دنیا کی قدیم ترین بیسٹ سیلر

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 26 اکتوبر 2012 ,‭ 21:29 GMT 02:29 PST
  • آئٹنریری
    بھارت کے دارالحکومت دلی کے نیشنل آرکائیوز میں ان دنوں سولہویں صدی میں لکھی ایک کتاب کی نمائش جاری ہے جسے بھارت پر پہلی کتاب کہا جا رہا ہے۔ (تمام تصویریں اطالوی ثقافتی مرکز اور بھارت کے نیشنل آرکائیوز کے شکریہ کے ساتھ)
  • آئٹنریری
    اس کتاب کو پندرہ سو دو سے پندرہ سو آٹھ کے درمیان اٹلی سے ہندوستان آنے والے سیاح لوڈوویکو ڈے ورتھیما نے اپنے سفر کے بعد لکھا۔ سب سے پہلے یہ کتاب سنہ پندرہ سو دس میں سفرناموں کے ایک پروگرام کے تحت شائع ہوئی۔ یہ اس کتاب کا پہلا صفحہ ہے جو پندرہ سو پینتیس میں شائع ہوا تھا۔
  • آئٹنریری
    یہ کتاب رنگ برنگی تصویروں سے سجی تھی جس سے اس زمانے کے ہندوستانی سماج کے رہن سہن کی جھلک ملتی ہے۔ تصویر میں ایک کرناٹک کی شادی کو دکھایا گیا ہے۔ اس کتاب کا نام آئٹینریری رکھا گیا تھا۔
  • آئٹنریری
    ڈے ورتھیما نے ہندوستان کی سیر اپنی تفریح کے لیے کی تھی۔ اس کا مقصد نہ تجارت تھا اور نہ سفارت۔ اس تصویر میں اس رسم کو دکھایا گیا ہے جس میں شوہر کے انتقال پر اس کے ساتھ بیوی کو جلا دیا جاتا تھا جسے ستی کہا جاتا تھا۔
  • آئٹنریری
    یہ کتاب اپنی اشاعت کے بعد اس قدر مقبول ہوئی کہ اس کا پچاس زبانوں میں ترجمہ کیا گیا۔ یہ کیمبے یعنی آج کے کیرالہ کا منظر ہے جس میں ایک کسان کو بیج بوتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔
  • آئٹنریری
    اس کتاب کی صرف دو اصلی کاپیاں موجود ہیں ایک روم میں اور ایک البانیا میں۔ یہ تصویر کیرالہ کے ایک گھاٹ کی ہے جس میں خواتین کو نہاتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔
  • آئٹنریری
    نیشنل آرکائیوز میں اس کتاب کی فوٹو کاپی موجود ہے۔ یہ کتاب اٹلی کی جانب سے بھارت کو دی گئی تھی۔ یہ تصویر کرناٹک کے کسانوں کی ہے جو اناج کو اپنے جانوروں (خچروں) پر لاد کر جارہے ہیں۔
  • آئٹنریری
    ڈے ورتھیما نے بھارت کے ساحلی علاقے کا بے حد دلکش انداز میں تصویر کے ساتھ ذکر کیا ہے۔ اس میں کیرالہ کے خوشحال تاجروں کی بیویاں نظر آ رہی ہیں۔
  • آئٹنریری
    ڈے ورتھیما نے کیرالہ کے کیمبے علاقے کے راجا کی کئی تصویریں بنائی ہیں اور ان کی شان و شوکت کی جھلک اپنے ملک کے لوگوں کے سامنے پیش کی ہے۔
  • آئٹنریری
    اس کتاب میں بھارت کے لوگوں کو پاگن یعنی مشرک کہا ہے شاید اسکا سبب یہ ہے کہ یہان کے لوگ مختلف دیوی دیوتاؤں کی پوجا کرتے ہیں۔ اس تصویر میں نظر آ رہے ہیں جنوبی ہند کے وہ لوگ جنہیں آج نایر کہا جاتا ہے۔
  • آئٹنریری
    ایک سادھو کی یہ تصویر بناتے ہوئے لکھا ہے کہ یہ سادھوؤں کی جانب سے ایشور کو دی جانے والی سب سے بڑی قربانی ہے، یعنی جان کی قربانی۔
  • آئٹنریری
    کیمبے کے علاقے کے ایک صراف کی یہ تصویر بھی ان تمام تصاویر کا حصہ ہے جس کے بغیر ڈے ورتھیما کے لیے ہندوستان کی کہانی کہنا انتہائی مشکل ہوتا۔

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔