’جنسی ہراس‘، خاتون کی بالکونی سے چھلانگ

آخری وقت اشاعت:  بدھ 20 مارچ 2013 ,‭ 04:04 GMT 09:04 PST
تاج محل

تاج محل کی وجہ سے سیاحوں کے لیے آگرہ بھارت کے اہم ترین مقامات میں شامل ہے

بھارت کی سب سے بڑی ریاست اترپردیش کے معروف شہر آگرہ میں ایک برطانوی خاتون کو مبینہ طور پر ہراساں کرنے کے الزام میں ہوٹل کے مالک کو آج عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

پولیس کے مطابق برطانوی خاتون اس ہوٹل میں مقیم تھیں اور بقول ان کے انھیں جنسی طور پر ہراساں کرنے کی کوشش کی گئي جس سے بچنے کے لیے انھوں نے بالکونی سے چھلانگ لگا دی۔

برطانوی خاتون نے پولیس کو بتایا کہ’میں نے ہوٹل کے اہل کار سے کہہ رکھا تھا کہ انہیں صبح چار بجے جگا دیا جائے لیکن جب ہوٹل کا مالک اٹھانے آیا تو وہ مالش کرنے کی پیشکش کرنے لگا۔ جب وہ کسی طرح جانے کے لیے تیار نہیں ہو رہا تھا تو میں نے دروازہ بند کر لیا اور نیچے چھلانگ لگا دی اور بھاگ گئی۔‘

بی بی سی کے نمائندے وویک راج کا کہنا ہے کہ پولیس نے ہوٹل مالک کو پکڑ لیا ہے اور بدھ کو انہیں عدالت میں پیش کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ آگرہ میں تاج محل دیکھنے کے لیے دنیا بھر سے سیاح آتے ہیں اور کہا جا رہا ہے کہ ایسے واقعات سے بیرونی سیاحت متاثر ہوگی۔

ابھی چند روز قبل ہی بھارت کی وسطی ریاست مدھیہ پردیش سے بھی ایک سوئس خاتون کے ساتھ مبینہ اجتماعی ریپ کا واقعہ سامنے آیا تھا۔

شاید اسی کے پیش نظر برطانیہ کی وزارتِ خارجہ نے بھارت آنے والی برطانوی خواتین کے لیے حال ہی میں نئی رہنما ہدایت نامہ جاری کیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ وہ عوامی نقل و حمل کے ذرائع کا استعمال رات کو تنہا نہ کریں۔

بھارت میں برطانوی ہائی کمیشن کے ترجمان کا کہنا ہے کہ حکام نے متاثرہ خاتون سے بات کی ہے۔

آگرہ کے سینیئر پولیس افسر سبھاش چندر دوبے نے بی بی سی کو بتایا کہ خاتون کو ٹانگ میں لگنے والی چوٹ کا علاج کر دیا گیا ہے اور انہیں دوسرے کسی ہوٹل میں ٹھہرایا گیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ان کی سکیورٹی کے لیے دو خواتین سکیورٹی اہلکار دے دی گئی ہیں۔

پولیس افسر دوبے کے مطابق ہوٹل کے مالک کا دعویٰ ہے کہ وہ خاتون کو اٹھانے کے لیے کمرے میں اس لیے گئے تھے کیونکہ ان کا ٹیلی فون کام نہیں کر رہا تھا، جب خاتون نے فون پر جواب نہیں دیا تو انہیں بیدار کرنے کے لیے وہ کمرے میں گیا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔