سوئس خاتون سے ریپ کے ملزمان کو عمرقید

سوئس خاتون کے ساتھ ریپ کے ملزمان
Image caption ملزمان کا تعلق دتیا ضلع کے مقامی دیہات سے ہی ہے

بھارت کی وسطی ریاست مدھیہ پردیش میں سوئٹزرلینڈ کی ایک سیاح سے جنسی زیادتی کے چھ ملزمان کو عمر قید کی سزا سنا دی گئی ہے۔

ضلع دتیا کی خصوصی عدالت کے جج جتیندر شرما نے چھ میں سے چار ملزمان کو اجتماعی جنسی زیادتی اور دو کو ڈکیتی اور خاتون پر تشدد کا مجرم قرار دیا۔

بی بی سی ہندی کے مقامی نامہ نگار کے مطابق ملزمان کو عمر قید کے ساتھ ساتھ دس دس ہزار روپے فی کس جرمانہ بھی کیا گیا ہے اور یہ رقم متاثرہ خاتون کو دی جائے گی۔

ریپ کا یہ واقعہ رواں برس مارچ میں اس وقت پیش آیا تھا جب چھٹی منانے کے لیے اپنے ساتھی کے ہمراہ تین ماہ کے بھارت کے دورے پر آنے والی 39 سالہ خاتون مدھیہ پردیش کے علاقے اورچھا سے آگرہ تک سائیکل پر سفر کر رہا تھا اور اسی دوران ایک رات انہوں نے دتيا کے جھاڑيا گاؤں کے پاس کیمپ لگایا۔

رات کو آس پاس کی بستیوں میں رہنے والے تقریباً نصف درجن نوجوانوں نے ان کے کیمپ پر حملہ کر دیا تھا اور خاتون کے ساتھ اجتماعی جنسی زیادتی کی تھی۔

گزشتہ سال دسمبر میں دلّی میں ایک لڑکی سے بس میں اجتماعی جنسی زیادتی کے معاملے کے بعد جنسی تشدد کے حوالے سے پیدا ہونے والی بیداری کے بعد مقامی حکام پر اس معاملے کو جلد سے جلد حل کرنے کا دباؤ تھا۔

بھارت کے نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو کے اعداد و شمار کہتے ہیں کہ بھارت میں ہر بیس منٹ میں ایک عورت کے ساتھ ریپ کا معاملہ پیش آتا ہے۔

لیکن پولیس کا کہنا ہے کہ عام طور پر جنسی زیادتی کے دس معاملات میں سے تقریباً چار ہی پولیس تک پہنچ پاتے ہیں کیونکہ متاثرین یا ان کا خاندان شرمندگی کی وجہ سے ہی ایسے معاملات کو چھپا لیتے ہیں۔

اسی بارے میں