تاریکی میں آسمان کی خوبصورتی

آسٹریلیا میں فوٹو گرافی کے مقابلے میں رات کے وقت آسمان کی تصاویر میں قطب شمالی کی روشنیوں سے لے کر ستاروں کے جھرمٹ کی پوشیدہ روشنیوں تک نمایاں ہوئی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ judith conning

ڈیوڈ میلن ایسٹرو فوٹوگرافی ایوارڈ 12 سال قبل قائم کیا گیا تھا جس میں فوٹوگرافروں نے چند تصاویر بھیجیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ troy casswell

12 سال بعد پورے ملک سے سینکڑوں کی تعداد میں تصاویر اس ایوارڈ کے لیے بھیجی جاتی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ stephen humpleby

یہ سالانہ مقابلہ تمام غير پيشہ ورماہر فلکیات کے لیے ہے۔ اس مقابلے کا مقصد فوٹوگرافی میں جدت اور فلکیات میں شوق پیدا کرنا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ james stone

اس ایوارڈ کے جج ڈیوڈ میلن کا کہنا ہے کہ تصویر کی خوبصورتی کے علاوہ رات کے وقت فوٹوگرافی کرنے میں مشکلات کو سراہنا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ chris marklew

ڈیوڈ میلن نے بی بی سی کو بتایا ’تصویر میں رنگوں کو صحیح طریقے سے اجاگر کرنا بہت اہم ہے اور اس کے لیے آپ کو ستاروں کے بارے میں بنیادی علم ہونا ضروری ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ neil creek

اس مقابلے کے فاتح کا اعلان ہفتے کے اختتام پر کیا گیا اور ان کی تصاویر نیو ساؤتھ ویلز میں واقع پارکس آبزرویٹری میں نمائش کے لیے رکھی گئی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ peter hilkmann

اس سال کا پہلا انعام ٹروئے کیسویل کو ملا ہے جنھوں نے اورائن نامی ستاروں کے جھرمٹ کی تصویر بنائی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ peter ward

رات کے وقت کی جانے والی فوٹوگرافی ہر اس شخص کے لیے ہے جو کرنا چاہتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ stefan buda

آپ کو مہنگے آلات کی ضرورت پڑے گی اگر آپ کچھ خاص کرنا چاہتے ہیں۔ لیکن عام کیمرے سے آغاز کیا جا سکتا ہے۔