سیربین کا پہلا حصہ

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 9 مارچ 2013 ,‭ 20:49 GMT 01:49 PST

میڈیا پلئیر

بی بی سی اردو کے ٹی وی پروگرام سیربین کا پہلا حصہ۔ یہ پروگرام جمعہ 8 مارچ کو ایکسپریس نیوز پر نشر کیا گیا۔

دیکھئیےmp4

اس مواد کو دیکھنے/سننے کے لیے جاوا سکرپٹ آن اور تازہ ترین فلیش پلیئر نصب ہونا چاہئیے

متبادل میڈیا پلیئر چلائیں

سرکاري اعدادوشمار کے مطابق پاکستان کے قبائلی علاقوں اور صوبہ خیبر پختون خوا میں پچھلے چھ سال کے دوران تیرہ سو سے زيادہ سرکاری سکولوں کو بم دھماکوں سے اڑا ديا گيا۔

تازہ ترين اعدادوشمار طالبان کے اس دعوے کي نفي کرتے ہيں کہ اس معاملے پر ان کا مؤقف نرم ہوا ہے۔ گزشتہ روز بھي صوبہ خيبر پختون خواہ ميں دو سکول تباہ کيے گئے۔ پشاور سے نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کی رپورٹ

طالبان کہتے ہيں کہ اپنے زيرکنٹرول علاقوں ميں وہ اپنے نصاب کے مطابق تعليم ديتے ہيں۔ اب سے تھوڑي دير پہلے پشاور ميں نامہ نگار دلاور خان وزير سے گفتگو کے دوران طالبان کے ترجمان احسان اللہ احسان نے کہا کہ ان سکولوں ميں مغربي تعليم اور ثقافت کو فروغ ديا جاتا ہے، جس کي وجہ سے وہ اِنہيں نشانہ بناتے ہيں۔

چھ برسوں ميں تيرہ سو سکولوں کي تباہي۔ تو کيا بچوں کي تعليم تک رسائي يقيني بنانا حکومت کي ذمہ داري نہيں؟ ہم نےکچھ دير پہلے خيبر پختون خواہ کے وزير تعليم سردار حسين بابک سے پوچھا کہ اب تو ان حملوں سے دارالحکومت پشاور بھي محفوظ نہيں، حکومت ان حملوں کو روکنے ميں ناکام کيوں ہے؟

ملٹی میڈیا

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔