اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پرویز مشرف ایک بار پھر گرفتار

پاکستان کے سابق فوجی صدر پرویز مشرف اپریل سنہ دو ہزار سات میں اسلام آباد کی لال مسجد اور جامعہ حفصہ پر فوجی کارروائی میں مدرسے کے مہتمم عبدالرشید غازی سمیت درجنوں لوگوں کی ہلاکت کے مقدمے میں چودہ دن کے عدالتی ریمانڈ پر دے دیے گئے ہیں۔ اُن کے خلاف درج ہونے والا یہ پانچواں مقدمہ ہے۔

واضح رہے کہ سپريم کورٹ جنرل مشرف کے تين نومبر 2007 کو آئین کی معطلی اور ايمرجنسي کے نفاذ کو خلافِ آئين قرار دے چکي ہے۔ آئين کے مطابق آئين کي معطلي يا منسوخي سنگين بغاوت کے زمرے میں آتی ہے۔ ليکن کيا پاکستاني سول انتظاميہ يا عدليہ کسي سابق فوجي آمر کے خلاف ايسے کسي مقدمے کي طاقت يا سکت رکھتی ہے؟ ديکھيے ارم عباسی کي رپورٹ۔