دنیا کے بیس مطلوب ترین پیشے

آخری وقت اشاعت:  جمعرات 4 اپريل 2013 ,‭ 13:24 GMT 18:24 PST

دنیا بھر میں ایسے کئی پیشے ہیں جن کی بہت زیادہ طلب ہے۔ وہ کون سے پیشہ ور افراد ہیں جن کی دنیا میں طلب ہے اور وہ کون سے ملک ہیں جہاں ان کی طلب ہے؟ نیچے دی گئی ہماری انٹریکٹیو گائیڈ استعمال کریں اور خود پتہ چلائیں۔ ایک پیشے کو منتخب کریں جس کے نتیجے میں ایسے ممالک سامنے آئیں گے جن میں ایسے پیشہ ور افراد کی طلب ہے۔ اپنے دوستوں کے ساتھ اس کے نتائج ضرور شیئر کریں۔

دنیا میں مطلوب ترن بیس پیشے

دنیا بھر میں ایسے کئی پیشے ہیںجن کی بہت زیادہ طلب ہے۔ وہ کون سے پیشہ ور افراد ہیں جن کی دنیا میں طلب ہے اور وہکون سے ملک ہیں جہاں ان کی طلب ہے؟نیچے دی گئی ہماری انٹریکٹیوگائیڈ استعمال کریں اور خود پتہ چلائیں۔ ایک پیشے کو منتخب کریں جس کے نتیجے میںایسے ممالک سامنے آئیں گے جن میں ایسے پیشہ ور افراد کی طلب ہے۔ اپنے دوستوں کے ساتھ اس کے تنائجضرور شیئر کریں۔

کوئی ایک پیشہ منتخب کریں

نرسیں

گزشتہ دس برس میں متعدد ممالک میں نرسوں کی طلب میں اضافہ ہوا ہے

آسٹریلیا میں نرسوں کی مانگ بہت زیادہ ہے، خاص طور پر ذہنی صحت اور سرجری میں کام کرنے والی نرسوں کی۔ابتدائی تنخواہ سالانہ 57،876 امریکی ڈالر ہے.

آسٹریا کی سرکاری فہرست کے مطابق 2013 میں یہاں 14 قسم کی نرسوں کی ضرورت ہے

بیلجیم میں بزرگ افراد کے علاج، فوری طبی امداد اور ہنگامی حالات میں کام کرنے والی نرسوں کی مانگ سب سے زیادہ ہے.

جرمنی کے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق بزرگ افراد کے علاج میں مدد کرنے والے تربیت یافتہ ہر ایک نرس کے لئے یہاں تین عہدے خالی ہیں.

برطانیہ میں نومولود بچوں کی دیکھ بھال اور آپریشن تھیٹر میں کام کرنے والی نرسوں کی ضرورت ہے.

امریکہ میں فلوریڈا اور کیلیفورنیا میں نرسوں کی کمی ہے۔ یہاں نرس کی اوسط تنخواہ 69110 امریکی ڈالر سالانہ ہے

دنیا کے کم از کم بیس ممالک میں نرسوں کی طلب ہے۔ آپ اپنے پیشے کے بارے میں جانیں۔

مکینیکل انجینئرز

مکینیکل انجینئرز کی طلب اٹھارہ ممالک میں ہے خصوصاً کاروں کی تیاری اور ایروسپیس کے شعبہ جات میں

آسٹریا کی فہرست کے مطابق 23 طرح کے میكینكل انجینئر اور ٹیکنیشنز کی ضرورت ہے. ان میں سے کچھ کی ضرورت کاروں کی صنعت جبکہ باقی کی حرارتی، وینٹیلیشن اور ائركنڈيشنگ کے کاموں کے لیے ہے.

جرمنی میں کاروں کی صنعت میں انجینیئرز درکار ہیں

سنگاپور میں میكینیكل انجینئر گریجویٹس کی ضرورت ہے، خاص طور پر آٹومیشن سیکٹر میں۔ اس شعبے میں ابتدائی تنخواہ سالانہ 31،200 امریکی ڈالر ہے

اگرچہ سپین میں بے روزگاری کی شرح بہت زیادہ ہے، اس کے باوجود اس کے یہاں مكینیكل انجینئروں کی مانگ باقی کے مقابلے میں بہتر ہے.

برطانیہ ایروسپیس سیکٹر میں مكینیكل انجینئروں کی مانگ ہے. اوسطا تمام نئے گریجویٹس کو سالانہ 36،850 امریکی ڈالر تنخواہ مل سکتی ہے

مکینیکل انجینیئرز ان پیشوں میں سے ہے جن کی دنیا میں طلب سب سے زیادہ ہے۔ دیگر کے بارے میں جانیے!

ڈاکٹرز

دنیا کے کم از کم اٹھارہ ممالک میں عام اور ماہر ڈاکٹروں کی طلب ہے۔

آسٹریلیا میں اینستھیزیا، گیسٹرونٹیرولوجسٹ اور نیوروسرجنز ان تیس ماہر ڈاکٹروں میں شامل ہیں جن کی اشد ضرورت ہے

جرمنی میں پانچ ہزار ڈاکٹروں کی ضرورت ہے. اس پیشے کو ملک میں سب سے اچھی تنخواہیں یعنی اوسطا سالانہ تنخواہ 63،741 امریکی ڈالر ملتی ہے

نیوزی لینڈ میں عام ڈاکٹروں کے علاوہ کم از کم دس طرح کے ماہر ڈاکٹروں کی ضرورت ہے، جن میں سرجن اور اینستھیزیا کے ماہر بھی شامل ہیں.

برطانیہ میں سات طرح کے ماہر ڈاکٹروں کی ضرورت ہے جن میں بچوں کے امراض کے ماہر اور ماہرینِ امراضِ زچہ و بچہ شامل ہیں. اس کے علاوہ کنسلٹنٹ کے طور پر خون کے ماہر ڈاکٹر اور فورینسک سائکیٹری کے ماہرین کی بھی ضرورت ہے.

دنیا کے کم از کم اٹھارہ ممالک میں ایک ڈاکٹر کو کام مل سکتا ہے۔ دیگر کے بارے میں جانیں۔

الیکٹریکل انجینیئر

الیکٹریکل انجینئرز کی طلب خصوصاً توانائی اور تعمیراتی شعبوں میں زیادہ ہے

آسٹریا میں توانائی اور تعمیر کے شعبوں میں انجینئر اور ٹیکنیشنز کی ضرورت ہے۔ ان کے علاوہ کاروں کی صنعت میں بھی انجینئر اور تکنیکی ماہرین درکار ہیں

ہنگری میں طویل عرصے سے انسانی وسائل کی کمی کی وجہ سے جن 10 پیشوں کے ماہرین کی سب سے زیادہ مانگ ان الیكٹریكل انجینئرنگ سب سے اوپر ہے.

سنگاپور کے کیمیکل اور بايومیڈیكل صنعتی یونٹوں میں الیكٹركل انجینئروں کی کافی مانگ ہے. اس کے علاوہ ایرو سپیس اور میرین سیکٹر میں بھی انجینئروں کی کافی مانگ ہے.

برطانیہ میں تیل اور گیس سیکٹر کے علاوہ توانائی کی تقسیم کے شعبوں میں بھی الیكٹركل انجینئروں کی ضرورت ہے۔ کالج سے نکلے تازہ گریجویٹس کو اوسطا سالانہ 36،850 امریکی ڈالر کی تنخواہ مل جاتی ہے.

دنیا کے کم از کم اٹھارہ ممالک میں الیکٹریکل انجینیئرز کو کام مل سکتا ہے۔ آپ کے پیشے کی کیا صورتحال ہے؟

انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہر اور پروگرامر

یہ افراد تحقیق کرتے ہیں اور کمپیوٹر پروگراموں، سافٹ ویئرز، ایپلیکیشنز اور ویب سائٹ کے کوڈ تحریر کرتے ہیں

آسٹریا میں ویب، سافٹ ویئر اور ملٹی میڈیا پروگرامنگ اور ڈویلپمنٹ سے متعلق کم سے کم 15 شعبوں میں پیشہ ور افراد کی کمی ہے.

نیوزی لینڈ کی سرکاری فہرست کے مطابق یہاں کم سے نو الگ الگ طرح کے ویب ڈویلپرز اور ڈیزائنرز کی ضرورت ہے.

سنگاپور میں کئی طرح کے خاص کر کمپیوٹر گیمنگ تیار کرنے کے لیے ڈویلپرز کی ضرورت ہے.

سافٹ ویئر ڈویلپرز اور گرافک پروگرامرز کی برطانیہ میں ضرورت ہے. اس کام کے عوض اوسطا سالانہ 31 ہزار امریکی ڈالر تنخواہ مل سکتی ہے.

دنیا کے کم از کم اٹھارہ ممالک میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہر کو کام مل سکتا ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیں۔

انفارمیشن ٹیکنالوجی انجینیئر اور تجزیہ کار

سسٹم انجینیئرز اور سسٹم اینالسٹس کی مانگ خصوصاً ان ممالک میں ہے جہاں آئی ٹی پروفیشنلز کی ضرورت ہے۔ ٹیلی کام انجینیئرز بھی اسی زمرے میں آتے ہیں

آسٹریا میں نو مختلف قسم کے آئی ٹی انجینیئر اور اینالسٹ کی مانگ ہے

سرکاری سروے کے مطابق لكسمبرگ میں آئی ٹی پیشہ ور افراد کے لیے ملازمتوں کی تعداد 2010 سے 2012 کے درمیان دوگنی ہو چکی ہے.

نیوزی لینڈ میں سرکاری طور پر آئی ٹی سے متعلق 12 طرح کے پیشہ ور افراد کی کمی بتائی جا رہی ہے. پانچ سال کے تجربے کے حامل سسٹم اینالسٹ کو اوسطا سالانہ 61،699 امریکی ڈالر تنخواہ مل سکتی ہے.

برطانیہ میں ایک سسٹم انجینیئر کی تنخواہ 41800 پاؤنڈ سالانہ ہے

دنیا کے کم از کم اٹھارہ ممالک میں انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہرین اور تجزیہ کاروں کی طلب ہے۔ اپنے پیشے کے بارے میں جانیں

سول انجینیئرز

سول انجینیئرز میں سے جیو ٹیکنیکل ماہرین کی طلب زیادہ ہے۔ دنیا کے جن سترہ ممالک میں سول انجینیئرز درکار ہیں ان میں سے آٹھ میں جیو ٹیکنیکل ماہرین کی طلب ہے۔

مستقبل میں کھیلوں کے مقابلوں کی وجہ سے تعمیرات میں تیزی سے غیر ملکی جیو ٹیکنیکل اور سول انجینیئرز ملک میں کام کے لیے آ رہے ہیں

جرمنی میں سول انجینیئرز کی تنخواہ 46000 سے 58000 امریکی ڈالر کے درمیان ہے

بھارتی حکام کے مطابق ملک میں تعمیراتی صنعت کو سالانہ ساٹھ لاکھ افراد درکار ہیں جن میں زیادہ طلب ٹیکنیشنز کی ہے

برطانیہ میں سول انجینیئرز کی تنخواہ 20800 سے 70000 پاؤنڈ سالانہ کے درمیان ہے

دنیا کے کم از کم سترہ ممالک میں سول انجینیئرز اور تکنیکی ماہرین کو کام مل سکتا ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیں۔

انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈیٹا بیس اینڈ نیٹ ورک پروفیشنلز

یہ افراد ڈیٹا بیس، نیٹ ورکس اور آپریٹنگ سسٹمز کی ڈیزائننگ، تیاری اور پھر دیکھ بھال کرتے ہیں

آسٹریا میں الیکٹرانک ڈیٹا پراسیسنگ کے ماہر کی طلب سب سے زیادہ ہے

نیوزی لینڈ میں ایک ڈیٹا بیس ایڈمنسٹریٹر 37000 سے 49000 ڈالر سالانہ کماتا ہے

ماسکو کے نزدیک واقع سکولکوو انوویشن سنٹر میں آئی ٹی مارین کی اشد ضرورت ہے اور ایسے افراد کو روس میں داخلے کے لیے بھی زیادہ مشکلات کا سامنا نہیں کرنا پڑتا

کم از کم تیرہ ممالک میں انفارمیشن ٹیکنالوجی ڈیٹا بیس اینڈ نیٹ ورک پروفیشنلز کی ضرورت ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیں

اکاؤنٹنٹ

وہ ممالک جہاں اکاؤنٹنٹس کی طلب ہے ان میں حالیہ معاشی بحران سے متاثر ہونے والے ملک جیسے کہ یونان اور آئرلینڈ شامل ہیں۔

یونان میں مالیاتی شعبے کے ماہرین کی اشد ضرورت ہے

معاشی بحران سے متاثر ہونے والے آئرلینڈ کو کاروباری تجزیہ کاروں، رسک اور ٹیکس کے ماہرین درکار ہیں

سنگاپور میں تین سے پانچ سال کے تجربے کا حامل اکاؤنٹنٹ 48757 سے 61000 ڈالر سالانہ کماتا ہے

اعلیٰ تعلیم یافتہ اکاؤنٹنٹس دنیا کے گیارہ ممالک میں نوکری حاصل کر سکتے ہیں۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

دانتوں کے ڈاکٹر

سیکنڈے نیویا کے تمام ممالک اور فن لینڈ میں دانتوں کے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور تجربہ کار ڈاکٹر درکار ہیں

بھارت کے منصوبہ بندی کمیشن کی 2012 کی رپورٹ کے مطابق ملک کے دیہی علاقوں میں موجود دانتوں کے ڈاکٹروں اور ان کی طلب میں اٹھاون فیصد کا فرق پایا جاتا ہے

سویڈن میں دانتوں کے ڈاکٹر کی سالانہ اوسط تنخواہ 78826 امریکی ڈالر ہے

ڈینٹسٹ وہ پیشہ ہے جس کی طلب دنیا میں بہت زیادہ ہے۔ آپ کے پیشے کی طلب کیسی ہے؟

فارماسسٹ

اعلیٰ تعلیم یافتہ فارماسٹس کی ضرورت ہسپتالوں اور ادویہ پر تحقیق کرننے والی صنعتوں میں ہے

نیوزی لینڈ میں ایک سے پانچ سال کے تجربے کے حامل فارماسسٹ کو 57579 سے 65810 امریکی ڈالر تنخواہ ملتی ہے

فارماسسٹس دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

صنعتی اور پیداواری انجینئرز

صنعتی اور پیداواری انجینئرز کسی صنعتی کارخانے کے کام کی نگرانی کے علاوہ تحقیق اور ڈیزائننگ بھی کرتے ہیں

سنگاپور کو ایروسپیس، میرین اور آف شور شعبوں میں پروڈکشن اور پراسیس انجینیئرز درکار ہیں

برطانیہ کو ایروسپیس کے شعبے میں پروڈکشن اور پراسیس انجینیئرز درکار ہیں

صنعتی اور پیداواری انجینئرز کو دنیا کے نو ممالک میں نوکری ملنے کے امکانات ہیں۔ آپ کے پیشے میں یہ امکانات کیسے ہیں؟

الیکٹرانکس انجینیئرز

الیکٹرانکس مصنوعات کی تیاری کی نگرانی اور ان کی ڈیزائننگ کے لیے دنیا کے آٹھ ممالک میں ماہرین کی ضرورت ہے

نیوزی لینڈ میں الیکٹرانکس انجینیئر کی ابتدائی تنخواہ 24696 امریکی ڈالر ہے جو تجربے کے ساتھ بڑھ کر 82327 ڈالر تک پہنچ سکتی ہے

الیکٹرانکس انجینیئرز دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

کیمیکل انجینیئرز

کیمیکل انجینیئرز کی طلب تیل، گیس اور پانی کی صفائی کے شعبہ جات میں ہے

نیوزی لینڈ میں ایک کیمیکل انجینیئر سالانہ 41000 سے 82000 امریکی ڈالر کماتا ہے

سنگاپور میں ایک کیمیکل انجینیئر کی سالانہ تنخواہ 28000 امریکی ڈالر ہے

کیمیکل انجینیئرز دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

مائننگ اور پیٹرولیم انجینئرز

معدنیات، تیل اور گیس نکالنے کے عمل سے وابستہ انجینیئرز کی طلب برازیل جیسے ترقی پذیر ممالک میں زیادہ ہے

برازیل میں کان کنی اور پیٹرولیم انجینیئرز کی طلب میں تیل کے نئے ذخائر کی دریافت کے بعد اضافہ ہوا ہے

برطانیہ نے کان کنی اور پیٹرولیم کے شعبوں میں دس مختلف اقسام کے انجینیئرز کو مطلوبہ شعبہ جات کی فہرست میں شامل کیا ہے

کان کنی اور پیٹرولیم کے شچبوں سے وابستہ انجینئرزدنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ہیں جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے

فزیوتھراپسٹ

صحت کے شعبے میں ماہر فزیوتھراپسٹس کی طلب بہت زیادہ ہے

آسٹریلیا میں ایک کلینکل تجربے کا حامل فزیوتھراپسٹ 59500 سے 83600 امریکی ڈالر سالانہ کما سکتا ہے

امریکی بیورو آف لیبر کے اعدادوشمار کے مطابق 2020 تک فزیوتھراپسٹس کے لیے نوکریوں میں انتالیس فیصد اضافہ ہوگا جو کہ دیگر شعبوں کی اوسط سے زائد ہے

فزیوتھراپسٹ دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

ماہرِ نفسیات

وہ تمام ممالک جہاں ماہرینِ نفسیات کی طلب ہے وہاں غیر ملکی ماہرین کے لیے کم از کم ایم اے تک کی تعلیم ضروری ہے

نیوزی لینڈ میں طبی اور تعلیمی میدان میں ماہرِ نفسیات کی مانگ ہے۔ تین سے دس سالہ تجربے کے حامل ماہرین کی آمدن عموماً 50400 سے 80200 ڈالر سالانہ ہے

سویڈن میں ماہرِ نفسیات سالانہ 60500 ڈالر کماتا ہے

ماہرِ نفسیات دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

ریڈیوگرافر

میڈیکل امیجنگ کے ماہر جیسے کہ ریڈیو گرافر کی طلب تجربہ گاہوں اور تشخیص کے عمل سے جڑے شعبوں میں بڑھ رپی ہے

برطانیہ میں ایک ریڈیوگرافر کی تنخواہ سالانہ 20710 پاؤنڈ ہے۔ ایک تھیراپیوٹک ریڈیوگرافر 44258 پاٰؤنڈ سالانہ کماتا ہے

ریڈیوگرافر دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

آڈیوگرافر اور سپیچ تھراپسٹ

آڈیولوجسٹ سننے، بولنے اور بات چیت میں درپیش مشکلات کا علاج کر سکتے ہیں

نیوزی لیڈ میں ایک آڈیولوجسٹ 37200 سے 91000 ڈالر سالانہ کماتا ہے جبکہ سپیچ تھراپسٹ کی آمدن 62000 ڈالر سالانہ ہے۔

دنیا کے کم از کم پانچ ممالک میں آڈیولوجسٹس اور سپیچ تھراپسٹس کو کام مل سکتا ہے۔ آپ کے پیشے کی صورتحال کیا ہے؟

خانساماں

دنیا میں کم از کم پانچ ممالک میں تجربہ کار شیف یا خانساماؤں کی ضرورت ہے جن کے پاس کم از کم پانچ برس کا تجربہ ہو۔

نیوزی لینڈ میں شیف سالانہ 1320 سے2233 امریکی ڈالر سالانہ کماتے ہیں۔

برطانیہ میں صرف سینیئر شیف درکار ہیں جن میں ایگزیکٹو شیف، ہیڈ شیف اور خصوصی کھانوں کے ماہر شیف شامل ہیں۔ ان افراد کو ریستورانوں میں نوکری ملنا ضروری ہے نہ کہ فاسٹ فوڈ کی دکانوں یا فرنچائز ریستورانوں میں۔

خانساماں دنیا کے بیس ایسے پیشوں میں سے ایک ہے جن کی عالمی طلب بہت زیادہ ہے۔ دیگر پیشوں کے بارے میں جانیے

آسٹریلیا

آسٹریلیا دنیا کے ان ممالک میں شامل ہے جہاں سب سے پہلے ہنرمند غیرملکیوں کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لیے پوائنٹس پر مبنی نظام اور پروگرام شروع ہوئے۔ حال ہی میں، آسٹریلیا کی حکومت نے غیر ملکی پیشہ ور افراد کے لئے کہیں زیادہ بہتر پالیسی اختیار کی ہے تاکہ اس سے ملک کے اندر الگ - الگ علاقے، خاص طور پر بڑے شہروں سے دور کے علاقوں میں پیشہ ور افراد کی کمی کو پورا کیا جا سکے۔ اسی وجہ سے آسٹریلیا نے ویزا درجہ بندیوں کی تعداد کو نصف کر دیا ہے. اس کے علاوہ پوائنٹس کی بنیاد پر نظام کو تبدیل کیا گیا ہے تاکہ ان پیشہ ور افراد کو موقع مل سکے، جو کہیں زیادہ ہنرمند اور تجربہ کار ہوں، جن کی انگریزی اچھی ہو اور ان کے پاس کہیں زیادہ قابلیت ہو.

US$ 44,983

آسٹریا

2004 میں یورپی یونین کے رکن ممالک کے درمیان بےروك ٹوک آمدورفت شروع ہونے کے بعد آسٹریا میں غیرمقیم لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ او اي سي ڈي کے مطابق مقامی لوگوں کے مقابلے میں غیر ملکیوں کے لیے کہیں زیادہ روزگار پیدا ہوا ہے۔ 2012 کے بعد آسٹریا نے انتہائی ہنرمند پیشہ ور افراد کے لیے پوائنٹس پر مبنی نظام قائم کیا ہے ۔ ان لوگوں کو دو طرح کے ویزا كارڈ دیے جاتے ہیں. ایک كارڈ آر ڈبلیو آر (ریڈ - وائٹ - ریڈ) كارڈ کہلاتا ہے. اس كارڈ کے ذریعے آپ ملک میں رہنے کا حق اور کسی خاص آجر کے ساتھ کام کرنے کا حق ملتا ہے جبکہ دوسرا كارڈ آر ڈبلیو آر پلس ہے جس کے ذریعے آپ کو ملک میں رہنے اور کہیں بھی کام کرنے کی آزادی ہوتی ہے.

US$ 43,555

بیلجیئم

بیلجيم نے غیر ملکیوں کو اپنے ملک کی شہریت 2000 کے بعد دینی شروع کی. یہاں ہر شعبے میں پیشہ ور افراد کی کمی کی الگ الگ فہرست تیار کی جاتی ہے جس سے ایک قومی کی فہرست تیار ہوتی ہے. ان شعبوں میں کام کرنے کے لیے پیشہ ور افراد کے کام کرنے کا ویزا حاصل کرنے اور رہنے کی اجازت لینے کا عمل آسان ہے۔ اب ملک کے مجموعی روزگار میں غیر ملکی ملازمین کی تعداد مقامی لوگوں کے مقابلے میں زیادہ ہے۔ یہاں یورپی شہریوں کو کام کرنے کی اجازت آسانی سے مل جاتی ہے۔

44364 امریکی ڈالر

برازیل

برازیل میں مختلف کمپنیوں کی ضرورت کی بنیاد پر لیبر محکمہ سے رابطہ کیا جاتا ہے، کیونکہ غیر ملکی پیشہ ور افراد کو کام پر رکھنے سے پہلے کمپنیوں کو لیبر وزارت سے اجازت لینا ہوتی ہے۔ جن لوگوں کے پاس ماسٹرز اور ڈاكٹریٹ کی ڈگری ہو انہیں اپنی اہلیت کا ثبوت بھی دینا ہوتا ہے۔ اقتصادی ترقی کے حالیہ دور میں میں برازيلي صنعتی دنیا میں پیشہ ور افراد کی کمی محسوس کی جا رہی ہے، خاص طور پر انجینئرنگ اور آئی ٹی سیکٹر میں. ایسے میں حکومت کے محکموں میں اس بات پر بحث شروع ہو گئی ہے کہ جن شعبوں میں پیشہ ور افراد کی ضرورت ہے اس میں غیر ملکی پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لیے کیوں نہ خاص پالیسی اختیار کی جائے.

9336 امریکی ڈالر

کینیڈا

کینیڈا میں پیشہ ور افراد کی مانگ کی وجہ سے حالیہ دنوں میں غیر ملکی پیشہ ور افراد کی تعداد میں کافی اضافہ ہوا ہے تاہم اب پالیسی کافی بدل چکی ہے اور اب زیادہ ہنر مند پیشہ ور افراد کا انتخاب کرنے پر زور دیا جا رہا ہے۔ کینیڈا کی حکومت نے عارضی طور پر 29 شعبوں میں نئے پیشہ ور افراد کے درخواستوں کو قبول کرنا بند کر دیا ہے. تاہم خاص حالات میں درخواست منظور ہو سکتی ہے، لیکن اس کے لیے ضروری ہے کہ آپ کو نوکری ملے یا پھر آپ پی ایچ ڈی کرنے کے لیے درخواست دے رہے ہوں۔ اس بات کا بھی انتظام کیا گیا ہے کہ امیگریشن کے عمل کو تیز کیا جائے اور زیر التواء درخواستوں کی تعداد کو کم کیا جا سکے.

42253 امریکی ڈالر

چین(ہانگ کانگ ایس اے آر)

2006 میں، ہانگ کانگ نے ہنرمند پیشہ ور افراد کے لیے پوائنٹس پر مبنی نظام شروع کیا تھا۔ او اي سي ڈي کے مطابق یہاں ہر سال 20 ہزار سے زیادہ غیر ملکی پیشہ ور افراد کو کام ملتا ہے. ہانگ کانگ میں پیشہ ور افراد کی کمی کے حوالے سے کوئی سرکاری فہرست تو نہیں ہے لیکن سرکاری رپورٹ کے مطابق 2018 تک یہاں آئی ٹی، صحت اور انجینئرنگ کے شعبوں میں پیشہ ور افراد کی کمی ہو سکتی ہے. چین میں تو غیر ملکی ہنرمند پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرے کے لیے سرکاری طور پر کوئی پالیسی نہیں ہے. موجودہ میں، اپنے اپنے شعبے کے ماہرین کو چین میں کام کرنے کی اجازت ملتی ہے. حکومت بیرون ملک آباد اعلی تعلیم اور تربیت یافتہ چینی لوگوں کو اپنی طرف راغب کرنے کی طرف توجہ دے رہی ہے.

18540 امریکی ڈالر

جمہوریہ چیک

جمہوریہ چیک میں 2008 کے بعد سے غیرملکی پیشہ ور افراد کی تعداد کم ہوئی ہے۔ غیرملکی پیشہ ور افراد کے لیے یہاں پروگرام 2003 میں شروع کیا گیا تھا جو 2010 میں ختم ہو گیا. لیکن گرین كارڈ اور یورپی بلیو كارڈ سسٹم شروع کیا گیا تا کہ یورپی یونین سے باہر کے ملکوں کے ہنر مند پیشہ ور افراد کو یہاں کام مل سکے. اس سے اہلیت رکھنے والے غیر ملکی پیشہ ور افراد کے لیے چیک جمہوریہ میں کام کرنا آسان ہو گیا ہے، خاص طور پر ان شعبوں میں جہاں چیک اور یورپی یونین کے پیشہ ور افراد کی دلچسپی نہیں ہے.

19630 امریکی ڈالر

ڈنمارک

2008 میں ڈنمارک نے ان شعبوں کے پیشہ ور افراد کو اپنے یہاں داخلہ دینے کے لیے مثبت فہرست بنائی جن کی مانگ زیادہ ہے. پوائنٹس پر مبنی نظام کے ذریعے گرین كارڈ دینے کا انتظام بھی کیا گیا جس کے ذریعے ملک کے اندر ہنر پیشہ ورانہ کام تلاش کر سکتے ہیں. 2011 میں نئی حکومت نے امیگریشن پالیسی میں اصلاحات کا اعلان کیا. مستقل رہائش کی اہلیت حاصل کرنے کے لیے چار بنیادی درجے بنائے گئے ہیں - کم سے کم پانچ سال سے آپ ڈنمارک میں رہ رہے ہوں، تین سال سے آپ کے پاس کل وقتی ملازمت ہو، مالی طور پر آپ قابل ہوں اور آپ کو لسانی امتحان دینا پڑتا ہے.

45560 امریکی ڈالر

فن لینڈ

جنوری، 2012 میں فن لینڈ نے اپنے یہاں یورپی یونین بلیو كارڈ ہدایات نافذ کیں جن کے تحت یورپی یونین سے باہر کے ہنر مند پیشہ ور افراد کو ملک کے اندر رہنے اور کام کرنے کی اجازت دی جا سکتی ہے۔ اس کے تحت جن علاقوں میں ہنرمند افراد کی ضرورت ہے، وہاں کم سے کم ایک سال تک کام کرنے کی اجازت ملتی ہے. ایک اوسط آمدنی سے زیادہ آمدنی پر بلو كارڈ ضروری ہوتا ہے۔ ملک میں ان پیشوں کی فہرست بنی ہوئی ہے جن کے پیشہ ور افراد کی سب سے زیادہ طلب ہے

36676 امریکی ڈالر

فرانس

2011 میں فرانس نے یورپی یونین بلیو كارڈ ہدایات کو اپنے یہاں نافذ کیا اور اس کے بعد ان پیشوں کی تعداد 30 سے کم کر کے 14 کر دی گئی جن میں باہر کے پیشہ ور یہاں کام تلاش کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ اور بھی مشکل شرائط لاگو کی گئی ہیں. اب کہیں زیادہ اعلی قابلیت والے لوگوں کو ملک میں رہنے کی اجازت ملتی ہے اور انہیں عارضی کام کر کے تجربہ حاصل کرنا ہوتا ہے لیکن فرانس میں مہارت کی بنیاد پر ان پیشوں کی فہرست بھی ہے جن میں افريقي ممالک کے شہریوں کو روزگار دیا جا سکتا ہے. افريقي ممالک کی فہرست میں كانگو، بینن، بركينا فاسو اور تیونس کے شہری شامل ہیںگ ان ممالک کے ساتھ فرانس کے خصوصی معاہدے ہیں.

38128 امریکی ڈالر

جرمنی

جرمنی میں 1973 سے ہی غیر ملکی پیشہ ور افراد کی تقرری پر پابندی لگی ہوئی تھی تاکہ مقامی پیشہ ور افراد کے مفادات کی حفاظت ہو سکے. حالانکہ انجینئرنگ، آئی ٹی اور صحت جیسے شعبوں میں تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کی کمی کو دیکھتے ہوئے حکومت نے 2012 میں یورپی یونین بلیو كارڈ ہدایات کو نافذ کیا جس کے مطابق یورپی یونین سے بیرونی ممالک کے پیشہ ور افراد کو یہاں آنے کی اجازت ملی. تربیت یافتہ کارکنان ملازمت کی تلاش کے لیے بھی چھ ماہ کے لیے ملک میں داخل ہو سکتے ہیں.

40223 امریکی ڈالر

یونان

یونان ان ممالک میں شامل ہے جہاں اقتصادی بحران کا سب سے زیادہ اثر دیکھا گیا ہے۔ یہاں پر بے روزگاری کی شرح کافی زیادہ ہے. او اي سي ڈي کے مطابق گزشتہ ایک دہائی میں کم مہارت والی ملازمتوں کے لیے غیر ملکی مزدور آتے رہے ہیں تاہم متوسط ​​مہارت والے پروفیشنلز کی ملک کے کچھ حصوں میں اب بھی طلب ہے۔ مالیاتی شعبے میں اعلی مہارت والے پروفیشنلز کی کمی ہے۔ ویسے پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے یونان میں کوئی خاص پروگرام نہیں ہے.

26295 امریکی ڈالر

ہنگری

2008 میں غیرملکی پیشہ ور افراد کی تعداد ریکارڈ سطح پر پہنچنے کے بعد ہنگری پر بھی اقتصادی بحران کا اثر پڑا اور وہاں بھی طویل عرصے تک رہنے والے غیر ملکی پیشہ ور افراد کی تعداد کافی کم ہوئی. لیکن اب ملک میں سرمایہ کاروں اور اعلی مہارت والے پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے اقدامات کئے جا رہے ہیں۔. 2011 میں ہنگری کی حکومت نے یورپی یونین سے باہر کے ممالک کے شہریوں کے لیے یورپی یونین بلیو كارڈ ہدایات کو اپنے یہاں نافذ کیا. اس کے علاوہ نئے قانون کی بھی منظوری دی جس کے تحت اعلی مہارت یافتہ افراد کو اس امتحان سے چھوٹ دی گئی جو مقامی لیبر مارکیٹ میں داخل ہونے کے لئے ضروری ہے.

19437 امریکی ڈالر

بھارت

دنیا بھر میں خاص طور اواي سي ڈي ممالک میں تربیت یافتہ غیرملکی پیشہ ور اور طالب علم فراہم کرنے والے ممالک میں بھارت سرفہرست ہے۔ ایسے میں بھارتی حکومت نے اب تک اپنے ملک میں تربیت یافتہ پیشہ ور افراد، تعلیمی پروگراموں اور مہارت کو بڑھانے کے پروگراموں میں مقامی باشندوں کا ہی خیال رکھا ہے. ملک میں سرکاری طور پر ان پیشوں کی کوئی فہرست نہیں ہے جن کی مانگ بہت زیادہ ہے، لیکن ملک میں خاص طور پر صحت اور تعمیر کے شعبوں میں تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کی مسلسل کمی ہے۔

3540 امریکی ڈالر

آئرلینڈ

آئر لینڈ میں معاشی بحران کے اثر کے بعد غیرملکی پیشہ ور افراد کی تعداد کافی کمی آئی ہے. غیرملکی خاص طور پر اعلی اور متوسط ​​مہارت والے پروفیشنلز پر نوکریوں کے خاتمے کا مقامی لوگوں کو مقابلے کہیں زیادہ اثر پڑا ہے. 2010 سے آئر لینڈ نے ہنرمند کاریگروں کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے اپنی امیگریشن پالیسی میں تبدیلی لایا ہے. ملک میں اب انہی لوگوں کو کام کرنے کا ویزا دیا جا رہا ہے جن کے پاس بڑی تنخواہوں پر ملازمت کی پیشکش ہے اور وہ ان علاقوں میں کام کرنے کے لئے آ رہے ہیں جن میں کام کرنے والوں کی کافی کمی ہے۔ ایسے لوگوں کو گرین كارڈ منصوبے کے تحت ملک میں کام کرنے کی اجازت ملتی ہے.

50764 امریکی ڈالر

لکسمبرگ

اقتصادی بحران کے دور میں لكسمبرگ میں غیرملکیوں کے لئے مقامی لوگوں کے مقابلے میں روزگار کے زیادہ مواقع پیدا ہوئے ہیں. 2008 کے اقتصادی بحران کے وقت میں ہی ملک میں غیر یورپی یونین ممالک کے شہریوں کے لئے یورپی یونین کی بلیو كرڈ ہدایات پالیسی کو نافذ کیا گیا. یہاں کام کرنے کے لئے پیشہ ور افراد کے پاس کم سے کم ڈپلوما سمیت اعلی تعلیم ہونی چاہئے یا پھر پانچ سال کا تجارتی تجربہ ہونا چاہیے، یا پھر ایک سال تک کام کرنے کا معاہدہ ہونا چاہیے یا پھر کم سے کم 87 ہزار امریکی ڈالر کی سالانہ تنخواہیں کی پیشکش ہونی چاہیئے۔ یہاں آئی ٹی سیکٹر میں سب سے زیادہ مانگ ہے.

52847 امریکی ڈالر

نیوزی لینڈ

نیوزی لینڈ ان ممالک میں شامل ہے جہاں پہلے پہل پوائنٹس کی بنیاد پر امیگریشن نظام کی شروعات ہوئی اور ہنرمند تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے وہ فہرست بھی تیار کی گئی، جس سے یہ پتہ چلے کہ کن کن شعبوں میں پیشہ ور افراد کی کمی ہے. 2010 میں نئی مائگریشن پالیسی نافذ کی گئی جس کے تحت پیشہ ور افراد کو کام کرنے کے لئے پہلے عبوری ویزا اور بعد میں مستقل ویزا دیا جانے لگا. اس سے سپانسر نظام کو رواج ملا اور کمپنیوں میں پیشہ ور افراد کی طلب بھی بڑھی. اس کے علاوہ سرمایہ کاروں اور وزیٹنگ اکیڈمی محققین کو بھی ملک کے اندر کام کرنے کی سہولت ہے.

27396 امریکی ڈالر

ناروے

ناروے میں 2010 میں غیر ملکی کارکنوں کی تعداد ریکارڈ سطح تک پہنچ گئی. اس کی وجہ سویڈن، لیتھوانیا اور پولینڈ جیسے ممالک سے آنے والے لوگوں کے آزادانہ آمد تھی. یہاں یہ تجویز کیا گیا کہ ہر سال زیادہ سے زیادہ 5،000 تربیت یافتہ غیرملکیوں کو کام ملے. حالانکہ کبھی اتنے لوگ یہاں نہیں آئے۔ اب حکومت کارکنوں کو اپنی طرف متوجہ کرنے پر توجہ دے رہی ہے. 2011 میں یہاں ریکارڈ سطح پر ہنرمند غیرملکیوں کو داخلے کی اجازت دی گئی. ناروے میں ابھی زیادہ، اوسط اور کم ضرورت والے 150 پیشوں کی فہرست ہے.

43990 امریکی ڈالر

پولینڈ

او اي سي ڈي کے مطابق پولینڈ میں 2011-2010 کے دوران غیر ملکی لوگوں کو کام کرنے کے لئے دیے جانے والی ویزا کی تعداد بڑھائی گئی. تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کی ضرورت کو دیکھتے ہوئے حکومت نے پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنے اور تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کی موجودگی کو برقرار رکھنے کے لئے نئی مائیگرشن پالیسیاں بنائی ہیں۔ کام کرنے کے لیے پانچ طرح کی اجازت دیے جانے کی تجویز ہے. خاص قابلیت والے پیشہ ور افراد کو لیبر مارکیٹ میں داخل ہونے کے لئے ضروری امتحان میں شامل ہونے کی ضرورت نہیں ہے. آجروں کے لئے یہ انتظام کیا گیا ہے کہ وہ کسی بھی غیر ملکی کو پولش شہری سے کم تنخواہ نہیں دے سکتے.

20069 امریکی ڈالر

پرتگال

پرتگال بھی اقتصادی بحران سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک میں شامل رہا. اقتصادی بحران کے بعد یہاں آنے والے لوگوں کی تعداد میں کمی تو ہوئی ہی ساتھ ہی یہاں سے نکل کر انگولا اور برازیل جانے والے لوگوں کی تعداد بڑھ گئی. او اي سي ڈي کے اعداد و شمار کے مطابق ہر سال 70 ہزار لوگ یہاں سے دوسرے ممالک میں جا رہے ہیں. ان میں سے نصف کی عمر 29 برس سے بھی کم ہے. 2010 میں پرتگال میں کام کرنے کے لئے ملنے والا ویزا سالانہ سرکاری کوٹے سے بھی کم ہو گیا تھا. 2012 میں پرتگال نے غیر یورپی یونین ممالک کے پیشہ ور افراد کو اعلی تنخواہ پر کام کرنے کے پیشکش کرنے کے لئے یورپی یونین بلیو كرڈ حکم نافذ کیا.

22742 امریکی ڈالر

روس

روسی یونین میں غیر ملکی لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے. اس کے لئے حکومت کی وہ پالیسی ذمہ دار ہے جس کے تحت غیر ملکی پیشہ ور افراد کو کام کرنے کی اجازت دی گئی. 2010 میں اعلی تربیت یافتہ ماہرین کو کام پر رکھے جانے کے شرائط کو آسان بنایا گیا. اس میں جو تبدیلی کی گئی وہ تھا سالانہ 68 ہزار امریکی ڈالر کی کم از کم تنخواہ والوں کو قبول کرنا. لیکن اعلی سطح کے پروفیسر اور محققین کے لئے یہ رقم آدھی رکھی گئی.غیر ملکی لوگوں کو اپنے ساتھ خاندان کو رکھنے کی اجازت بھی دی جاتی ہے.

14580 امریکی ڈالر

سنگاپور

حالیہ برسوں میں اعلی تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کے لئے سنگاپور سب سے پرکشش ملک کے طور پر ابھرا ہے. ایسے پیشہ ور افراد کی مدد کے لئے یہاں کئی پالیسیاں لاگو کی گئی ہیں. یہاں ترانوے شعبوں میں پیشہ ور افراد کی ضرورت ہے۔ حکومت کی جانب سے یہ بھی تسلیم کیا گیا ہے کہ جون، 2012 تک یہاں 1،74،000 اعلی تربیت یافتہ پیشہ ور افراد کام کرتے ہیں. ستمبر 2012 میں حکومت نے غیر ملکی مزدوروں کی خاندان لانے کے لئے کم از کم ضروری تنخواہ کی حد کو بڑھا دیا تاکہ غیرملکی پیشہ ور افراد اپنے خاندانوں کو کم ساتھ رکھ سکیں اور وہاں کی بنیادی سروسز پر دباؤ کم ہو سکے.

31392 امریکی ڈالر

سلوواکیہ

2011 میں سلاواکی حکومت نے نئی مائیگریشن پالیسی کی منظوری دی جس کا مقصد بازار میں پیشہ ور افراد کی کمی کو دیکھتے ہوئے اعلی مہارت والے غیر ملکی پیشہ ور افراد کو اپنی طرف متوجہ کرنا تھا. اس کے تحت یورپی بلیو كرڈ کی طرز پر ایک سلاواکی كرڈ بنایا گیا. اس کے علاوہ بیرون ملک میں بسنے والے ہنرمند اور تربیت یافتہ سلوواكيائي شہریوں کو واپس بلانے کے لئے پر کشش پیشکشوں اور سہولیات کا اعلان کیا گیا. سلوواکیہ میں پیشہ ور افراد کی کمی سے متعلق کوئی سرکاری فہرست تو نہیں ہے لیکن حکومت مختلف شعبوں کے بارے میں معلومات حاصل کرتی رہتی ہے جہاں مزدوروں کی کمی ہو سکتی ہے۔

19068 امریکی ڈالر

سلووینیا

2009 میں سلووینيا کی حکومت نے اقتصادی بحران کو دیکھتے ہوئے یورپی یونین کے باہر کے ممالک کے شہریوں کے لئے کام کے سالانہ پرمٹ کو کم کر دیا. اس کا اثر یہ ہوا کہ 2010 میں غیرملکیوں کی تعداد میں 50 فیصد کی کمی دیکھی گئی. حال ہی میں سلووینيا نے ہنر مند لوگوں کو اپنی طرف متوجہ کرنے کے لئے قدم اٹھائے ہیں. 2011 میں سلووینيا میں یورپی یونین بلیو كارڈ ہدایات نافذ کیں۔ نئی امیگریشن پالیسی میں یہ بھی تجویز ہے کہ ہم جنس جوڑیوں کو بھی ملک کے اندر رہنے اور کام کرنے کی اجازت ہے۔

32480 امریکی ڈالر

جنوبی افریقہ

براعظم افریقہ میں جنوبی افریقہ میں سب سے زیادہ تربیت یافتہ غیرملکی رہتے ہیں. ابھی بھی وہاں کوشش کی جا رہی ہے کہ پیشہ ور افراد کی تعداد میں اضافہ کیا جائے. 2002 میں، حکومت نے کھلی پالیسی کے تحت اعلی مہارت والے ان پیشہ ور افراد کو داخلے کی اجازت دینا شروع کی ہے جو ملک میں کام کرنا چاہتے ہیں. ہر سال حکومت ایک فہرست جاری کرتی ہے جس کے مطابق مہارت والے ان غیرملکی پیشہ ور افراد کو کام کرنے کی اجازت ملتی ہے، جن کے پاس پانچ سال کا تجربہ ہوتا ہے.

22056 امریکی ڈالر

سپین

اقتصادی بحران نے سپین کو سب سے زیادہ متاثر کیا ہے. ملازمتوں میں بڑی تعداد میں چھانٹی کی وجہ سے سپین میں آنے والے لوگوں کی تعداد کم ہوئی ہے اور یہاں سے باہر جانے والے لوگوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے. لیبر فورس سروے کے مطابق 2011 ء کے وسط میں یہاں غیرملکیوں میں بے روزگاری کی شرح 32 فیصد تک پہنچ گئی. 2011 میں سپین میں یورپی یونین بلیو كرڈ ہدایت کو نافذ کیا گیا جس کے تحت ہنرمند پیشہ ور افراد کو کام کرنے کے مواقع ملے لیکن مقامی لوگوں کو ترجیح دینے کے لیے غیرملکی پیشہ ور افراد کو روکنے کے لیے پابندیاں ہیں.

34387 امریکی ڈالر

سویڈن

یورپ میں پیشہ ور افراد کی امیگریشن کے لحاظ سے دیکھا جائے تو سویڈن سب سے لبرل ملک ہے. 2008 سے یہاں یورپی معاشی علاقے کے باہر کے ممالک کے پیشہ ور افراد کو کام دینے کی شروعات ہوئی. ملک میں 80 سے زیادہ پیشوں کی فہرست تیار کی گئی ہے جن میں کام کرنے والوں کی ضرورت ہے. اس میں اعلی سطح، متوسط ​​اور عام کام شامل ہے۔ غیرملکیوں کے پاس سویڈن کے آجر کی پیشکش کا خط ہونا چاہیے اور نوکری ملنے پر ان افراد کے اہلِ خانہ کو بھی ساتھ رہنے کی اجازت مل جاتی ہے.

37734 امریکی ڈالر

سوئٹزرلینڈ

یورپ میں سب سے زیادہ غیر ملکی پیشہ ور افراد جن ممالک میں کام کرتے ہیں ان میں سے سوئٹزرلینڈ ایک ہے۔ اقتصادی بحران کے دور میں مقامی لوگوں میں غیر ملکیوں کے مقابلے میں کہیں زیادہ بے روزگاری دیکھنے کو ملی. سوئٹزرلینڈ میں کام کرنے آنے والوں میں زیادہ تر یورپی یونین کے ممالک سے ہی ہوتے ہیں. یورپی یونین اور یورپی اقتصادی علاقے سے باہر کے ممالک کے افراد کو کام کرنے کا پرمٹ بہت مشکل سے ملتا ہے. دوسرے ممالک سے یہاں آنے والے پیشہ ور افراد کے پاس ملازمت کی پیشکش ہونی چاہیے اور مالکان کو بھی سوئٹزرلینڈ اور یورپی یونین کے باہر کے ممالک کے پیشہ ور افراد کو نوکری دینے کے لیے زیادہ اقدامات کرنا پڑتے ہیں۔

50242 امریکی ڈالر

برطانیہ

2010 کے بعد سے، برطانیہ میں غیرملکی پیشہ ور افراد کا نظام طلب اور فراہمی پر منحصر ہے. 2010 میں حکومت نے باہر سے آنے والے لوگوں کی تعداد کم کرنے کے لئے اقدامات کئے۔ اس میں ہنرمند پیشہ ور بھی شامل تھے، تاکہ مقامی لوگوں کا روزگار نہ چھن سکے. اس کے تحت اعلی تربیت یافتہ طبقے میں دو درجے بنائے گئے اور ان دونوں میں آنے والے پیشہ ور افراد کی تعداد مقرر کر دی گئی. 2011 میں ان شعبوں کی تعداد بھی کم کی گئی جن میں پیشہ ور افراد کی ضرورت تھی. 2012 میں کاروباری اور مالکان کی درخواست پر باہر سے آنے والے لوگوں کے لیے قوانین میں کچھ نرمی برتی گئی.

44743 امریکی ڈالر

ریاست ہائے متحدہ امریکہ

اواي سي ڈي کے مطابق، 2000 سے 2010 کے دوران ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں ایک آدمی کے ریٹائر ہونے پر تین اعلی تربیت یافتہ لوگ اس کی جگہ لینے کو موجود تھے لیکن اقتصادی بحران کے آنے کے بعد مالیاتی شعبے سمیت ان شعبوں میں ملازمتوں کی بھاری کمی ہوئی جو سب سے زیادہ لوگوں کو کام دیتے تھے۔ تاہم ریاست ہائے متحدہ امریکہ میں ان پیشوں کی فہرست ہوتی ہے جن میں کام کرنے والے پیشہ ور افراد کی مانگ ہوتی ہے۔ اسے شیڈول اے فہرست کہتے ہیں۔ ان پیشوں سے وابستہ پیشہ ور گرین كارڈ کے لیے درخواست دے سکتے ہیں لیکن ان کے پاس ملازمت کی پیشکش ہونی چاہیے.

54450 امریکی ڈالر

[countryname] میں [profession]
[profession]: [countryname]
[profession] اس ملک میں
[countryname] کی جانب ہجرت
ان ماہرین کی طلب ہے مگر اس بارے میں کوئی مخصوص معلومات دستیاب نہیں ہیں۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔