رام سنگھ کون تھے ؟

آخری وقت اشاعت:  پير 11 مارچ 2013 ,‭ 07:54 GMT 12:54 PST
دلّی میں اجتماعی ریپ پر احتجاج

بھارت کے دارالحکومت دلّی کے تہاڑ جیل میں سوموار کو مبینہ طور پر خودکشی کرنے والے دہلی گینگ ریپ کے اہم ملزم رام سنگھ اس بس کے ڈرائیور تھے جس میں ایک تیئس سالہ طلبہ کے ساتھ اجتماعی جنسی زیادتی کا واقعہ پیش آیا تھا۔

واقعہ کے دو دن بعد یعنی 18 دسمبر کو رام سنگھ کو گرفتار کیا گیا تھا۔ رام سنگھ کا چھوٹا بھائی مکیش سنگھ بھی اس کیس میں ملزم ہے۔

دلّی پولیس نے ایک ضلعی عدالت میں رام سنگھ کے علاوہ مکیش سنگھ، وجے شرما، اکشے ٹھاکر اور پون گپتا کے خلاف چارج شیٹ داخل کی تھی۔

33 سالہ رام سنگھ، اس کے بھائی مکیش اور ان کے معاون اكشے ٹھاکر نے اس واقعہ کے دن پارٹی کی تھی اور پھر مستی کرنے کے ارادے سے بس میں نکل پڑے تھے۔ اسی کے بعد انہوں نے مبینہ طور پر اس خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی کی تھی۔

رام سنگھ سنہ 2009 میں ایک حادثے میں زخمی ہونے کے باوجود وہ بس چلاتے رہے۔ اس حادثے میں ان کے ایک بازو میں شدید چوٹ آئی تھی جس کے بعد ڈاکٹروں کو اس کے بازو میں راڈ ڈالنی پڑی تھی۔

رام سنگھ کو جاننے والے بتاتے ہیں کہ وہ چھوٹے قد کے تھے۔ جنوبی دلّی کی ایک بستی میں رہنے والے رام سنگھ کے کچھ پڑوسيوں کا کہنا تھا کہ وہ اکثر شراب پی کر بے قابو ہو جاتے تھے۔

رام سنگھ اپنی بستی میں ’مینٹل‘ یعنی خبطی کے نام سے جانتے تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔