BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت:
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
سنجے دت کو مجرم قرار دے دیا گیا
 

 
 
سنجے کواٹھارہ دسمبر تک گرفتار نہیں کیا جائے گا
ممبئی میں 1993 سے بم دھماکوں کے مقدموں کی سماعت کرنے والی عدالت نے اداکار سنجے دت کو دہشت گردی کے الزام سے بری کر دیا ہے۔

عدالت نے سنجے دت کو غیر قانونی اسلحہ رکھنے کے الزام میں مجرم قرار دیا ہے۔ اس جرم کی سزا تین سے پانچ سال تک ہو سکتی ہے یا پھر جرمانہ بھی عائد کیا جا سکتا ہے۔ جج نے کہا ’عدالت یہ مانتی ہے کہ سنجے دت دہشت گرد نہیں ہیں۔‘

مجرم قرار دینے کے بعد عدالت نے سنجے دت کو ان کی درخواست پر آئندہ مہینے کی انیس تاریخ تک مہلت دے دی ہے۔ انہیں اٹھارہ دسمبر تک گرفتار نہیں کیا جائے گا۔ انیس دسمبر کو وہ خود اپنے آپ کو حکام کے حوالے کر دیں گے۔

اپنی درخواست میں سجے دت نے اپنی بیٹی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ امریکہ میں رہتی ہے اور اس کی تعلیم کا انتظام کرنے کے لیے انہیں مہلت فراہم کی جائے۔ اس کے علاوہ درخواست میں سنجے دت نے اپنی ان فلموں کا بھی حوالہ دیا جن کی شوٹنگ اس وقت جاری ہے۔ اور جو ابھی مکمل نہیں ہو سکیں ہیں۔

عدالت نے سنجے دت کو انہیں دو بنیادوں پر گرفتاری سے مہلت دی ہے ۔

اس سے قبل خصوصی جج پرمود دتاتریہ کوڈے نے سنجے کو ان پر عائد الزامات پڑھ کر سنائے تھے جس میں بم دھماکے کی سازش، ٹاڈا قانون کی دفعہ 3(3) اور دفعہ پانچ اور چھ شامل تھیں۔

جج نے سنجے کو بم دھماکہ کی سازش اور ٹاڈا کی تمام مذکورہ دفعات کے الزامات سے بری کر دیا لیکن اسلحہ ایکٹ کی دفعات تین، سات، ون اے اور ون بی کے تحت انہیں مجرم قرار دیا۔

سنجے پر تین اے کے 56 رائفلز , نو ایم ایم پستول اور ہینڈ گرینیڈ رکھنے کا جرم ثابت ہوا ہے۔

جج نے کہا کہ عدالت نے ملزم سنجے دت کا وہ اقبالیہ بیان قبول کر لیا ہے جسے انہوں نے ڈپٹی پولیس کمشنر بشنوئی کے سامنے ریکارڈ کرایا تھا۔

سنجے دت نے اس بیان میں کہا تھا کہ انہوں نے اسلحہ اپنی حفاظت کے لیے لیا تھا۔ جج نے ایک بار پھر دہرایا کہ عدالت ملزم کودہشت گرد نہیں مانتی۔

سزا سننے کے بعد سنجے نے جج سے کچھ کہنے کی کوشش کی لیکن جج نے کہا کہ اطمینان کے ساتھ وقت آنے پر عدالت ان کا بیان ریکارڈ کرے گی۔

سنجے دت

ایڈوکیٹ راجندر شیروڈکر کے مطابق عدالت نے سنجے دت کو جس اسلحہ قانون کے تحت مجرم قرار دیا ہے وہ قابل ضمانت جرم ہیں البتہ اس جرم کی سزا تین سے پانچ سال تک ہو سکتی ہے یا پھر جرمانہ بھی عائد کیا جا سکتا ہے۔

ایڈوکیٹ عباس کاظمی کا کہنا تھا کہ سنجے دت اس سے قبل اٹھارہ ماہ کی سزا بھگت چکے ہیں اور اس لئے قیاس کیا جا سکتا ہے کہ انہیں سزا کی مدت تک ضمانت مل جائے اور پھر عدالت انہیں جرمانہ ادا کرنے کا حکم دے دے گی۔

سنجے دت کے وکیل ستیش مانے شندے عدالت میں اپنے موکل کی ضمانت کی تحریری درخواست کر رہے ہیں۔

 
 
اسی بارے میں
سنجے دت کیس کا فیصلہ آج؟
27 November, 2006 | انڈیا
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد