بھارت7 مصنوعی سیارے خلاء میں بھیجے گا

آخری وقت اشاعت:  پير 25 فروری 2013 ,‭ 14:18 GMT 19:18 PST

یہ مصنوعی سیارے بھارت کے پولر سیٹلائٹ لانچ ویہیکل یا پی ایس ایل وی کا تئیسواں مشن ہو گا جو ایک سات منزلہ بلند دو سو تیس ٹن راکٹ ہے

بھارت کی خلائی ایجنسی کا کہنا ہے کہ وہ ایک ہی مشن کے زریعے سات مصنوعی سیارے خلاء میں بھجوائے گا۔

ان مصنوعی سیاروں میں ایک فرانس کے اشتراک سے تیار کیا گیا مصنوعی سیارہ بھی ہے جو دنیا کے سمندروں پر تحقیق میں مدد دے گا۔

یہ مصنوعی سیارہ اپنے ساتھ دو ماحولیات کا جائزہ لینے والے آلات لے جائے گا جن کا کام سمندروں میں موجوں اور سطح سمندر کا جائزہ لینا ہے جو فرانس کی خلائی ایجنسی سی این ای ایس نے تیار کیے ہیں۔

یہ مصنوعی سیارے سوموار کو آندرا پردیش ریاست کے سری ہاری کوٹا لانچنگ پیڈ سے خلا میں چھوڑے جائیں گے۔

باقی چھ سیاروں میں سے دو کینیڈا اور آسٹریا کے ہیں جبکہ ایک ایک ڈنمارک اور برطانیہ کے ہیں۔

یہ مصنوعی سیارے بھارت کے پولر سیٹلائٹ لانچ ویکل یا پی ایس ایل وی راکٹ کا تئیسواں مشن ہو گا جو ایک سات منزلہ بلند دو سو تیس ٹن راکٹ ہے۔

بھارت کا پی ایس ایل وی خلائی راکٹ اب تک پچاس کے قریب مشن خلاء میں لیجا چکا ہے

اس لانچ کی تیاری سے پہلے تجرباتی لانچ حکام کے مطابق کامیاب رہی۔

بھارت اس سال دس کے قریب مشن خلا میں بھجوانے کا منصوبہ رکھتا ہے تاکہ خلا میں اپنی جگہ بنانے کے عمل کو تیز کر سکے اور اس کے ساتھ ہی مریخ پر بھی ایک بغیر انسان کے مشن بھجوانے کا ارادہ بھی رکھتا ہے۔

بھارت نے دو ہزار آٹھ میں ایک ہی مشن میں دس مصنوعی سیارے بھجوائے تھے جس سے اس کے خلائی منصوبے کو تقویت ملی۔

بھارت کا پی ایس ایل وی خلائی راکٹ اب تک پچاس کے قریب مشن خلاء میں لیجا چکا ہے۔

بھارت اب تیزی سے خلائی مارکیٹ میں داخل ہو رہا ہے جو کہ اب ایک کئی بلین ڈالر کی صنعت بن چکی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔