اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

جمعہ تین مئی کا سیربین، حصۂ اول

پاکستان ميں صورتحال خواہ کچھ بھي ہو، انتہا پسند اپنے ایجنڈے پر ڈٹے ہوئے ہيں۔ اسلام آباد ميں ایک سرکاری وکیل چوہدری ذوالفقار علی کے قتل نے واضح کر ديا ہے کہ انتہا پسندوں کو روکنا تقريباً ناممکن ہو گيا ہے۔ اسلام آباد میں وکلا برداری سراپا احتجاج، ليکن يہ بھي شايد بےنتيجہ ہو کيونکہ دو ہفتے قبل ہی دارالحکومت میں دو وکلا کو نامعلوم افراد نے تشدد کا نشانہ بنایا تھا جس پر بھي کوئي کارروائي نہيں ہو سکي۔ کیا ان واقعات میں وکلاء برداری کے لیے کوئی پیغام چُھپا ہے؟

دیکھیے اسلام آباد سے نامہ نگار ارم عباسی کی رپورٹ۔

اسی حصے میں شامل ہے معروف قانون دان عاصمہ جہانگير سے کی گئی خصوصی بات چیت۔

اس قتل کي تفتيش کي تازہ ترين صورت حال سے آگاہ کرنے کے ليے پروگرام میں براہِ راست شریک ہوئے اسلام آباد سے نامہ نگار شہزاد ملک۔

سب سے آخر میں دیکھیے سوشل میڈیا پر آنے والی آپ کی آراء۔