بھارت میں سردی کی لہر، ’170 ہلاک‘

آخری وقت اشاعت:  منگل 8 جنوری 2013 ,‭ 07:34 GMT 12:34 PST

سرد موسم کے ساتھ ساتھ گہری دھند نے بھی شہریوں کی مشکلات میں اضافہ کیا ہے

اطلاعات کے مطابق بھارت میں سردی کی حالیہ لہر کے دوران ہلاک ہونے والے افراد کی تعداد ایک سو ستّر سے تجاوز کر گئی ہے۔

ہلاک ہونے والوں میں زیادہ تر بےگھر اور معمر افراد شامل ہیں۔

اطلاعات کے مطابق زیادہ تر ہلاکتیں شمالی بھارت میں ریاست اترپردیش، اتراکھنڈ، پنجاب اور ہریانہ میں ہوئی ہیں۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق ملک کی سب سے گنجان آباد ریاست اترپردیش میں سردی سے ایک سو پچھہتر افراد کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔

گزشتہ ہفتے بھارتی دارالحکومت نئی دلّی میں تین جنوری کا دن گزشتہ چوالیس برس میں سرد ترین دن رہا تھا۔ محکمۂ موسمیات کے مطابق جمعرات کو نئی دلّی میں کم از کم درجۂ حرارت چار اعشاریہ آٹھ اور زیادہ سے زیادہ نو اعشاریہ آٹھ رہا۔

یہ انیس سو انہتر میں روزانہ درجۂ حرارت کا ریکارڈ رکھے جانے کا سلسلہ شروع ہونے کے بعد پہلا موقع ہے کہ دارالحکومت کا موسم اس قدر سرد ہوا کہ درجۂ حرارت اکہرے ہندسوں میں چلا گیا۔

محکمۂ موسمیات نے پیشنگوئی کی ہے کہ سرد موسم کی یہ لہر آنے والے چند دن تک جاری رہے گی۔

سرد موسم کے ساتھ ساتھ گہری دھند نے بھی شہریوں کی مشکلات میں اضافہ کیا ہے۔ دھند کی وجہ سے فضائی سروس اور ٹرینوں کی آمدورفت بری طرح متاثر ہوئی ہے۔

بھارت میں سردی کی اس لہر کا زیادہ اثر شمالی ریاستوں اور علاقوں میں دیکھا گیا ہے جن میں اتر پردیش، راجستھان، پنجاب، ہریانہ، ہماچل پردیش اور جموں و کشمیر شامل ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔