محمد علی کی زندگی کی جھلکیاں تصاویر میں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد علی امریکی ریاست کینٹکی میں 17 جنوری 1942 میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے 12 سال کی عمر میں باکسنگ شروع کی اور سنہ 1960 روم میں ہونے والے اولمپکس میں سونے کا تمغہ جیتا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد علی نے پروفیشنل باکسنگ کا آغاز 18 سال کی عمر میں کیا۔ اور سنہ 1963 میں لندن میں ہونے والے فیفٹی راؤنڈ ناک آؤٹ مقابلوں میں مقامی ہیرو ہنری کوپر کو شکست دی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

لندن کے ویمبلے سٹیڈیم میں ہونے والے اس مقابلے کو دیکھنے کے لیے 55 ہزار افراد موجود تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

فروری سنہ 1964 میں محمد علی کا پہلا فوٹو شوٹ۔ اُس وقت انھوں نے ناقابل شکست ورلڈ چیمپیئن سونی لسٹن کو شکست دی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

لسٹن کو شکست دینا باکسنگ کی تاریخ میں ایک بہت بڑا اپ سیٹ تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پہلے راؤنڈ میں لسٹن کو ناک ڈوان کرنے کے بعد محمد علی چاہتے تھے کہ وہ دوبارہ اُٹھ کر اُن سے مقابلے کریں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

نومبر 1965 میں محمد علی نے سابق چمپئین فلائیڈ پیٹرسن کو شکست دی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد علی مئی 1966 میں ہنری کوپر سے مقابلہ کرنے کے دوبارہ لندن آئے تو اُن کے برطانوی مداح اُن کی ایک جھلک دیکھنے کے لیے اُمڈ آئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد علی مقابلہ شروع ہونے سے پہلے رنگ میں تیاری کرتے ہوئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اس مقابلے کے چھٹے راؤنڈ میں برطانوی باکسر محمد علی کے مکے سے زخمی ہو گئے۔ سنہ 2011 میں ہنری کوپر کے انتقال پر محمد علی نے کہا تھا کہ ’میں اپنے پرانے دوست کو بہت یاد کروں گا۔ وہ ایک عظیم انسان اور عظیم باکسر تھے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

سنہ 1978 میں اپنے ٹائٹل کے دفاع میں لیئون سپنکس سے شکست کھانے کے نو ماہ بعد محمد علی نے باکسنگ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا۔ اس کے بعد 1980 میں وہ نئے ورلڈ چیمپیئن لیری ہومز کو چیلنج کرنے لیے باکسنگ رنگ میں آئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ہومز کو شکست دینے کے بعد محمد علی ریٹائر ہو گئے اور اس سے ہیوی ویٹ باکسنگ میں ایک خلا پیدا ہو گیا۔ باکسنگ کی دنیا میں اس خلا کو 1980 کی دہائی کے نصف میں مائیک ٹائیسن نے پورا کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

سنہ 1980 میں پتہ چلا کہ محمد علی پارکنسنز سنڈروم میں مبتلا ہیں۔ انھوں نے بہادری سے اس کا مقابلہ کیا۔ 1966 میں اٹلانٹا میں ہونے والے اولمپکس مقابلوں میں ہزاروں افراد نے انھیں دیکھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

1960 میں اولمپکس مقابلوں میں جیتا ہوا تمغہ انھیں دوبارہ دیا گیا۔ گو کہ یہ کہانی بھی متنازع ہے لیکن محمد علی نے کہا تھا کہ سفید فام افراد کے لیے مخصوص ہوٹل میں داخلے سے منع کرنے پر انھوں نے اولپمکس میں جیتا گیا تمغہ دریا میں پھینک دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

محمد علی کی بیٹی لیلیٰ نے بھی بعد میں اپنے والد کے نقشِ قدم پر چلتے ہوئے باکسنگ کے رنگ میں قدم رکھا۔ اور 15 سال کی عمر میں پروفیشنل باکسنگ شروع کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

سنہ 2001 میں ہالی وڈ میں محمد علی پر ایک فلم بنی۔ جس میں ول سمتھ نے محمد علی کردار ادا کیا۔ اپنی خراب صحت کے باوجود محمد علی عوام کی نظروں میں رہے اور وہ عالمی سطح پر منعقد ہونے والی اجتماعات میں شرکت کرتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

2012 میں لندن میں ہونے والے اولمپکس مقابلوں کی افتتاحی تقریب میں محمد علی نے شرکت۔ اس تصویر میں اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون بھی موجود ہیں۔