اجمیر:وزیراعظم کا دورہ، سجادہ نشین کا بائیکاٹ

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 8 مارچ 2013 ,‭ 11:48 GMT 16:48 PST

پاکستانی وزیراعظم کو سوچنا چاہیے کہ ان کی یہ حاضری قبول بھی ہوگی یا نہیں: سجادہ نشین

بھارت کے شہر اجمیر میں حضرت خواجہ معين الدین چشتی کی درگاہ کے سجادہ نشين نے پاکستان کے وزیراعظم راجہ پرویز اشرف کے درگاہ کے دورے کا بائیکاٹ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

سید زین العابدين علی خان کا کہنا ہے کہ انہوں نے یہ فیصلہ کشمیر میں پاکستانی فوجیوں کے جانب سے بھارتی فوجی کا سر قلم کرنے اور پاکستان میں اقلیتوں پر ہو رہے مظالم اور ان کے مذہبی مقامات کے عدم تحفظ کے خلاف احتجاجاً کیا ہے۔

خیال رہے کہ پاکستان کے وزیراعظم نے سنیچر کو ایک روزہ نجی دورے پر بھارت آنا ہے اور ان کے اس دورے کا بنیادی مقصد اجمیر شریف کی درگاہ پر حاضری دینا ہی ہے۔

سجادہ نشين نے جمعہ کو جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا ہے کہ کہ درگاہ خواجہ صاحب میں روایات کے مطابق کسی حکومتی عہدیدار کا استقبال ان کی طرف سے ہی کیا جاتا ہے۔

بیان کے مطابق تاہم اس بار انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ پاکستانی وزیر اعظم کی آمد کے دوران موجود رہنے کے لیے ضلعی انتظامیہ سے درگاہ میں موجودگی اور ان کے استقبال کے لیے اجازت نامے کے حصول کے لیے خط نہیں لكھیں گے اور اس سفر کا بائیکاٹ کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ بہتر ہوتا کہ پاکستانی وزیراعظم بھارتی فوجیوں کی ہلاکت پر ملک کے عوام اور فوجیوں کے خاندانوں سے معافی مانگ کر اجمیر میں درگاہ کی زیارت کو آتے تاکہ دونوں ملكوں کے درمیان نئے طریقے سے تعلقات کی ابتدا ہوتی۔

زین العابدين علی خان کا کہنا تھا کہ اگر وہ درگاہ میں وزیراعظم کا استقبال کرتے تو یہ ملک کے وقار کو ٹھیس پہنچانے اور ملک کی حفاظت پر مامور فوجیوں کی قربانی کی توہین کے مترادف ہوتا۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پاکستانی وزیراعظم کو سوچنا چاہیے کہ ان کی یہ حاضری قبول بھی ہوگی یا نہیں۔

ادھر پاکستان کے دفترِ خارجہ کے ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کا دورہ بائیکاٹ کے اس اعلان سے متاثر نہیں ہوگا اور وہ طے شدہ پروگرام کے مطابق بھارت جائیں گے۔

خیال رہے کہ پاکستانی وزیر اعظم کے بھارت کے اس دورے کی تیاریاں ایسے وقت کی جا رہی ہیں جبکہ لائن آف کنٹرول پر دونوں ملکوں کی فوجوں کے درمیان حالیہ مہینوں کے دوران جھڑپوں کے بعد فریقین کے درمیان کشیدگی پائی جاتی ہے اور اس کے نتیجے میں نہ صرف دو طرفہ امن مذاکرات کا عمل متاثر ہوا ہے بلکہ اعتماد سازی کے بعض اہم اقدامات پر عملدرآمد بھی کھٹائی میں پڑگیا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔