Got a TV Licence?

You need one to watch live TV on any channel or device, and BBC programmes on iPlayer. It’s the law.

Find out more
I don’t have a TV Licence.

لائیو رپورٹنگ

time_stated_uk

  1. Post update

    یہ صفحہ اب مزید اب ڈیٹ نہیں کیا جا رہا۔ آپ کووڈ 19 سے متعلق تازہ اطلاعات کے لیے ہمارے نئے لائیو پیج پر آسکتے ہیں۔

  2. لاطینی امریکہ میں اموات کی تعداد 10 لاکھ سے بڑھ گئی

    برازیل

    لاطینی امریکہ اور کیریبیئن خطے میں کورونا وائرس کے باعث ہلاکتوں کی تعداد 10 لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے۔

    خبر رساں ادارے روئٹرز کے ان اعداد و شمار سے اندازہ ہوتا ہے کہ سب سے زیادہ فی کس شرح اموات والے اس خطے میں وبا کی صورتحال مزید خراب ہو رہی ہے۔

    یورپ، ایشیا اور شمالی امریکہ میں نئے متاثرین کی تعداد میں کمی واقع ہو رہی ہے، افریقہ میں یہ سطح ہموار ہے، مگر جنوبی امریکہ اب وہ واحد خطہ ہے جہاں نئے متاثرین کی تعداد فی کس اعتبار سے تیزی سے بڑھی رہی ہے۔

    مئی میں دنیا بھر میں کووڈ سے ہونے والی اموات کی اوسطاً 31 فیصد اموات لاطینی امریکہ اور کیریبیئن میں ہوئیں جو کہ ویسے دنیا کی کُل آبادی کے صرف آٹھ اعشاریہ چار فیصد کا گھر ہے۔

  3. پاکستان کے صوبہ پنجاب میں گذشتہ 24 گھنٹوں میں 35 افراد ہلاک، ایک ہزار سے زائد نئے متاثرین

    VIRUS

    محکمہ صحت پنجاب کے مطابق صوبے میں کورونا کیسز کی شرح 4.56 ریکارڈ کی گئی ہے اور لاہور میں بھی کیسز کی شرح کم ہو کر 4.23 ہو گئی ہے۔

    محکمہ صحت کے مطابق پنجاب میں گذشتہ ایک دن میں کورونا کے 23152 ٹیسٹ کیے گئے جن میں سے 1057 افراد میں وائرس کی تصدیق ہوئی جبکہ صوبائی دارالحکومت لاہور میں کورونا کے 11222 ٹیسٹ میں سے 475 مثبت آئے۔

    محکمہ صحت کےمطابق پنجاب میں گذشتہ چوبیس گھنٹوں میں کورونا سے 35 افراد ہلاک ہو گئے۔ مرنے والوں میں سے 13 افراد کی موت لاہور میں ہوئی۔ اس وقت پنجاب کے ہسپتالوں میں کورونا وائرس کے 372 مریض انتہائی نگہداشت کے وارڈ میں زیر علاج ہیں۔

  4. پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں چار اضلاع کے علاوہ تعلیمی ادارے دوبارہ کھولنے کا فیصلہ

    کشمیر

    پاکستان کے زیر انتظام کشمیر کے صدر نے خطے میں تعلیمی اداروں کو دوبارہ کھولنے کی منظوری دے دی ہے تاہم اس خطے کے چار ایسے اضلاع بھی ہیں جہاں کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی شرح زیادہ ہے۔

    محکمہ داخلہ نے خطے کے ان چار اضلاع میں جہاں کورونا وائرس کا تناسب کافی عرصہ سے زیادہ تھا وہاں 3 جون سے تعلیمی سرگرمیوں کو بحال کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

    .ان اضلاع میں مظفرآباد، باغ، پونچھ اور سدھنوتی شامل ہیں۔

  5. وائرس کی انڈین قسم کا پھیلاؤ: جرمنی کا برطانوی شہریوں پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ

    Virus

    جرمنی کے پبلک ہیلتھ انسٹیٹیوٹ نے برطانیہ میں انڈین قسم کے وائرس کے پھیلاؤ پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔

    23 مئی سے اب انگلینڈ، ویلز، سکاٹ لینڈ اور شمالی نیدر لینڈ سے جرمنی سفر کرنے والوں میں سے صرف وہی افراد ملک میں داخل ہو سکیں گے جن کے پاس جرمنی کی شہریت یا سکونت ہو گی۔

    اگر کوئی جرمن خاندان اپنے بچوں سمیت واپس آ رہا ہے تو ایسے شہریوں کے 18 سال سے کم عمر بچوں کو بھی جرمنی میں داخل ہونے کی اجازت دی جائے گی۔

    ایسے افراد جن کو کسی ہنگامی صورتحال کے باعث واپس آنا پڑ رہا ہے انھیں بھی جرمنی میں انسانی بنیادوں پر داخلے کی اجازت دی جائے گی۔

    ایسے افراد جو ایک پرواز سے دوسری پرواز سے سفر کریں گے انھیں بھی جرمنی میں داخلے کی اجازت ہو گی تاہم انھیں ایئرپورٹ کے ٹرانزٹ ایریا تک ہی محدود رہنا ہو گا۔

    خیال رہے کہ جرمنی ابھی بھی برطانیہ کی ان ممالک کی فہرست میں شامل ہے جن کے شہریوں کو برطانیہ پہنچنے پر دس دن قرنطینہ میں گزارنے لازمی ہیں اور انھیں سفر سے پہلے اور بعد میں ٹیسٹ کرانا بھی ضروری ہیں۔

  6. سندھ کا موجودہ پابندیاں مزید دو ہفتے تک برقرار رکھنے کا فیصلہ، تعلیمی ادارے بند رہیں گے

    سکول

    وزیراعلیٰ سندھ کی سربراہی میں ہونے والے ٹاسک فورس کے اجلاس میں کورونا وائرس کی صورتحال کے پیش نظر مزید دو ہفتوں تک پابندیاں برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

    سندھ حکومت نے کورونا وائرس کے پیش نظر ابھی سکول بھی نہ کھولنے کا فیصلہ کیا ہے۔

    صوبائی حکومت کے ترجمان کے مطابق سکولوں کے کھلنے کا فیصلہ تب کریں گے جب کورونا کی صورتحال بہتر ہوجائے گی۔ وزیر تعلیم کو تعلیمی اداروں میں اساتذہ کی ویکسینیشن کرنے کا بندوبست کرنے کی ہدایت کر دی گئی۔

    اجلاس میں کیے گئے فیصلوں کے مطابق تمام سیاحتی مراکز، سی ویو، ہاکس بے، تفریحی پارکس دو ہفتوں کے لیے بند رہیں گی۔

    صوبے میں واکنگ ٹریکس کھلے رکھے جائیں گے۔ دکانیں پیر سے شام 6 بجے تک ایس او پیز کے تحت کھلی رہیں گی۔ ابھی شادی ہال بھی بند رہیں گے۔

    ترجمان کے مطابق انٹر سٹی ٹرانسپورٹ 50 فیصد مسافروں کے ساتھ چلے گیں، اگر خلاف ورزی ہوئی تو سخت جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ ڈپارٹمنٹل اسٹور بھی شام چھ بجے تک کھلی رہیں گی۔

    دوسری جانب پاکستان کی وزارت تعلیم نے تیسری لہر کے تناظر میں کورونا کیسز میں پانچ فیصد سے زیادہ اضافے ہونے پر کراچی، اسلام آباد، لاہور، راولپنڈی، کوئٹہ اور پشاور سمیت مختلف شہروں میں سرکاری اور نجی تعلیمی ادارے 6 جون تک بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

  7. کیا بچوں کو کورونا وائرس کی ویکسین لگانی چائیے؟

    جیمز گیلاگر، نامہ نگار برائے ہیلتھ اور سائنس

    vaccine

    پولیو، چیچک، روٹرا وائرس اور کھانسی سمیت متعدد بیماریوں سے بچاؤ کے لیے بچوں کو دنیا بھر میں ویکسین دینا ایک معمول کی بات ہے۔ ابھی یہ بچے چند ہفتوں کے ہوتے ہیں تو انھیں اس طرح کی ویکسین دی جاتی ہے۔

    تو کیا کورونا وائرس کی ویکسین بھی بچوں کو لگانی چائیے؟

    کچھ ممالک تو ایسا کر رہے ہیں۔ امریکہ نے چھ لاکھ سے زائد بچوں کو ویکسین لگائی ہے۔ ان بچوں کی عمریں 12 سے 15 برس کے درمیان تھیں۔ امریکی ماہرین کو یہ امید ہے کہ وہ اس سے بھی کم عمر کے بچوں کے لیے اگلے سال تک ویکسین کو محفوظ بنا سکیں گے۔

    children

    برطانیہ نے ابھی تک بچوں کی ویکسینیشن کا عمل شروع نہیں کیا ہے۔

    یہ ایک سائنسی سوال ہے کہ کیا ویکسینیشن سے بچوں کی زندگی کو محفوظ بنایا جا سکتا ہے؟ یہ ایک پیچیدہ سوال ہے جس کا جواب ہر ملک کے تناظر میں ہی ڈھونڈا جا سکتا ہے۔ تاہم اس کا اخلاقی پہلو یہ بھی ہو گا کہ اگر بچوں کے لیے مختص ویکسین ہیلتھ ورکز اور دیگر کمزور افراد کو لگا دی جائے اور اس سے زیادہ زندگیاں محفوظ بنائی جائیں۔

    بچوں کو کورونا وائرس کے خلاف ویکسین سے متعلق ایک بحث یہ بھی ہے کہ یہ ان کے لیے اتنی مفید نہیں ہے۔

    کورونا وائرس

    برطانیہ کی ویکسینیشن پر جوائنٹ کمیٹی میں شامل پروفیسر ایڈم فِن نے کہا ہے کہ کچھ چیزوں کے ساتھ یہ بھی ایک خوش قسمتی ہے کہ یہ اس وبا سے بہت کم ہی بچے متاثر ہوئے ہیں۔

    ان کے مطابق بچوں میں اس وبا کی علامات یا تو بہت ہی کم یا بالکل بھی ظاہر نہیں ہوتی ہیں۔

    لینسیٹ میگزین میں شائع ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق اس وبا کے دوران ایک ملین افراد میں سے دو سے بھی کم بچے مرے ہیں۔

  8. برطانیہ میں بھی 32 اور 33 سال والے افراد بھی ویکسین کے اہل

    ویکسین

    برطانیہ نے 32 اور 33 برس کے افراد کو بھی ویکسینیشن کے لیے رجسٹر ہونے کے بارے میں کہا ہے۔

    برطانیہ کے نیشنل ہیلتھ سروس کا کہنا ہے کہ سنیچر سے یہ افراد اپنی رجسٹریشن کرانے کے اہل ہو جائیں گے۔

    33 برس کے افراد کو سنیچر کو جبکہ 32 برس والوں کو پیر کو ویکسینیشن سے متعلق ٹیکسٹ میسج پر مدعو کیا جائے گا۔

    برطانیہ میں 37.5 ملین سے زائد افراد نے ویکسین کی پہلی خوراک لے لی ہے جبکہ 21.6 ملین افراد کو اس ویکسین کی دونوں خوراکیں مل چکی ہیں۔

    سکاٹ لینڈ میں 30 اور اس سے زائد عمر کے افراد ویکسینیشن کے اہل ہیں جبکہ ویلز میں 18 برس سے زائد افراد بھی ویکسین کے اہل ہیں۔

  9. انڈیا: ایک دن میں چار ہزار سے زائد اموات، ڈھائی لاکھ سے زیادہ نئے متاثرین

    انڈیا

    انڈیا کی وزارت صحت کے مطابق کورونا وائرس سے گذشتہ 24 گھنٹوں میں ملک میں 4194 لوگ ہلاک ہوئے جبکہ دو لاکھ 57 ہزار اور 299 نئے متاثرین سامنے آئے ہیں۔

    انڈیا میں کورونا وائرس سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد دو لاکھ 95 ہزار 525 بنتی ہے۔ یہ تعداد امریکہ کے بعد دنیا بھر میں سب سے زیادہ ہے۔

    انڈیا کی وزارت صحت کے مطابق اس وقت ملک میں کورونا وائرس کے متاثرین کی فعال تعداد 30 لاکھ ہے۔

    View more on twitter
  10. کووڈ 19: لوگ ویکسین کیوں نہیں لگواتے؟

    کیا کورونا کی ویکسین لگوانے میں آپ کو کوئی ہچکچاہٹ ہے؟

    پاکستان کی لیڈی ہیلتھ ورکرز گھر گھر جا کر کورونا ویکسین سے متعلق لوگوں کے خدشات دور کرنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

    View more on youtube
  11. کیلیفورنیا میں ’جون کے وسط سے قریب تمام سختیاں ختم ہوسکتی ہیں‘

    کیلیفورنیا

    کیلیفورنیا کے محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ اس امریکی ریاست میں 15 جون سے عالمی وبا سے بچاؤ کے تحت لگائی گئی قریب تمام سختیوں کو ختم کیا جاسکتا ہے۔

    خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق انھوں نے بتایا ہے کہ جن لوگوں نے ویکسین حاصل کر لی ہے ان کے لیے ایک جگہ جمع ہونے پر پابندی یا سماجی فاصلہ جیسی شرائط لازم نہیں ہوں گی۔

    امریکی کی اس سب سے گنجان آباد ریاست میں کووڈ 19 کے پھیلاؤ کے دوران کافی نقصان ہوا تھا۔ تاہم اب یہاں متاثرین کی شرح کافی کم ہے اور اس کی وجہ ویکسینیشن پروگرام کو سمجھا جا رہا ہے۔

    اعداد و شمار کے مطابق اس ریاست میں قریب تین کروڑ 55 لاکھ افراد کو ویکسین دی جاچکی ہے اور 60 فیصد سے زیادہ رہائشیوں کو کم از کم ایک خوراک مل چکی ہے۔

    قریب نصف آبادی (48 فیصد) کو مکمل طور پر ویکسین مل چکی ہے۔

  12. برازیل میں بھی کووڈ کی انڈین قسم کے پھیلاؤ کا خدشہ

    برازیل، کووڈ

    خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق برازیل میں وزارت صحت نے جمعے کو کہا ہے کہ حکومت کووڈ 19 کی انڈین قسم سے بچاؤ کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہی ہیں۔

    ملک میں حالیہ دنوں اس کی ایک شمالی ریاست میں انڈین قسم کے متاثرہ شخص کی تشخیص ہوئی ہے۔

    س ریاست کے محکمہ صحت کے حکام کے مطابق کارگو جہاز کے عملے کا ایک فرد جنوبی افریقہ سے برازیل واپس آیا تھا اور اس میں کووڈ 19 کی ایک قسم کی تشخیص ہوئی تھی جس کے بعد سے وہ ایک ہسپتال میں زیر علاج ہے۔

    انھوں بتایا کہ ’اس بارے میں جلد معلوم کر لیا گیا، حفاظتی اقدامات کیے گئے اور ہمیں امید ہے کہ برازیل میں انڈین قسم کا پھیلاؤ نہیں ہوگا۔‘

  13. پاکستان میں مزید 4007 متاثرین، 88 اموات

    پاکستان میں مزید 4007 متاثرین، 88 اموات

    پاکستان میں سرکاری اعداد و شمار کے مطابق 21 مئی کو کووڈ 19 کے 4007 مزید متاثرین کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ اس عالمی وبا سے 88 اموات ہوئی ہیں۔

    ملک میں مجموعی طور پر کورونا کے متاثرین کی تعداد 897,468 ہے اور اس سے کل 20177 اموات ہوئی ہیں۔

    پاکستان میں عالمی وبا کے فعال کیسز کی تعداد اس وقت 63,436 ہے جبکہ 813,855 افراد اس سے صحتیاب ہوئے ہیں۔

    آبادی کے 5,151,043 افراد کو ویکسین دی جاچکی ہے۔

  14. انڈیا میں اینٹی فنگس ادویات کی قلت

    انڈیا میں اینٹی فنگس ادویات کی قلت

    انڈیا میں کووڈ کے مریضوں میں بلیک فنگس انفیکشن کے کیسز بڑھنے کے بعد اینٹی فنگس ادویات کی قلت کا سامنا ہے۔

    جمعے کو انڈیا میں حکام کا کہنا تھا کہ وہ بلیک فنگس سے متاثرہ کووڈ مریضوں کے لیے اینٹی فنگس ادویات کی قلت سے نمٹنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

    مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق 19 مئی تک بلیک فنگس کے کم از کم 7250 متاثرین سامنے آئے ہیں۔

    وزیر اعظم نریندر مودی نے ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ ’اب اس جنگ میں ہمارا مقابلہ بلیک فنگس سے ہے جو ان دنوں رونما ہوا ہے۔‘

  15. کورونا ویکسین اب اسلام آباد کے ایف نائن پارک میں بھی

    پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے F-9 پارک میں ماس ویکسینیشن سینٹر کے قیام کا مقصد عوام کے لیے ویکسین لگوانے کے عمل کو آسان بنانا ہے۔ یہاں جسمانی طور پر معذور افراد کے لیے خصوصی کاؤنٹرز بھی ہیں۔

    مزید دیکھیے ہمارے ساتھی محمد ابراہیم کی اس ویڈیو میں۔

    View more on youtube
  16. پاکستان میں 30 سے 40 سال عمر کے افراد کی ویکسینیشن آج سے شروع

    View more on twitter

    پاکستان میں کورونا وائرس کی روک تھام کے لیے قائم این سی او سی نے کہا ہے کہ ملک میں 30 سے 40 سال عمر کے افراد کو ویکسین دینے کی مہم آج سے شروع ہوگی۔

  17. Post update

    بی بی سی اردو سروس کی کورونا وائرس کے حوالے سے لائیو کوریج میں خوش آمدید۔

    اس پیج پر آپ پاکستان سمیت دنیا بھر سے کورونا وائرس سے متعلق خبریں دیکھ سکیں گے۔

    گذشتہ روز دنیا بھر میں کورونا وائرس کے حوالے سے اہم خبریں جاننے کے لیے اس لنک پر کلک کریں۔