اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

بدھ یکم مئی کا سیربین، حصۂ دوم

پاکستان کے شہر ایبٹ آباد میں القاعدہ کے بانی اسامہ بن لادن کی امریکی حملے میں ہلاکت کو کل، یعنی دو مئی کو دو سال پورے ہورہے ہیں لیکن تاحال اس واقعہ سے متعلق حقائق سامنے آسکے اور نہ ہی اس کے ذمہ داروں کا تعین کیا جا سکا ہے۔ اس واقعہ کی تحقیق کے لیے قائم کیے گئے ایبٹ آباد کمیشن کی رپورٹ بھی ابھی تک منظرِعام پر نہیں آسکی ہے جس سے شکوک و شبہات بڑھ رہے ہیں۔

ایبٹ آباد سے نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کی رپورٹ

القاعدہ کے رہنما اسامہ بن لادن کي ہلاکت کو دو مئي کو دو سال مکمل ہو رہے ہيں۔ ان دو برس ميں کيا ايبٹ آباد ميں ہونے والے اس امريکي آپريشن کے بارے ميں مزيد کوئي تفصيلات سامنے آئي ہيں۔ کيا اس بارے ميں پائے جانے والے شکوک و شبہات کم ہوئے ہيں۔

اسلام آْباد میں بی بی سی اردو کے نامہ نگار آصف فاروقي نے مصنف اور تجزيہ کار بريگيڈيئر شوکت قادر سے خصوصی انرٹویو میں پوچھا کہ کيا واقعي روپوش اسامہ اس انداز ميں اپنے خاتمے کو نجات کا راستہ سمجھتے تھے؟