فرانس میں ’دہشت گردی کے پانچ منصوبے ناکام‘

فرانس کے وزیر اعظم تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فرانس کے وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ ان کے ملک کو اس سے پہلے اتنا خطرہ کبھی نہیں رہا

فرانس کے وزیر اعظم مینوئل والز کا کہنا ہے کہ فرانس کی پولیس نے حالیہ مہینوں میں دہشت گردی کے پانچ منصوبے ناکام بنائے ہیں۔

فرانس انٹر ریڈیو سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ حال میں میں ناکام بنائے جانے والے حملے میں پیرس کے گرجا گھروں پر حملے کا منصوبہ شامل تھا۔

اس منصوبے میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے الزام میں گذشتہ اتوار کو ایک الجیریائی نژاد فرانسیسی شہری کو گرفتار کیا گیا تھا۔ اس شخص نے خود کو گولی مارنے کے بعد ایمبولینس بلائی تھی جس کے بعد اس کی گرفتاری عمل میں آئی تھی۔

جنوری میں طنز و مزاح کے رسالے چارلی ایبڈو اور یہودیوں کی ایک مارکیٹ پر حملے کے بعد فرانس میں سکیورٹی سخت کر دی گئی تھی۔

فرانس کے وزیر اعظم نے فرانس انٹر ریڈیو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’اس سے پہلے اتنا خطرہ کبھی نہیں رہا اور ہمیں اپنی تاریخ میں اس قسم کی دہشت گردی کا سامنا اس سے پہلے کبھی نہیں کرنا پڑا تھا۔‘

ان کا کہنا تھا کہ 1573 فرانسیسی شہری یا رہائشیوں کے ’دہشت گرد گروہوں‘ کے ساتھ روابط ہیں جن میں سے 442 کے بارے میں خیال ہے کہ وہ اس وقت شام میں ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ان میں سے 97 شام یا عراق میں ہلاک ہو چکے ہیں جن میں سے سات خود کش حملوں میں ملوث تھے۔

اسی بارے میں