آخری وقت اشاعت:  بدھ 6 اکتوبر 2010 ,‭ 16:40 GMT 21:40 PST

سعودی شہزادہ برطانوی عدالت میں

میڈیا پلئیر

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

ونڈوز میڈیا یا ریئل پلیئر میں دیکھیں/سنیں

برطانیہ میں ایک سعودی شہزادے کے خلاف مقدمے کی سماعت شروع ہوگئی ہے۔ سعودی شہزادے سعود عبد العزیز بن ناصر السعود پر الزام ہے کہ انہوں نے اپنے ملازم بندر عبد العزیز کو ہلاک کیاہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ایسے شواہد ہیں کہ شہزادے کے اپنے ملازم کے ساتھ جنسی روابط تھے اور وہ دونوں ایک ہی کمرے میں ٹہرتے تھے۔

پولیس نے ایک ایسی ویڈیو بھی عدالت میں پیش کی ہے جس میں شہزادہ سعود عبد العزیز بن ناصر السعود اپنے ملازم کو لندن کے ہوٹل کی لفٹ میں بندر بن عبد العزیز کو پیٹتے ہوئے نظر آتے ہیں۔

پولیس کے مطابق بندر بن عبد العزیز کی لاش کو ہوٹل کے کمرہ سے برآمد کیا تھا۔ پولیس کے مطابق بندر عبد العزیز کے جسم خصوصاً ان کےگالوں، ہونٹوں، کانوں اور بائیں آنکھ کے نیچے کاٹنے کے نشانات ہیں اور پولیس کا خیال ہے کہ اس قتل کے جنسی محرکات ہیں۔

سعودی شہزادے کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ان مؤکل ہم جنس پرست نہیں ہیں۔

[an error occurred while processing this directive]

BBC navigation

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔