BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت:
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
ٹرین دھماکے: مشتبہ افراد کے خاکے
 
مشبتہ افراد کے بارے میں معلومات دینے والوں کیلیے ایک لاکھ روپے انعام کا اعلان کیا گیا ہے
سمجھوتہ ایکسپریس میں دھماکے کی تفتیش کے دوران ہریانہ پولیس نے عینی شاہدین کے بیانات کی بنیاد پر دو مشتبہ افراد کے خاکے جاری کیے ہیں۔ پولیس نے اس سلسلے میں پوچھ گچھ کے لیے کچھ افراد کو حراست میں بھی لیا ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس واقعے کی تفصیلات جاننے کے لیے عثمان نامی ایک شخص مدد کر رہا ہے۔ پانی پت سے بی بی سی کے ہندی سروس کے نمائندے سشیل جھا کا کہنا ہے کہ در اصل پولیس اس شخص کو حراست میں لے کر اس سے پوچھ گچھ کر رہی ہے۔

ہریانہ پولیس نے پانی پت میں صحافیوں کو بتایا: ’دھماکے کے سلسلے میں اب تک تیس سے پینتس افراد سے پوچھ گچھ کی گئی ہےاور عینی شاہدین کے بیانات کی بنیاد پر دو مشتبہ افراد کےخاکے جاری کیے گئے ہیں‘۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس دھماکے کی کارروائی میں چار سے پانچ افراد شامل ہو سکتے ہیں اور امکان ہے کہ مشتبہ شدت پسندوں نے’ ڈیجیٹل ٹائم بم‘ کا استعمال کیا ہے۔ پولیس نے بتایا ہے کہ دھماکے کی کارروائی ایک منظم سازش کا حصہ ہے۔

ہریانہ پولیس نے دھماکے کے مقام سے مٹی کے تیل کی چودہ بوتلیں، ایک پائپ، ایک ڈیجیٹل ٹائمر، سوٹ کیس کا غلاف اور دیگر اشیاء بھی بر آمد کی ہیں۔

انسپکٹر جنرل ہریانہ پولیس شرد کمار نے بتایا کہ دھماکے میں جی آر پی کے ایک اسسٹنٹ سب انسپکٹر بھی ہلاک ہوئے ہیں۔

دھماکے کے شواہد
ہریانہ پولیس نے جائے وقوعہ سے دھماکہ خیز مواد برآمد کیا ہے

تاہم ہریانہ پولیس نے حفاظتی انتظامات میں لاپرواہی کی بات قبول کی ہے۔ پولیس نے مشبتہ دہشتگردوں کے بارے میں معلومات دینے والوں کو ایک لاکھ روپے انعام دینے کا بھی اعلان کیا ہے۔

خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق صفدر جنگ ہسپتال میں داخل پاکستانی زخمیوں میں ایک بچے نے منگل کی صبح دم توڑ دیا۔اس بچے کو انتہائی نازک حالت میں پیر کو ہسپتال میں داخل کروایا گیا تھا۔ پندرہ سالہ حنیف محمد کراچی کا رہنے والا تھا۔ حنیف محمد کی موت کے بعد کل مرنے والوں کی تعداد 68 ہوگی ہے۔

منگل کی صبح حکمراں جماعت کانگرس پارٹی کی سربراہ سونیا گاندھی نے صفدر جنگ ہسپتال کا دورہ کیا۔

پی ٹی آئی ایجنسی کے مطابق سونیا گاندھی نے پاکستانی شہری شوکت علی اور رخسانہ سے بھی ملاقات کی جن کے پانچ بچے اس واقعے میں ہلاک ہوگئے ہیں۔ان کی چھٹی بچی اقصیٰ بھی زخمی حالت میں اسی ہسپتال میں زیر اعلاج ہیں۔

 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد