پیر 14 اکتوبر کا سیربین

پیر 14 اکتوبر کو نشر ہونے والے بی بی سی اردو سروس کے ٹی وی پروگرام سیربین کے چاروں حصے آپ اس صفحے پر دیکھ سکتے ہیں۔

سیربین ہفتے میں تین دن یعنی پیر، بدھ اور جمعے کو بی بی سی اردو ڈاٹ کام پر لائیو نشر کیا جاتا ہے۔ یہ پروگرام ایکسپریس نیوز پر بھی نشر کیا گیا تھا۔

پشاور حملوں کی زد پر کیوں؟

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

دہشت گردي کا زخم پاکستان کے کسي ايک شہر پر سب سے زیادہ گہرا ہے تو وہ خیبرپختونخوا کا دارالحکومت پشاور ہے جو افغانستان پر روسی حملے کے بعد سے گزشتہ 34 برسوں میں آئے دن کسي نہ کسي دہشت گردانہ کارروائي کا نشانہ ضرور بنتا ہے۔

2009 ميں 28 اکتوبر کو مینا بازارمیں کار بم دھماکے میں کم از کم 137 افراد ہلاک ہوئے۔

نو مارچ 2011 کو نواحی علاقے ادیزئی میں ایک جنازے کے دوران خودکش حملے میں 43 افراد ہلاک اور باون زخمی ہوئے۔

22 ستمبر 2013 کو کوہاٹی بازار میں آل سینٹس چرچ پر مبینہ خودکش حملے میں 85 افراد ہلاک اور 145 کے قریب زخمی ہوئے۔

اور 29 ستمبر کو قصہ خوانی بازار میں کار بم دھماکے کے نتیجے میں 42 افراد ہلاک اور ايک سو زخمی ہوئے۔

یہ اہم تاریخی شہر اتنی آسانی سے کیوں نشانہ بنتا ہے اور اس کو بچانا اتنا مشکل کیوں ہے۔ ان سوالوں کا جائزہ لیا ہے نامہ نگار محمود جان بابر نے اپنی اس رپورٹ میں۔

پاکستان کا شہر پشاوردہشت گردوں کے حملوں کی زد میں ہے لیکن اس کی حفاظت کا کوئی موثر نظام نظر نہیں آتا۔

وجوہات پر بات کرنے کے ليے اس وقت اسلام آباد سے نامہ نگار محمود جان بابر ہمارے ساتھ موجود ہيں۔ جي محمود

’اللہ‘ صرف مسلمانوں کے لیے

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

مليشيا میں ايک عدالت نے حکومت کے اس فيصلہ کو صحيح قرار ديا ہے کہ لفظ 'اللہ' صرف مسلمان استعمال کر سکتے ہيں۔ اس سے پہلے ايک ذيلي عدالت نے اس کے خلاف فيصلہ ديا تھا جس کي وجہ سے ملک ميں مذہبي کشيدگي بڑھ گئي تھي۔ عيسائيوں کا کہنا ہے کہ وہ يہ لفظ 'اللہ' صديوں سے استعمال کر رہے ہيں۔ تفصيل مہوِش حسين سے۔

انڈيا کی ریاست مدھیہ پردیش میں رتن گڑھ کے مندر میں گزشتہ روز بھگدڑ مچنے سے ايک سو پندرہ ہندو زائرین ہلاک اور درجنوں زخمی ہوئے ہیں ۔ ہلاک ہونے والوں میں سو کے قریب عورتیں اور بچے شامل ہيں۔ مدھیہ پردیش کی حکومت نے اس المیے کی تحقیقات کا حکم دیا ہے ۔ دلی سے شکیل اختر کی رپورٹ۔

ڈرون سے آپ سب لوگ یقیناً اچھی طرح واقف ہوں گے۔ لیکن زیرِآب ڈرون کے بارے میں کیا خیال ہے۔ جی ہاں بغیر پائلٹ کے ہوائی جہازوں یا فضائی ڈرون کے بعد اب سائنسدان زیرِآب یا بحری ڈرون بنانے پر کام کر رہے ہیں جنہیں فاصلے سے چلایا جا سکے گا۔ بی بی سی کے نامہ نگار کرسچین فریزر کی رپورٹ پيش کر رہے ہيں کاشف قمر۔

پشاور میں بچوں کی تعلیم

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

آج سيربين ميں ہم پشاور اور اس کو درپيش چيلينجوں کا جائزہ لے رہے ہيں۔

صوبۂ خیبر پختونخوا میں مشقت کرنے والے اور بھیک مانگنے والے بچوں کے اعداد وشمار حاصل کرنے کے لیے 30 سال سے کوئی سروے نہیں ہوا ہے۔ لیکن ایک اندازے کے مطابق اِن بچوں کی تعداد 25 سے 30 لاکھ کے درمیان ہے۔ ان بچوں کے ليے چلائے جانے والي مہم کے دوران صوبائی حکومت کے مطابق ایک ماہ میں ڈھائی لاکھ بچوں کو سکولوں میں داخل کرا لیا گیا ہے اور یہ مہم پورا سال جاری رہے گی۔ پشاور سے عزیزاللہ خان کی رپورٹ۔

اِسي موضوع پر ہم سے جودت اياز سے بات کی جو خيبر پختونخوا کے سيکريٹري ايجوکيشن ہيں۔ ميں نے اُن سے پوچھا کہ سکول نہ جانے والے بچوں کی تعداد کے بارے میں 1994 سے کوئی سروے ہی نہیں ہوا، تو وہ کن معلومات کی بنیاد پر کام کر رہے ہيں؟

پشاور کی سیر

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

پشاور کافی عرصے سے شدت پسندوں کے نشانے پر ہے۔ جہاں ايک طرف ہر دن کوئي نہ کوئي بري خبر آتي ہے وہيں شہر ميں بسنے والے ہِمت نہيں ہارتے اور سب خطرات کے باوجود بھي کاروبارِ زندگي جاري رکھنے ميں کوشاں رہتے ہيں۔ اس ہفتے بي بي سي پاکستان کے ايڈيٹر ہارون رشيد جن کا تعلق پشاور سے ہے اپنے شہر کی سیر کرا رہے ہيں۔

اسی بارے میں