بدھ یکم مئی کا سیربین

بدھ یکم مئی کو نشر ہونے والے بی بی سی اردو سروس کے ٹی وی پروگرام سیربین کے چاروں حصے آپ اس صفحے پر دیکھ سکتے ہیں۔ یہ پروگرام ایکسپریس نیوز پر نشر کیا گیا تھا۔

سیربین ہفتے میں تین دن یعنی پیر، بدھ اور جمعے کو پاکستان کے مقامی وقت کے مطابق رات گیارہ بجے ایکسپریس نیوز پر نشر ہوتا ہے۔

سندھ کے ہاری اور تبدیلی کے انتخابی نعرے

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

يکم مئي کو بہت سے لوگ صرف صنعتي مزدوروں کي جدوجہد سے جوڑتے ہيں اور ان سے ووٹ بھي مانگتے ہيں۔ ليکن بےزمين ہاري وہ مظلوم طبقہ ہے جو زمين کي ملکيت تو دور کي بات، اپني مرضي سے ووٹ ڈالنے کے حق سے بھي محروم ہے۔ کیا آنے والے انتخابات میں اپنے ووٹ کی طاقت سے سندھ کے ہاری کسان اپنی زندگی میں خوشحالی لا سکتے ہیں یا تاریخ اپنے آپ کو دہراتی رہے گی؟

صبا اعتزاز نے جیکب آباد کے ایک چھوٹے سے گاؤں میں اس سوال کا جواب ڈھونڈنے کی کوشش کی۔

اسی حوالے سے پروگرام میں عوامي پارٹي کے رہنما حارث خليق سے خصوصی گفتگو بھی شامل ہے۔

سب سے آخر میں دیکھیے سوشل میڈیا پر آنے والی آپ کی آراء۔

اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے دو سال

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پاکستان کے شہر ایبٹ آباد میں القاعدہ کے بانی اسامہ بن لادن کی امریکی حملے میں ہلاکت کو دو مئی کو دو سال پورے ہورہے ہیں لیکن تاحال اس واقعے سے متعلق حقائق سامنے آسکے اور نہ ہی اس کے ذمہ داروں کا تعین کیا جا سکا ہے۔ اس واقعے کی تحقیق کے لیے قائم کیے گئے ایبٹ آباد کمیشن کی رپورٹ بھی ابھی تک منظرِعام پر نہیں آسکی ہے جس سے شکوک و شبہات بڑھ رہے ہیں۔

ایبٹ آباد سے نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کی رپورٹ

اسلام آْباد میں بی بی سی اردو کے نامہ نگار آصف فاروقي نے مصنف اور تجزيہ کار بريگيڈيئر ریٹائرڈ شوکت قادر سے خصوصی انٹرویو میں پوچھا کہ کيا واقعي روپوش اسامہ اس انداز ميں اپنے خاتمے کو نجات کا راستہ سمجھتے تھے؟

سب سے آخر میں دیکھیے آپ کی جانب سے سوشل میڈیا پر آنے والی آپ کی آراء۔

عالمی خبریں اور پاکستان میں انتخابات پر تجزیہ

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

اس حصے میں شامل تھیں عالمی خبریں جن میں سے پہلے خبر شامل تھی برما سے جہاں نسلی فسادات کی ایک نئی لہر پھوٹ پڑی ہے۔

اسی طرح دیکھیے گا وينزويلا کی قومی پارلیمان میں تلخ بحث کے دوران ہاتھا پائی کی خبر۔

اسی طرح اس حصے میں شامل تھی بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ میں منہدم ہونے والی عمارت کے حوالے سے ایک رپورٹ جس میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد چار سو سے تجاوز کر گئی ہے۔

اس حصے کے آخر میں شامل ہے بی بی سی اردو کے ایڈیٹر عامر احمد خان کا تجزیہ جس میں انہوں نے انيس سو ستر سے ہونے والے انتخابات ميں مختلف سياسي جماعتوں کے پنجاب میں ووٹ شئير کا جائزہ ليا ہے۔

’تو پھر چلیں‘ انتخابی سلسلہ

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

بلوچستان میں اس وقت اليکشن لڑنے والي وفاق کي حامی قوم پرست اور قومی جماعتوں اور آزادی کي علمبردار مسلح جدوجہد کرنے والي تنظیموں کے درمیان ايک جنگ سي جاری ہے۔ اس کشمکش میں عام آدمی جائے تو کہاں جائے۔ وسعت اللہ خان مکران کے انتخابی سفر میں اسی سوال کا جواب ڈھونڈنے کی کوشش کر ہے ہیں۔ تو پھر چلیں

اسی بارے میں