BBCi Home PageBBC World NewsBBC SportBBC World ServiceBBC WeatherBBC A-Z
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
South Asia News
BBCHindi.com
BBCPersian.com
BBCPashto.com
BBCArabic.com
BBCBengali.com
Learning English
 
 
  ہماری کھیلوں کی سائٹ
 
 
  احمد قریع، ہمہ جہت شخصیت
 
 
  کین کن میں کرنا کیا ہے؟
 
 
  شیرون کا دورۂ ہند
 
 
  ’غیرت‘ کے سات سو شکار
 
 
  قبائلی علاقوں کے بھوت اسکول
 
 
  مشرق وسطی میں طاقت کا نیا محور
 
 
  گیارہ ستمبر
آخری باتیں
 

جنگ عراق کا سچ جھوٹ
 

کراچی ساحل: زہریلی لہریں
 

موسیقی، فلم، ٹی وی ڈرامہ
 

دنیا ایک کلِک دور
 
 
 
:تازہ خبریں
 
میں غدار نہیں: مشرف
’القاعدہ اب بھی سرگرم ہے‘
اسامہ کی نئی وڈیو ٹیپ
’دراندازی بند کرائیں گے‘
سویڈش وزیر چل بسیں
جنس معلوم کرنےپرپابندی
بیمہ کمپنیاں القاعدہ پر مقدمہ کریں گی
یونان: پاکستانی ڈوب گئے
’نقشِہ راہ پر قائم ہیں‘
کراچی ساحل: پابندی برقرار
سامان میں انسان
بلوچستان: وزیر کے بھائی گرفتار
تعلقات مضبوط کرنےکی ضرورت: شیرون
لڑکا، امریکی فوجی ہلاک
بالی دھماکہ: موت کی سزا
گرینچ 13:17 - 23/12/2002
زندگی آن لائن ہے
زندگی دو سطحوں پر چلتی پھرتی ہے: حقیقی اور آن لائن
زندگی دو سطحوں پر چلتی پھرتی ہے: حقیقی اور آن لائن

تحریر: مرزا وحید، بی بی سی اردو ڈاٹ کام

انیس سو انہتر میں امریکی محکمہ دفاع کی ایک ٹیکنالوجی لیب میں ایک چھوٹا سا تجربہ ہو رہا تھا۔ سائنسدان ایک کمپیوٹر سے دوسرے کمپیوٹر تک پیغام رسانی کی کوشش کر رہے تھے۔ تجربہ کامیاب ہوتے ہوتے رہ گیا۔ انگریزی لفظ لاگ (log) کے پہلے تین حروف (lo) دوسرے کمپیوٹر تک پہنچتے پہنچتے نیٹ ورک نے جواب دے دیا۔ انٹرنیٹ کے بچپن کے دن تھے، گھٹنوں کے بل دو قدم چل کے رک گیا۔

سال رفتہ: انٹرنیٹ کی دنیا میں کیا ہوا؟

تیس برس بعد: دنیا میں ہر روز انسٹنٹ میسیجنگ کے ذریعے تقریباً سات ارب پیغامات بھیجے جاتے ہیں، اکتیس ارب ای میل پیغامات روزانہ ارسال کی جاتی ہیں اور ایک اندازے کے مطابق اس وقت انٹرنیٹ پر ایک کروڑ ویب سائٹ موجود ہیں، تاہم انٹرنیٹ سے وابستہ ادارے اس تعداد کے بارے میں مختلف دعوے کرتے ہیں۔ اور انٹرنیٹ استعمال کرنے والے افراد کی تعداد ستمبر دو ہزار میں ساٹھ کروڑ تھی۔

ہماری زندگی اب دو سطحوں پر چلتی پھرتی ہے: حقیقی اور آن لائن۔ انٹرنیٹ صحیح معنوں میں نوے کے عشرے کے ابتددائی برسوں میں وجود میں آیا۔ یورپی تحقیقی اداروں میں پرورش پانے کے بعد ورلڈ وائڈ ویب جونہی اوقیانوس کے اس طرف پھیلنے لگا تو ایک ایسا انقلاب آگیا جس کی مثال شاید صرف ’انڈسٹریل ریولیوشن‘ یعنی صنعتی انقلاب میں ہی ملتی ہے۔ امریکہ میں انٹرنیٹ کے بنیادی ڈھانچے پر پہلے ہی کام ہوچکا تھا، یورپ نے اس پر چلنے والا ایک ہموار نظام یعنی www کا تصور دیا اور بس پھر ایک عالم گیریت ۔

سن دو ہزار دو انٹرنیٹ کے لئے کیسا رہا؟ یا یوں کہئے کہ انٹرنیٹ پر سال دو ہزار دو میں کیا گزری؟

پہلی خبر، انٹرنیٹ کے شعور کے دن آیا چاہتے ہیں۔ ڈاٹ کام بوم کے باقی ماندہ آثار بھی غائب ہوگئے; سافٹ ویئر اور انٹرنیٹ پر مائکروسافٹ کی گرفت اور مضبوط ہوئی; تھرڈ جنریشن ڈیوائسز یعنی انٹرنیٹ کے جدید ترین مواصلاتی آلات اب بھی صحیح معنوں میں منظر عام پر نہیں آئے، انٹیل نے تین ہزار میگاہرٹز رفتار کے حامل پروسیسر بناکر سرفنگ کو تیز ترین بنانے کا دعویٰ کیا (اور کتنا تیز؟); گوگل ایسے ہوگیا جیسے بجلی۔۔ہرگھر میں، ہر ذہن میں، اور اب انگریزی ڈکشنری میں بھی (گوگلنگ، گوگلزم وغیرہ); القاعدہ نے اپنے آشیانے ویب پر بسا لئے، پاپ سٹار شکیرا بہت مقبول ہوئیں۔۔۔ اور انکا ہمنام کمپیوٹر وائرس بھی۔

اور ہاں، بی بی سی اردو ڈاٹ کام دو ہزار دو میں اردو کی ایک جامع نیوز ویب سائٹ کی صورت میں ابھر کر سامنے آئی۔

میں نے بھی بالآخر آن لائن شاپنگ شروع کردی، ایک آدھ کتاب آن لائن کتب خانوں سے خرید لیتا ہوں، ڈسکاؤنٹ ہو تو۔

دو ہزار دو میں انٹرنیٹ کے ’حجم‘ اور پھیلاؤ میں مزید اضافہ ہوا اور اس کے ساتھ ساتھ ہماری سماجی، معاشی اور سیاسی زندگی پر مرتب ہونے والے اثرات میں بھی۔

کیا آپ کو معلوم ہے کہ روزانہ چیٹ کرنے والے لوگوں کی صرف زبان ہی نہیں بلکہ بولنے کا ڈھنگ بھی متاثر ہوتا ہے؟ وہ نا مکمل، آدھے جملوں میں تیز تیز بولنے کے عادی ہو سکتے ہیں۔

اور آپ کو یہ بتا دوں کہ دفتر میں اگلی کرسی پر بیٹھے ساتھی کے ساتھ ای میل پر بات کرنا معمول سا ہوگیا ہے۔
 
 

 urdu@bbc.co.uk
 
 
 
 < عالمی خبریں 43 زبانوں میںواپس اوپر ^^ BBC Copyright