیو سینا، راشٹریہ جنتا دل اور کانگریس کے رہنماؤ‎ں نے حصہ لیا۔

لالو پرساد یادو نے حکومت کی پالیسی کی حمایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی عوام کو گمراہ کررہی ہے اور خوردہ بازار میں بیرونی سرمایہ کاری ملک کے مفاد میں ہے۔

لالو پرساد یادو نے کہا ہے کہ بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت گجرات میں بیرونی سرمایہ کاری کو فروغ دے رہی ہے لیکن جب کانگریس کی حکومت ایسا فیصلہ کرتی ہے تو اسے پریشانی ہوتی ہے۔

وہیں مارکسوادی کمیونسٹ پارٹی کے رہنما باسو دیب آچاریہ نے کہا ’حکومت کو خوردہ بازار میں بیرونی سرمایہ کاری کے فیصلے پر دوبارہ سوچنا چاہیے۔ اس سے نہ تو کسان کو فائدہ ہوگا اور نہ ہی صارفین کا فائدہ ہوگا۔ ہم اپنے ملک میں آسانی سے والمارٹ کو نہیں آنے دیں گے۔‘

واضح رہے کہ ایف ڈی آئی پر لوک سبھا میں بحث منگل کو شروع ہوئی تھی اور اس بحث کا آغاز حزب اختلاف کی رہنما سشما سواراج نے کیا تھا اور اپنے خطاب میں حکومت کے اس متنازع فیصلے پر سخت نکتہ چینی کی تھی۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔