BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
آپ کی آواز
وقتِ اشاعت: Sunday, 25 April, 2004, 13:19 GMT 18:19 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
انٹرنیٹ کے ذریعے خرید و فروخت
 
انٹرنیٹ سے بینکاری عام ہے
انٹرنیٹ سے بینکاری عام ہے
مغربی ممالک میں خرید و فروخت کے لئے انٹرنیٹ کا استعمال عام ہوگیا ہے۔ اگر آپ کے پاس کریڈِٹ کارڈ اور انٹرنیٹ کی سہولیات ہیں تو آپ گھر بیٹھے کپڑے، کتابیں، بس اور ہوائی جہاز کی ٹکٹیں، وغیرہ خرید سکتے ہیں۔ انٹرنیٹ کے ذریعے خرید و فروخت کے اس عمل کے دوران آپ کسی شخص سے نہیں ملتے ہیں اور آپ کو اپنے کمپیوٹر پر پورا اعتماد ہوتا ہے۔

کیا آپ نے بھی انٹرنیٹ کے ذریعے کوئی چیز خریدی ہے؟ انٹرنیٹ کے ذریعے سامان خریدنے کا آپ کا پہلا تجربہ کیسا رہا؟ انٹرنیٹ آپ کی زندگی کو کیسے متاثر کررہا ہے؟

آپ کی رائے

یہ فورم اب بند ہو چکا ہے، قارئین کی آراء نیچے درج ہیں

فواد فراز، امریکہ: انٹرنیٹ پر شاپنگ میں کوئی خطرہ نہیں مگر اس میں دو چیزوں کا دھیان رکھنا چاہیے۔ ایک تو یہ کہ آپکا کریڈٹ کارڈ آپ کو دھوکہ دہی کے خلاف تحفظ فراہم کرے اور دوسرے یہ کہ ویب سائٹ بھی محفوظ ہو۔

عبدالغفور، کینیڈا: میں انٹرنیٹ پر اکثر شاپنگ کرتا ہوں کیونکہ یہ نہ صرف سستا طریقہ ہے بلکہ اس میں ہمیں تنوع بھی مل جاتا ہے۔ نیز بیچنے والے بھی اپنا مال بڑی آسانی سے یہاں بیچ سکتے ہیں۔

وقار احمد، سعودی عرب: انٹرنیٹ پر خریداری بہت فائدے کی چیز ہے۔ آپ پاکستان کے دور افتادہ علاقے میں بیٹھ کر اسی طرح آسانی سے ایک چیز خرید سکتے ہیں جس طرح لندن یا نیویارک میں بیٹھ کر کرتے ہیں۔ بس ایک مسئلہ ہے کہ ویب سائٹز پر چیزوں کو ضرورت سے زیادہ اچھا دکھایا جاتا ہے۔

عمر سلیم، پاکستان: میں ’کیش آن ڈلیوری‘ کے طریقہ کو زیادہ محفوظ سمجھتا ہوں۔ کریڈٹ کارڈ کے ذریعہ خریداری میں کچھ بھی ہو سکتا ہے۔

حسین، کینیڈا: میرے خیال میں محفوظ ویب سائیٹز پر شاپنگ میں کوئی خطرہ نہیں۔ میں نے پچھلے تین سال میں اپنے تمام بل انٹرنیٹ کے ذریعے ادا کئے ہیں۔

محمد شاہد، ملتان: میں نے ابھی تک انٹرنیٹ پر کوئی شاپنگ تو نہیں کی لیکن میں ایسا کرنا ضرور چاہوں گا کیونکہ ایسی ٹیکنالوجی ضرور اپنانی چاہیے جس سے لوگوں کو فائدہ ہوتا ہو۔

میاں ٹی شاہ، کینیڈا: میں اپنی زیادہ تر شاپنگ انٹرنیٹ کے ذریعے کرتا ہوں۔ شاپنگ کے دوران میں اپنے گھر والوں کے ساتھ چائے سے بھی لطف اندوز ہوتا ہوں۔

خرم تنویر شیخ، ساؤتھ کوریا: میرے خیال میں انٹرنیٹ شاپنگ ایک آسان، سود مند اور سستا ذریعہ شاپنگ ہے۔

نجم انور، کراچی: اگر آپ انٹرنیٹ کے بارے میں صحیح علم رکھتے ہیں تو کسی محفوظ سائٹ سے خریداری میں کوئی مضائقہ نہیں۔

مرزا افضل، پاکستان: انٹرنیٹ کے ذریعے شاپنگ ایک منفرد تجربہ ہے۔ یہ نہ صرف محفوظ ہے بلکہ اس سے وقت کی بچت بھی ہوتی ہے۔ میرا انٹرنیٹ پر شاپنگ کا تجربہ بہت اچھا رہا اور میں مستقبل میں بھی انٹرنیٹ پر شاپنگ کرنا
پسند کروں گا۔

راہول سچدیو، سبی، پاکستان: وہ شاپنگ ہی کیا جس میں انٹرنیٹ کا استعمال نہ ہو۔ شکریہ amazon.com آپ کا، آپ نے ہماری مشکل آسان کر دی۔

نعمان احمد، راولپنڈی: میں نے تو نہ اب تک انٹرنیٹ پر شاپنگ کی ہے اور نہ ہی مستقبل میں اس وقت تک کرنے کا ارادہ ہے جب تک میرے خدشات دور نہیں ہو جاتے۔

ناصر علی، کویت: میں پچھلے چھ سال سے انٹرنیٹ پر شاپنگ کر رہا ہوں اور مجھے ہمیشہ مقامی مارکیٹ کے مقابلے میں اچھی قیمت ملی ہے۔اس ٹیکنالوجی کے ذریعے آپ بغیر سرمایہ کے اپنا کاروبار شروع کر سکتے ہیں اور غیر متوقع منافع کما سکتے ہیں۔

سید ایس، آسڑیلیا: میں نے اپنی کار انٹرنیٹ کے ذریعے خریدی ہے۔ آپکا اس بارے میں کیا خیال ہے؟

آصف رشید، امریکہ: انٹرنیٹ پر شاپنگ محفوظ ہے اور اس سے وقت بھی بچتا ہے۔ اس سلسلے میں میرا ذاتی تجربہ خاص طور پر ہوائی سفر کے لئے ٹکٹ کی خرید، بہت اچھا رہا ہے۔

صداقت خان، برطانیہ: میں پہلے ڈرتا تھا لیکن اب میں انٹرنیٹ آکشنز پر اپنی پسند کی چیزیں خریدتا ہوں۔ میں اپنی بینکنگ بھی انٹر نیٹ کے ذریعےکرتا ہوں۔ ایسے لگتا ہے کہ ایک کی بورڈ کے ذریعے ساری دنیا آپ کے قبضے میں ہے۔

محمد عامر خان، کراچی: پہلے نیٹ پر شاپِنگ کرنے کے بارے میں خدشات ہوتے تھے لیکن اب نئی ٹیکنالوجی اور محفوظ انٹرنیٹ نظام کی وجہ سے لوگ اپنا کریڈِٹ کارڈ انٹرنیٹ پر استعمال کرنے سے نہیں گھبراتے۔ خدشات ہر ایک سطح پر ابھی تک موجود ہیں۔

عمر فاروق، برمِنگھم: میں اپنی شاپِنگ آن لائن کرتا ہوں۔ کافی سستا ہے، محفوظ بھی۔ شاپِنگ کرنے کا یہ آسان طریقہ ہے۔

وسیم شہزاد: میرا خیال ہے کہ انٹرنیٹ شاپِنگ بالکل محفوظ ہے۔ جب میں انگلینڈ میں تھا تو تقریبا ساری چیزیں انٹرنیٹ پر ہی خریدتا تھا۔ ٹیلیفون، گیس، بجلی کا بل بھی انٹرنیٹ پر ہی دیتا ہوں۔

عرفان قیوم، امریکہ: کسی بھی بل کی ادائیگی کے وقت سے پانچ گھنٹے پہلے میرا کمپیوٹر شور مچاتا ہے اور اس طرح میں وقت ختم ہونے سے تھوڑا پہلے انٹرنیٹ کے ذریعے اپنے بِل کی ادائیگی کردیتا ہوں۔ اور اس طرح مجھے لیٹ فیس نہیں دینا پڑتا ہے۔

صالح محمد، راولپنڈی: میں نے پہلی دفعہ انٹرنیٹ پر خریداری سن دو ہزار ایک میں کی تھی۔ اس کے بعد بھی بےشمار دفعہ انٹرنیٹ پر خریداری کرچکا ہوں۔

سہیل مرزا، ریڈِنگ: انٹرنیٹ شاپِنگ نہ صرف اچھی قیمت معلوم کرنے کا ذریعہ ہے بلکہ جو آپ تلاش کررہے ہیں اس کی تمام تفصیلات بھی، وہ تفصیلات بھی جو ایک دکان کا مالک بھی نہ بتا پائے گا۔ مگر ساتھ ہی ساتھ فراڈ کرنے والے بھی سرگرم ہیں۔

طاہر شیخ، حیدرآباد دکن: انٹرنیٹ شاپِنگ آزاد مزاج عورتوں کے لئے ایک اور قید ہے جبکہ پاک دامن عورتوں کے لئے مارکیٹ میں جاکر لوگوں کی گندی نگاہ سے بچنے کا بہترین موقع ہے۔

عتیق احمد، پاکستان: ہاں، میں اپنا بِل انٹرنیٹ کے ذریعے جمع کرتا ہوں اور پیسے بھی انٹرنیٹ کے ذریعے بھیجتا ہوں۔ مجھے اپنے بینک پر اعتماد ہے۔

خواجہ حسین، ممبئی: انٹرنیٹ شاپِنگ اچھی تو ہے مگر جب وہ محفوظ ہو۔ آج کل انٹرنیٹ پر جاسوسی اور ہیکِنگ بہت زیادہ ہوگئی ہے، اس لئے عام گھریلو عورتیں فراڈ کا شکار ہوسکتی ہیں۔

اقبال محمد، لاہور: eBay اور Amazon انٹرنیٹ شاپِنگ کے لئے محفوظ ہیں۔ لیکن اگر ہمارے کمپیوٹر میں کوئی وائرس ہو تو اسے معلوم کرنا مشکل ہوسکتا ہے۔ کئی وائرس ہمارے کریڈِٹ کارڈ کا نمبر معلوم کرسکتے ہیں۔

اشفاق نذیر، جرمنی: انٹرنیٹ پر خریدوفروخت نہ صرف وقت اور پیسے کی بچت ہے بلکہ دلچسپ بھی ہے۔ میرا تجربہ ایک گاڑی خریدنے سے ہوا۔ اور آج یہی میرا کاروبار ہے۔ میں گھر سے بیٹھ کر انٹرنیٹ پر گاڑیاں خریدتا اور بیچتا ہوں۔ میرے خیال سے اس میدان میں بہت سے مواقع ہیں کاروبار کے، اور تعلیم کے لئے بھی۔

شفیق خان، بنگلور: مغربی ممالک میں جہاں بے حیائی اور بےشرمی عام ہے اور اپنے عورتوں کو باہر بھیجنا مناسب نہیں ہے، تو انٹرنیٹ شاپِنگ اس کا بہترین متبادل ہے۔ مسلمانوں کے لئے انٹرنیٹ شاپِنگ سب سے زیادہ فائدہ مند ہے۔

ناظم شیخ، سعودی عرب: انٹرنیٹ کے ذریعے شاپِنگ کرنا بہت اچھی چیز ہے۔ وقت بچتا ہے۔ مجھے تو سب سے مزہ بِل کی ادائیگی کرنے میں آتا ہے۔

کاشف علی رضا، پاکستان: انفارمیشن ٹیکنالوجی کے فائدہ اور نقصانات بھی ہیں۔ اس کی وجہ سے ہماری زندگی آسان ہوگئی ہے اور ہمیں متعدد سہولیات مہیا ہورہی ہیں۔ لیکن مسئلہ تب کھڑا ہوجاتا ہے جب کئی ادارے انٹرنیٹ کی سیکیورٹی نہیں مہیا کرتے۔

عمران سیال، کراچی: میرے خیال میں کوئی پاگل ہی ہوگا جو اتنا رِسک لے گا انٹرنیٹ پر شاپِنگ کرنے کا۔

ایم آصف لودھی، پاکستان: آن لائن شاپِنگ سے پہلے مجھے ڈر لگتا تھا لیکن اب نوے فیصد شاپِنگ آن لائن ہی کرتا ہوں۔ یہ سستی بھی پڑتی ہے۔

صلاح الدین لنگا، جرمنی: ایک وقت تھا جب مجھے آن لائن شاپِنگ سے ڈر لگتا تھا۔ لیکن eBayجیسی ویب سائیٹ نے زندگی بدل ڈالی ہے۔ اب میں نوے فیصد سامان آن لائن دکانوں سے خریدتا ہوں، مثال کے طور پر amazon.de سے۔ اس سے میرا وقت بچ جاتا ہے اور پیسہ بھی۔

 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد