اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

افسانہ نگار تقسیم کو درست نہیں سمجھتے: بھلا

ڈاکٹر الوک بھلا اب دہلی میں رہتے ہیں۔ ان کے والد نے لاہور سے تعلیم حاصل کی اور ایک سال تدریس کے بعد ملازمت پر دہلی چلے گئے۔ ان کے دادا لاہور میں ہیڈ ماسٹر آف سکولز تھے۔ انہوں انڈیا، کینیڈا اور پھر امریکہ میں تعلیم حاصل کی اور پھر امریکہ اور انڈیا میں انگریزی کی تدریس کرتے رہے۔ کچھ عرصہ قبل انہوں نے انگریزی میں چار جلدوں پر مشتمل ایک ایسی انتھولوجی مرتب کی ہے جس میں برصغیر کی تمام زبانوں میں تقسیم کے بارے میں لکھی جانے والی کہانیاں جمع کی گئی ہیں۔ کہانیوں کے اس انتخاب میں انگریزی، اردو، ہندی، سندھی، پنجابی، بنگالی اور دوسری زبانوں کی ایک سو سے زائد کہانیاں شامل ہیں۔ یہ انتھالوجی انہوں نے کیوں مرتب کی اور اس دوران انہیں کیا کیا دشواریاں اٹھانا پڑیں اور ان کہانیوں کو پڑھتے ہوئے انہیں کیا محسوس ہوا؟