BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 09 September, 2005, 20:06 GMT 01:06 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
ڈاکٹر شازیہ کا پہلا ویڈیو انٹرویو
 

 
 

ڈاکٹر شازیہ ریپ کیس کئی ماہ تک پاکستانی اورعالمی میڈیا کی شہ سرخیوں میں رہا۔ یہ کیس پاکستانی فوج اور بلوچ قوم پرستوں کے درمیان ہونے والے تنازعے کا بھی مرکز رہا جس میں کئی افراد ہلاک بھی ہوئے اور یہ معاملہ ابھی مکمل طور پر حل نہیں ہوا۔

لیکن بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ہمیشہ ادھوری ہی بتائی گئی۔ ان سے پہلے ایسی زیادتی کا شکار ہونے والی بہت سے عورتوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ خالد کی کہانی بھی اس سارے معاملے میں کہیں دب سی گئی۔ انہیں بھی دوسری عورتوں کی طرح ابھی تک انصاف نہیں ملا لیکن انہوں نے بھی بہت سی دوسری عورتوں کی طرح انصاف کے حصول کے لئے ہمت نہیں ہاری۔ اور انہیں بظاہر اپنے آپ کو ’مزید شرمندگی‘ سے بچنے کے لئے ملک چھوڑنا پڑا۔

خواتین کے حقوق کی علمبردار تنظیموں کی طرف سے بیانات آتے رہے اور میڈیا میں اس کیس کی کوریج اس وقت تک جاری رہی جب تک ڈاکٹر شازیہ پاکستان میں رہیں۔

ڈاکٹر شازیہ کے ملک چھوڑنے کے بعد پاکستانی میڈیا سے تو ان کی ’سٹوری‘ غائب ہوگئی لیکن شائد خود ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر کو ہر روز اس اذیت سے گزرنا پڑتا ہے جس کا وہ شکار ہوئے۔

ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر نے اس پہلے خصوصی وڈیو انٹرویو میں پہلی مرتبہ اس پورے واقعے اور اس کے بعد پیدا ہونے والے حالات کا تفصیل سے ذکر کیا ہے۔

ڈاکٹر شازیہ کی کہانی ایسی دیگر کہانیوں سے مختلف نہیں۔ ایک عورت زیادتی کا نشانہ بنی جسے انصاف کی تلاش ہے اور اسے زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو مبینہ طور پر تحفظ دیا جارہا ہے اور ریاست اپنے ہی عمل کی بد صورتی کو چھپانے میں مصروف ہے۔

لندن میں پناہ حاصل کرنے کے دیگر خواہشمندوں کی طرح ڈاکٹر شازیہ اور ان کے شوہر ایک غریب علاقے میں ایک بہت ہی چھوٹے سے گھر میں رہتے ہیں۔ ان کی کل آمدنی برطانوی سرکار سے پناہ گزینوں کو ملنے والی تیس پاؤنڈ فی ہفتہ کی رقم ہے کیونکہ وہ اس وقت تک کام نہیں کرسکتے جب تک ان کی پناہ کی درخواست منظور نہ ہوجائے۔

’بے روز اور بے مددگار ہوگئے ہیں ہم ، جلا وطن ہوگئے ہیں، میں کبھی سوچ بھی نہیں سکتی تھی کہ میرے ساتھ بھی یہ ہوسکتا ہے۔‘

مارچ میں ڈاکٹر شازیہ کے برطانیہ آنے کے بعد سے ان کے مطابق حکومت پاکستان نے ان سے بالکل کوئی رابطہ نہیں کیا اور کسی قسم کی کوئی مدد نہیں کی۔

ڈاکٹر شازیہ اب ہر ہفتے تھیریپی کے لئے کلینک جاتی ہیں جس سے ان کے مطابق انہیں بہت فائدہ ہورہا ہے۔

’victim سے survivor بنی ہوں میں۔ مگر ظاہر ہے ابھی بھی سوچتی ہوں کہ یہ میں ہوں؟ جو میں آپ سے بول رہی ہوں مجھے اچھا تو نہیں لگ رہا مگر کیا کروں؟ ابھی ٹھیک ہونے میں بہت وقت لگے گا میرے زخم اتنے گہرے جو ہیں۔‘

جب میں ان کے گھر سے واپس جارہی تھی تو ڈاکٹر شازیہ کے شوہر نے مجھ سے کہا ’آپ کتنی خوش قسمت ہیں۔ کل پاکستان واپس جارہی ہیں۔‘

بلوچستان کے علاقے سوئی میں مبینہ زیادتی کا شکار ہونے والی ڈاکٹر شازیہ خالد کا یہ پہلا تفصیلی وڈیو انٹرویو صحافی منیزے جہانگیر نے خصوصی طور پر بی بی سی اردو ڈاٹ کام کے لیے کیا ہے۔

 
 
66’فوج نے کہاچلی جاؤ‘
ملک چھوڑنے پر فوج نے مجبور کیا: ڈاکٹر شازیہ
 
 
66میری رائے: عورت
کب تک محکوم عورتوں سے زیادتی کریں گے؟
 
 
اسی بارے میں
 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد