مصنوعی سیارے سے لی گئی تصاویر

آخری وقت اشاعت:  پير 8 اکتوبر 2012 ,‭ 05:06 GMT 10:06 PST

خلائی آنکھ

  • برازیل میں سیلاب
  • امریکی ریاست واشنگٹن میں دریائے کولمبیا کے کنارے کھیت
  • دریائے سندھ میں سیلاب سے وسیع علاقہ زیرِ آب آ گیا
  • روسی علاقے دُل درگا کے جنگلوں میں بھڑکتی ہوئی آگ
  • دریائے سندھ میں سیلاب سے وسیع علاقہ زیرِ آب آ گیا
  • نائجیریا میں آگ
  • سمندری طوفان کیٹرینا کے بعد امریکی شہر نیواورلینز
  • نمیبیا میں آگ
  • میکیسکو میں آگ کے بعد دھویں کے بادل
  • موریطانیہ کے صحرا میں پائی جانے والی عجیب و غریب شکل جسے ’دنیا کی آنکھ‘ کہا جاتا ہے
  • دریائے ٹیمز کے کنارے بسا ہوا لندن
  • برطانیہ کی لنکاشائر کاؤنٹی میں آگ
  • امریکی ریاست کینٹکی میں سیلاب سے دریا جھیلیں بن گئے
  • جاپان میں سونامی کے بعد تیل صاف کرنے کے کارخانے میں لگنے والی آگ۔ دائیں طرف سیاہ دھویں کے مرغولے دیکھے جا سکتے ہیں
  • ہنگری میں ایک فیکٹری سے خارج ہونے والا مضر کیمیائی مواد
  • گرین لینڈ میں پیٹرمین گلیشئیر جو تیزی سے کھسک رہا ہے
  • یونان میں آگ
  • شمالی آسٹریلیا کا شہر ڈارون
  • کینیڈا میں ریٹل سنیک جھیل
  • کیلی فورنیا میں جنگل کی آگ
  • برازیل میں جنگلات کا خاتمہ

چاہے سمندری طوفان ہوں یا سونامی، قدرتی آفات اور انسان کے ہاتھوں لائی ہوئی تباہ کاریوں کے بعد مصنوعی سیارے سے لی گئی تصاویر لوگوں کی زندگیاں بچانے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ ان تصاویر کی مدد سے خطرے سے دوچار لوگوں اور مقامات کی نشان دہی کی جاتی ہے۔

انیس سو ننانوے میں ’ڈزاسٹر چارٹر‘ نامی ادارے کے قیام سے خلائی ایجنسیوں کے درمیان معلومات کے تبادلے کے لیے ایک باضابطہ نظام وضع کیا گیا۔ چارٹر نے اس کے بعد سے اب تک ایک سو سے زائد ممالک میں تین سو سے زیادہ تباہ کاریوں کی تصاویر فراہم کی ہیں۔

یہ تصاویر عالمی خلائی ہفتہ 2012 کے سلسلے میں پیش کی جا رہی ہیں۔ انھیں زمین سے سینکڑوں میل کی بلندی سے لیا گیا تھا اور ان کی مدد سے بہت سی زندگیاں بچا جا چکی ہیں۔

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔