پہلے بیرونی دورے کے لیے بھارت کا انتخاب

لی کیچیانگ
Image caption چینی وزیر اعظم لی کیچیانگ سہ روزہ بھارتی دورے پر اتوار کو دہلی پہنچ رہے ہیں

بھارت اور چین کے درمیان سرحدی تنازعے اور باہمی سفارتی کشیدگی کے چند روز بعد چینی وزیر اعظم لی كی چيانگ اتوار سے تین روزہ دورے پر بھارت پہنچ رہے ہیں۔

مارچ میں چینی حکومت میں تبدیلی کے بعد لی كی چيانگ کا یہ پہلا بیرون ملک کا دورہ ہے۔ چینی وزیر اعظم دہلی کے علاوہ ممبئی بھی جائیں گے۔

چینی وزیر اعظم کے اس بھارتی دورے سے یہ امید ظاہر کی جا رہی ہے کہ وہ اپنے اس دورے میں دونوں ممالک کے درمیان طویل عرصے سے جاری سرحد کے تنازعات پر بات چیت کریں گے۔

اس کے علاوہ لی کے ایجنڈے میں دونوں ممالک کے درمیان باہمی تجارت کو فروغ دینے کے معاملے پر بات چیت بھی شامل ہے۔

واضح رہے کہ لی کے چیانگ کے ہمراہ ایک بڑا تجارتی وفد بھی بھارت کے دورے پر آ رہا ہے۔

بھارت کی سب سے بڑی سافٹ ویئر برآمد کرنے والی کمپنی ٹاٹا كنسلٹینسي سروسز کے ہیڈ کوارٹر کا دورہ کرنے کے لیے چین کا وفد ممبئی جائے گا جس میں خود لی چیانگ بھی شامل ہوں گے۔

Image caption تبت کے تارکینِ وطن چینی رہنماؤں کے بھارتی دوروں کے موقعے سے دہلی میں مظاہرے کرتے رہے ہیں

اس کے علاوہ چین کے وزیر اعظم ایک ہندوستانی ڈاکٹر دواركاناتھ كوٹنس کے رشتہ داروں سے بھی ملاقات کریں گے جنہوں نے 1938 میں چین جاپان جنگ کے دوران چینی فوجیوں کا علاج کیا تھا۔

بھارتی خبر رساں ادارے پی ٹی آئی سے بات کرتے ہوئے چائنا نیشنل ایسوسی ایشن آف انٹرنیشنل اسٹڈیز کے وکٹر گاؤ زیكائی نے کہا: ’چین نے روس سمیت 13 سے 14 پڑوسی ممالک کے ساتھ اپنے سرحدی تنازعے سلجھا لیے ہیں۔ بھارت وہ واحد ملک ہے جس کے ساتھ یہ معاملہ ابھی تک طے نہیں کیا جا سکا ہے۔‘

پی ٹی آئی کے مطابق وکٹر گاؤ کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان سرحدی تنازع ’برطانوی سامراج‘ کی دین ہے اور دونوں ممالک کو اس بات پر یقین ہے۔

وکٹرگاؤ کے مطابق اس دورے کے دوران کوئی غیر متوقع اقدامات کی امید نہیں ہے لیکن امید ظاہر کی جا رہی ہے کہ اس معاملے پر دونوں ممالک کے درمیان بات چیت آگے بڑھ سکتی ہے۔

پی ٹی آئی کے مطابق وکٹر گاؤ چین کو تبدیل کرنے والے رہنما دینگ ژاؤ پنگ کے مترجم رہ چکے ہیں اور کافی بااثر مانے جاتے ہیں۔

Image caption لی کیچیانگ کے بھارتی دورے کے لیے دہلی میں چینی پرچم لگائے جا رہے ہیں

گاؤ کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان توانائی اور ریلوے کے شعبے میں تعاون کے خاصے امکانات ہیں۔

بڑے بھارتی کاروباریوں سے ملتے وقت دونوں ممالک کی طرف سے اس بات کی کوشش کی جائے گی کہ چینی منڈی میں بھارتی مصنوعات کیسے بہتر طریقے سے پہنچائی جائیں۔

دریں اثنا چینی وزیر اعظم کے بھارتی دورے سے ایک روز قبل سنیچر کو دارالحکومت دہلی میں مظاہرے بھی ہوئے ہیں۔

نیشلسٹ فورم آف انڈیا کے تحت ہونے والے اس مظاہرے کو دائیں بازو کی سخت گیر ہندو طلبہ تنظیم اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد کی حمایت بھی حاصل تھی۔

دوسری جانب بھارت میں مقیم تبت کے باشندے اور تارکین وطن بھی چینی وزیر اعظم کے بھارت دورے کی مخالفت کر رہے ہیں۔ جمعے کو ان لوگوں نے دہلی میں مظاہرہ کیا تھا۔

اسی بارے میں