کشمیر:مظاہرین پر فائرنگ، نوجوان ہلاک

آخری وقت اشاعت:  منگل 5 مارچ 2013 ,‭ 13:31 GMT 18:31 PST

افضل گورو کو خفیہ طور پھانسی دیے جانے کے بعد سے کشمیر میں حالات مسلسل کشیدہ ہیں

بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر میں فوج کی مظاہرین پر فائرنگ سے ایک نوجوان کی ہلاکت کے بعد وادی میں کئی ہفتوں سے جاری کشیدگی میں مزید اضافہ ہوگیا ہے۔

طاہر رسول نامی نوجوان کی ہلاکت کا واقعہ منگل کو بارہمولہ کے علاقے کاکر حمام میں اس وقت پیش آیا جب عینی شاہدین کے مطابق وہاں سے گزرنے والی فوج کی ایک گاڑی سے مظاہرہ کرنے والے افراد پر فائرنگ کی گئی۔

بارہمولہ کے شہری آصف حسن نے بتایا ’فوج نے احتجاجی مظاہروں پر اعتراض کیا اور کچھ لڑکوں کو مارا پیٹا۔ اس پر نوجوان مشتعل ہوگئے تو فوج نے ان پر براہ راست فائرنگ کی۔‘

بارہمولہ کے ہسپتال میں تعینات ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے چھبیس سالہ طاہر رسول کے سر میں گولی لگی تھی جو جان لیوا ثابت ہوئی۔

اس ہلاکت کے بعد بارہمولہ کے ساتھ ساتھ وادی کے دوسرے قصبوں میں بھی کشیدگی کی تازہ لہر پھیل گئی ۔

واضح رہے بھارتی پارلیمان پر حملے کے مبینہ مجرم افضل گورو کو خفیہ طور پھانسی دیے جانے کے بعد سے کشمیر میں حالات مسلسل کشیدہ ہیں۔

گزشتہ روز بھارتی شہر حیدرآباد کی ایک یونیورسٹی میں بھی ایک کشمیری نوجوان پراسرار حالات میں مردہ پایا گیا تھا۔

علیٰحدگی پسندوں کا کہنا ہے کہ اسے پولیس نے حراست کے دوران اذیتیں دے کر قتل کیا ہے۔ اس واقعہ کے خلاف دو روز سے کشمیر میں عام ہڑتال کی جا رہی ہے۔ منگل کو بھی اسی سلسلے میں سرینگر، بارہمولہ اور دوسرے قصبوں میں مظاہرے کیے جا رہے تھے۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ علیٰحدگی پسندگروپوں نے افضل گورو کو پھانسی دیے جانے کے بعد باہمی اختلافات کو فراموش کر کے متحدہ مجلس مشاورت تشکیل دی تھی۔

مجلس نے منگل کو پلوامہ کی طرف مارچ کی اپیل کی تھی لیکن پولیس نے اس مارچ کو ناکام بنانے کے لیے سخت سکیورٹی پابندیاں نافذ کر دی تھیں۔

پابندیوں کے باوجود سرینگر کے شہر خاص میں سینکڑوں نوجوانوں نے ہند مخالف مظاہرے کیے اور جلوس نکالے تاہم پولیس نے طاقت کا استعمال کر کے انہیں منتشر کر دیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔