سابق مہاراجہ کی بیٹیاں چار ارب ڈالر کی مالک

Image caption ان کی املاک میں سونے جواہرات کے زیورات شامل ہیں

بھارت کے ایک سابق مہاراجہ کی بیٹیوں نے چار ارب امریکی ڈالر یعنی 200 ارب بھارتی روپے سے زیادہ کے ترکے کی املاک کا مقدمہ جیت لیا ہے۔

فرید کوٹ کےسابق مہاراجہ ہریندر سنگھ برار کی جائیداد سے متعلق مقدمہ دو عشروں سے جاری تھا۔

شمالی بھارت اور ریاست پنجاب و ہریانہ کے دارالحکومت چنڈی گڑھ کی ایک عدالت نے کہا ہے کہ فرید کوٹ کے سابق مہاراجہ ہریندر سنگھ برار کی وصیت میں جعل سازی کی گئی تھی۔

مہاراجہ کی اس جعلی وصیت کے مطابق ان کی جائیداد کی نگرانی ایک خیراتی ٹرسٹ کو حاصل تھی اور یہ ٹرسٹ سابق مہاراجہ کے بعض ملازمین اور محل کے اہلکاروں نے قائم کر رکھا تھا۔

سابق مہاراجہ کی املاک میں دارالحکومت دہلی، چنڈی گڑھ، حیدر آباد (دکن) میں ان کی متعدد جائیداد شامل ہیں۔

اس کے علاوہ ساڑھے تین سو سال پرانا فریدپور کا شاہی قلعہ، دو سو ایکڑ پر محیط ایک ہوائی اڈہ، سونے اور جواہرات کے زیوارت اور متعدد بیش قیمتی ونٹیج کاریں شامل ہیں۔

ریئل سٹیٹ کے ماہرین کے مطابق مہاراجہ کی جائیداد کی قیمت چار ارب ڈالر سے زیادہ ہے۔

چنڈی گڑھ عدالت کے چیف جوڈیشیل مجسٹریٹ رجنیش کمار نے جمعرات کو فیصلہ سناتے ہوئے ہریندر سنگھ کی بیٹیوں کے حق میں فیصلہ دیا۔

واضح رہے کہ سابق مہاراجہ کی بڑی بیٹی امرت کور نے ٹرسٹ کے نام والی وصیت کو چیلنج کیا تھا۔

مجسٹریٹ نے ہندو وراثت ایکٹ کے تحت فیصلہ سناتے ہوئے امرت کور اور ان کی بہن دیپندر کور کو اپنے والد ہریندر سنگھ کی جائیداد کا وارث قرار دیا۔

سابق مہاراجہ کی بیٹیوں کا مقدمہ لڑنے والے وکیل وکاس جین کا کہنا ہے کہ فیصلے کے مطابق مہاراجہ کی وصیت کے ساتھ جولائی 1982 میں چھیڑ چھاڑ ہوئی تھی اور اسے غیر قانونی قرار دیا گیا ہے اور اس کے ساتھ ہی مہروال کھیواجی نامی ٹرسٹ بھی غیرقانونی قرار پاتی ہے۔

بھارتی خبررساں ادارے کے مطابق مہاراجہ کی تین اولادیں تھیں جن میں سے ایک مہیپندر کور کی شملہ میں 2001 میں مشتبہ طور پر موت ہو گئی تھی۔ بڑی بیٹی امرت کور چنڈی گڑھ میں رہتی ہیں جبکہ دوسری بیٹی دیپندر کور کولکاتہ میں رہتی ہیں۔

اطلاعات کے مطابق جب جعلی وصیت تیار کی گئی تھی اس وقت سر ہریندر سنگھ برار اپنے اکلوتے بیٹے ٹکا ہرمیندر سنگھ کی موت کے غم میں ڈوبے ہوئے تھے اور اسی غم میں ان کی موت ہو گئي تھی۔

اسی بارے میں