اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

’نظریہ پاکستان کی اصطلاح یحییٰ خان کے دور میں آئی‘

پاکستان میں گیارہ مئی کو ہونے والے انتخابات کے لیے اس وقت امیدواروں کے کاغذاتِ نامزدگی کی جانچ پڑتال کا عمل جاری ہے۔ امیدواروں کے نادہندہ ہونے اور دیگر روایتی چیزوں کے بارے میں جانچ پڑتال تو ہو رہی ہے مگر اس مرتبہ آئین کے آرٹیکل باسٹھ اور تریسٹھ کے تحت امیدواروں کے صادق اور امین ہونے اور ان کے نظریہِ پاکستان کے بارے میں خیالات پر بھی سوالات اٹھائے جا رہے ہیں۔

کیا پاکستان میں صادق اور امین ہونے کی کوئی قانونی تعریف یا معیار موجود ہے اور کیا نظریہِ پاکستان نامی کوئی متفقہ قانونی دستاویز ہے اور یہ کہ ایسے سوالات سے کیا جمہوری عمل کوئی فائدہ پہنچے گا؟ کیا دوسری جمہوریتوں میں ایسے سوالات امیدواروں سے کیے جاتے ہیں؟ سیربین میں معروف تاریخ دان ڈاکٹر مبارک علی اور الیکشن کمیشن کے سابق سیکریٹری کنور دلشاد نے ان سوالات کے جواب دیے